اب کے جشنِ عید بھی مجھ کو قرینے سے لگا| افتخارنسیم |

اب کے جشنِ عید بھی مجھ کو قرینے سے لگا| افتخارنسیم |
اب کے جشنِ عید بھی مجھ کو قرینے سے لگا| افتخارنسیم |

  

اب کے جشنِ عید بھی مجھ کو قرینے سے لگا

جس گھڑی وہ شخص آکر میرے سینے سے لگا

سالِ نو ، تیری جدائی اور غمِ قتلِ حسینؑ

روگ یہ کیسا محرم کے مہینے سے لگا

پھول سے چہرے سجا لے یاد کے گلدان میں

گھر کی دیوار پہ تصویر قرینے سے لگا

ہجرتوں کا دور ہم پر ختم ہوتا ہی نہیں

اک مدینہ اور بھی آگے مدینے سے لگا

جیسے رکھ دی ہو کسی نے تپتے لوہے پر زباں

زندگی کا زہر کچھ ایسے ہی پینے سے لگا

جنگ کا اعلان بھی کرتا گیا میرا عدو

وہ گلے سے بھی لگا تو کیسے کینے سے لگا

میں نے کیا گرداب میں اس کوپکارا تھا نسیم

اک کنارہ آکے خود میرے سفینے سے لگا

شاعر: افتخار نسیم

(رسالہ"سب رس"افتخار نسیم نمبرسے انتخاب، شمارہ نمبر 1992،11)

Ab    K    Jashn-e- Eid    Bhi    Mujh   Ko   Qareenay   Say   Laga

Jiss   Gharri   Wo   Shakhs   Aa   Kar   Meray   Seenay   Say   Laga

Saal -e-  Nao , Teri    Judaai   Aor   Gham -e- Qatl-e- HUSSAIN

Rog    Yeh    Kaisa   Muharram   K   Maheenay   Say   Laga

Phool   Say   Chehray   Sajaa    Lay   Yaad   K   Guldaan   Men

Ghar    Ki    Dewaar    Par    Tasveer   Qareenay  Say   Laga

Hijraton   Ka     Daor   Ham   Par   Khatm   Hota    Hi   Nahen

Ik    Madeena   Aor   Bhi    Aagay    Madeenay   Say   Laga

Jaisay    Rakh   Di    Ho   Kisi   Nay   Taptay    Lohay   Par   Zubaan

Zindagi    Ka    Zehr   Kuch   Aisay   Hi   Peenay   Say  Laga

Jang    Ka    Ailaan    Bhi   Karta    Gaya    Mera   Udu

Wo     Galay   Say   Bhi   Laga   To   Kaisay   Keenay   Say   Laga

Main    Kaya    Gardaab    Men   Uss    Ko   Puakaara   Tha   NASEEM

Ik   Kinaara    Aa   K   Khud   Meray   Safeenay   Say   Laga

Poet:Iftikhar   Naseem

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -