یہ نقش ہم جو سر لوحِ جاں بناتے ہیں  | افتخارعارف |

یہ نقش ہم جو سر لوحِ جاں بناتے ہیں  | افتخارعارف |
یہ نقش ہم جو سر لوحِ جاں بناتے ہیں  | افتخارعارف |

  

یہ نقش ہم جو سر لوحِ جاں بناتے ہیں 

کوئی بناتا ہے ہم خود کہاں بناتے ہیں 

یہ سر یہ تال یہ لے کچھ نہیں بجز توفیق 

تو پھر یہ کیا ہے کہ ہم ارمغاں بناتے ہیں 

سمندر اس کا ہوا اس کی آسماں اس کا 

وہ جس کے اذن سے ہم کشتیاں بناتے ہیں 

زمیں کی دھوپ زمانے کی دھوپ ذہن کی دھوپ 

ہم ایسی دھوپ میں بھی سائباں بناتے ہیں 

خود اپنی خاک سے کرتے ہیں موج نور کشید 

پھر اس سے ایک نئی کہکشاں بناتے ہیں 

کہانی جب نظر آتی ہے ختم ہوتی ہوئی 

وہیں سے ایک نئی داستاں بناتے ہیں 

کھلی فضا میں خوش آواز طائروں کے ہجوم 

مگر وہ لوگ جو تیر و سناں بناتے ہیں 

پلٹ کے آئے غریب الوطن پلٹنا تھا 

یہ دیکھنا ہے کہ اب گھر کہاں بناتے ہیں 

شاعر: افتخار عارف

(شعری مجموعہ:جہانِ معلوم، سالِ اشاعت، 2005)

Yeh     Naqsh    Jo    Ham    Sar-e- Laoh-e- Jahaan   Banaatay   Hen

Koi    Banaata    Hay    Ham    Khud    Kahan    Banaatay   Hen

Yeh   Sur, Yeh   Taal , Yeh   Lay  ,   Kuch    Nahen    Bajuz    Taofeeq

To   Phir     Yeh    Kaya    Hay    Keh    Ham    Armaghaan    Banaatay    Hen

Samundar    Uss    Ka   ,   Hawa   Uss    Ki   ,   Aasmaan    Uss   Ka

Wo    Jiss    K    Ezn    Say    Ham    Kashtiyaan   Banaatay   Hen

Zameen    Ki    Dhoop   ,   Zmanay    Ki    Dhoop   ,  Zehn    Ki   Dhoop

Ham    Aisi    Dhoop    Men    Bhi   Saybaan    Banaatay   Hen

Khud    Apni     Khaak    Say   Kartay   Hen    Maoj -e- Noor   Kasheed

Phir    Uss    Say   Aik   Nai    Kehkashaan    Banaatay   Hen

Kahaani    Jab    Nazar   Aati    Hay    Khatm    Hoti    Hui

Waheen     Say   Aik    Nai    Daastaan    Banaatay    Hen

Khuli    Faza    Men    Khush    Awaaz    Taairon    K   Hujoom

Magar    Wo    Log    Jo     Teer -o- Sinaan    Banaatay   Hen

"Palat    K    Aaey     Ghareebul  Watan     Palattna    Tha"

Yeh    Dekhna    Hay    Keh    Ab    Ghar    Kahaan    Banaatay   Hen

Poet: Iftikhar    Arif

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -