ہر تبسم پر قیاسِ دوستی کرتے رہے | اقبال عظیم |

ہر تبسم پر قیاسِ دوستی کرتے رہے | اقبال عظیم |
ہر تبسم پر قیاسِ دوستی کرتے رہے | اقبال عظیم |

  

اک خطا ہم از رہِ سادہ دِلی کرتے رہے

ہر تبسم پر قیاسِ دوستی کرتے رہے

ایسے لوگوں سےبھی ہم مِلتے رہے دل کھول کر

جو وفا کے نام پر سوداگری کرتے رہے

خود اندھیروں میں بسر کرتے رہے ہم زندگی

دوسروں کے گھرمیں لیکن روشنی کرتے رہے

سجدہ ریزی پائے ساقی پر کبھی ہم نے نہ کی

اپنے اشکوں سے علاجِ تشنگی کرتے رہے

اپنے ہاتھوں آرزوؤں کا گلا گھونٹا کئے

زندہ رہنے کے لئے ہم خودکُشی کرتے رہے

ہر طرف جلتے رہے،بُجھتے رہے جُھوٹے چراغ

اور ہم سامانِ جشنِ تِیرَگی کرتے رہے

حالِ دل کہہ دیں کسی سے، بارہا سوچا مگر

اِس اِرادے کو ہمیشہ مُلتوی کرتے رہے

خود کودیتے بھی رہے ترکِ تعلّق کا فریب!

اور درپردہ کسی کو یاد بھی کرتے رہے

اس طرح اقبال! گزری ہے ہماری زندگی

زہرِغم پیتے رہے، اور شاعری کرتے رہے

شاعر: اقبال عظیم

(شعری مجموعہ: مضراب و رباب)

Ik   Khata   Az   Rah-e- Saada  Dili   Kartay   Rahay

Har   Tabaasum   Par   Qayaas -e- Dosti    Kartay   Rahay

Aisay   Logon   Say   Bhi    Ham   Miltay   Rahay    Dil   Khol   Kar

Jo   Wafa   K   Naam   Par    Sodagari   Kartay    Rahay

Khud   Andhairon    Men    Basar   Kartay    Rahay   Ham   Zindagi

Doosron   K   Ghar   Men   Lekin    Roshni    Kartay   Rahay

Sajda    Raizi    Paa-e- Saaqi    Par    Kabhi   Ham   Nay   Na   Ki

Apnay    Ashkon    Say    Elaaj-e- Tashnagi    Kartay    Rahay

Apnay    Haaton    Aarzuon    Ka    Gala    Ghonta    Kiay

Zinda    Rehnay    K    Liay   Ham   Khudkashi    Kartay    Rahay

Hare   Taraf   Jaltay    Rahay    Bujhtay    Rahay   Jhootay    Charaagh

Aor    Ham     Samaan -e- Teeragi     Kartay    Rahay

Haal -e- Dil    Keh    Den    Gay    Kisi    Say ,   Baarha    Socha    Magar

Iss    Iraaday    Ko    Hamesha    Multavi    Kartay    Rahay

Iss    Tarah     IQBAL    Guzri    Hay    Hamaari   Zindagi

Zeh-e- Gham     Peetay    Rahay    Aor    Shaairi    Kartay    Rahay

Poet: Iqbal Azeem

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -