جگنو نام ہے | افتخارنسیم |

جگنو نام ہے | افتخارنسیم |
جگنو نام ہے | افتخارنسیم |

  

جگنو نام ہے

جگنو!

یہ کبھی نہ سوچنا

کہ جب تم ان دیکھے سفر پہ روانہ ہوئے تھے

میں تمہیں خدا حافظ کہنے نہیں آیا تھا

میں نے تمہیں ہسپتال میں کب چھوڑا تھا

میں تو تمہیں ویسے ہی اپنے سینے سے 

لگائے دفتر آ گیا تھا

دنیا سے جنگ لڑنے کے لیے

جس میں تم ہمیشہ میری ڈھال بنے ہو

جب بھی میں اپنے دشمنوں سے شکست خوردہ ہو کر

اپنے زخموں کی تکلیف پہ کراہتا تھا

تم اسی وقت میرے پاس آ     کر

اپنی نرن اور گرم کھال سے

ان پہ مرہم کا پھاہا رکھ دیتے تھے

تم اپنی معصوم آنکھوں سے میری طرف دیکھتے تھے

تو مجھے اپنی خفیہ اورخضہ توانائیوں پر

یقین آنے لگتا تھا

تمہاری شرارتیں مجھے

تمہارے ساتھ کھیلنے پہ مجبور کر دیتیں

اور میں خود ترحمی کے جال سے باہر آتا

جگنو!

تم میری زندگی میں جب سے آئے ہو

مجھے انسانوں پر دوبارہ یقین

 آنے لگا ہے

مجھے امن کے خواب پھر سے دکھائی سینے لگے ہیں

مجھے علم تھا کہ تم ایک فرشتہ ہو

تم ایک دن واپس چلے جاؤ  گے

لیکن مجھے یہ علم نہیں تھا

کہ وہ دن

اتنی جلدی آ جائے گا

شاعر: افتخار نسیم

(رسالہ"سب رس"افتخار نسیم نمبرسے انتخاب، شمارہ نمبر 1992،11)

Nugnu     K    Naam

 

Jugnu

Yeh    Kabhi    Na   Sochna

Keh    Jab    Tum    An   Dekhay    Safar   Pe   Rawaana   Huay   Thay

Main   Tumhen   Khuda   Hafiz   Kehnay   Nahen   Aaya  Tha

Main   Nay   Tumhen   Haspataal   Men   Kab   Chorra   Tha

Main   To   Tumhen   Wesay   Hi   Apnay   Seenay   Say

 Lagaaey    Daftar   Aa    Gaya  Tha

Dunya   Say   Jang   Larrnay   K   Liay

Jiss   Men   Tum   Hamesha  Meri   Dhaal   Banay   Ho

Jab   Bhi   Main   Apnay   Dushman   Say   Shikast   Khorda   Ho  Kar

Apnay   Zakhmon   Ki   Takleef   Say   Karaahta   Tha

Tum    Usi   Waqt   Meray   Paas   Aa   Kar

Apni   Narm     Aor    Garm   Khaal   Say 

Un   Par   Marham   Ka   Phaaha    Rakh   Detay   Thay

Tum    Apni   Masoom    Aankhon   Say   Meri   Taraff    Dekhtay   Thay

To    Mujhay   Apni    Khufiya   Aor    Khassa    Tawanaaion   Par

Yaqeen    Aanay   Lagta 

Tumhaari   Sharaarten   Mujhay

Tumhaaray    Saath    Khailnay    Par   Majboor    Kar    Deten

Aor    Main    Khud    Tarahmi    K    Jaal    Say   Baahar    Nikal   Aata

Jugnu

Tum   Meri    Zindagi    Men   Jab   Say   Aaey   Ho

Mujhay    Inssano    Par   Dobaara   Yaqeen

Aanau   Laga   Hay

Mujhay   Amn   K    Khaab    Phir    Say   Dikhaai   Denay   Lagay   Hen

Mujhay    Elm    Tha    Keh   Tum   Aik   Farishta   Ho

Tum   Aik   Din    Waapas   Chalay   Jaao    Gay

Lekin     Mujhay    Yeh     Elm    Nahen   Tha

Keh    Wo   Din

Itni    Jaldi    Aa    Jaaey   Ga

 

Poet: Iftihar Naseem

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -