ایک مختلف کہانی | افتخارنسیم |

ایک مختلف کہانی | افتخارنسیم |
ایک مختلف کہانی | افتخارنسیم |

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

ایک مختلف کہانی


جولی کتنی بھولی تھی
جب اس نے اظہار کیا تھا
اپنے اندر کی خواہش کا
اس چھوٹے سے شہر کے
سارے لوگوں نے اس پر تھوکا تھا
چرچ کے فادر نے
اس کو
انجیل مقدس کے ورقوں سے پڑھ کے سنایا
عورت نسلِ انسانی کی خاطر دنیا میں آئی ہے
اس کے اندر کی خواہش تو ایک گناہ ہے
یہ تو کافی سال پرانا قصہ ہے
اب جولی تو بہت بڑے اک شہر کے اندر
عالی شان مکان میں رہتی ہے
اپنی محبوبہ کے ساتھ
کبھی کبھار اسے جب 
اس چھوٹے سے قصبے کی یاد ستاتی ہے
تو کسی بھی قبرستان میں جا کر
انجان قبروں پہ پھول چڑھا کر
گھر کو واپس آ جاتی ہے


شاعر: افتخار نسیم

(رسالہ"سب رس"افتخار نسیم نمبرسے انتخاب، شمارہ نمبر 1992،11)

Aik   Mutaliff    Kahaani

Joli    Kitni   Bholi   Thi

Jab    Uss    Nay    Izhaar    Kaya  Tha

Apnay    Andar    Ki   Khaahish   Ka

Uss   Chhotay   Say   Shehr   K 

Saaray   Logon   Nay   Uss    Par   Thooka   Tha

Charch    K    father   Nay

Uss    Ko

Anjeel    Muqadass    K    Warqon    Say   Parrh    K    Sunaaya    Tha

Aorat     Nasl-e- Aadam    K    Liaay    Dunya    Men    Aai   Hay

Uss   K   Andar    Ki    Khaahish   To    Aik   Gunah   Hay

Yeh    To    Kaafi    Saal    Puraana   Qissa    Hay

Ab    Joli    To    Bahut   Barray     Ik    Shehr    K   Andar 

Aali    Shaan    Makaan    Men    Rehti   Hay

Apni     Mehbooba    K    Saath

Kabhi    Kabhaar    Usay   Jab

Uss    Chhotay    Say    Qissaay    Ki    Yaad    Sataati   Hay

To    Kisi    Bhi    Qabristaan   Men    Ja    Kar

Anjaani   Qabron    Pe    Phool    Chrrha   Kar

Ghar    Ko     Waapas    Aa    Jaati    Hay

Poet: Iftikhar    Naseem