عذاب جان پہ اب اور سہہ نہیں سکتا | افتخارنسیم |

عذاب جان پہ اب اور سہہ نہیں سکتا | افتخارنسیم |
عذاب جان پہ اب اور سہہ نہیں سکتا | افتخارنسیم |

  

عذاب جان پہ اب اور سہہ نہیں سکتا

میں جس طرح کا ہوں جیسا ہوں کہہ نہیں سکتا

کسی کا نام لکھوں شعر پر کسی پہ کہوں

یہ جھوٹ بول کے میںاور رہ نہیں سکتا

ہزار زلزلے آئیں سودِ قریۂ جاں

یہ شہرِیاد ہے ایسے تو ڈھہ نہیں سکتا

ندی میں پھینک دیا اس کو باندھ کر پتھر

یہ پھول اب کبھی لہروں میں بہہ نہیں سکتا

جہازران مرے میں تو اک جزیرہ ہوں

یہیں رہوں گا ترے ساتھ بہہ نہیں سکتا

نسیم لے گئے آنکھوں پہ باندھ کر پٹی

وہ لوگ کون تھے قیدی بھی کہہ نہیں سکتا

شاعر: افتخار نسیم

(رسالہ"سب رس"افتخار نسیم نمبرسے انتخاب، شمارہ نمبر 1992،11)

Azaab    Jaan    Pe    Ab    Aor   Seh    Nahen   Sakta

Mian   Jiss   Tarah   Ka    Hun   Jaisa   Hun   Keh    Nahen   Sakta

Kisi   Ka  Naam   Likhun   Sher   Par   Kisi   Pe    Likhun

Yeh   Jhoot   Bol   Ke   Main   Aor   Reh   Nahen   Sakta

Hazaar    Zalzalay    Aaen    Sawaad -e- Qarya -e- Dil

Yeh   Shehr-e-Yaad   Hay   Aisay   To   Dheh   Nahen   Sakta

Nadi     Men   Phaik    Diya   Uss   Ko   Baandh   Kar   Pathar

Yeh   Pholl   Ab   Kabhi    Lehron   Men   Beh    Nahen   Sakta

Jahaaz   Raan    Miray    Main   To   Ik    Jazeera   Hun

Yahen    Rahun    Ga   Tiray    Saath    Beh   Nahen   Sakta

NASEEM    Lay    Gaey    Aankhon    Pe    Baandh    Kar   Patti

Wo    Log    Kon    Thay   Qaidi    Bhi    Keh    Nahen   Sakta

Poet: Iftikhar Naseem

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -