میچ فکسنگ میں ملوث سابق کھلاڑیوں کے ساتھ کام نہیں کرسکتا

میچ فکسنگ میں ملوث سابق کھلاڑیوں کے ساتھ کام نہیں کرسکتا

 کراچی(این این آئی) پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان راشد لطیف نے ایک بار پھر کہا ہے کہ وہ میچ فکسنگ میں ملوث سابق کھلاڑیوں کے ساتھ کام نہیں کرسکتے ۔راشد لطیف نے 1994 اور 1995 میں ٹیم میں میچ فکسنگ کے حوالے سے انکشافات کیے تھے اور گزشتہ ہفتے عہدے کا چارج سنبھالنے سے انکار کردیا تھا۔غیر ملکی میڈیا کو دیئے گئے انٹرویومیں راشد لطیف نے کہاکہ میرے کچھ اصول ہیں جو مجھے اجازت نہیں دیتے کہ جن کھلاڑیوں کو ماضی میں میچ فکسنگ کے الزامات پر سزا دی گئی ان کے ساتھ کام کروں۔راشدلطیف نے کسی کا نام نہیں لیا تاہم بظاہر ان کا اشارہ سابق کھلاڑی مشتاق احمد کی طرف تھا جنہیں اطلاعات کے مطابق نیشنل کرکٹ اکیڈمی میں اہم عہدہ دئیے جانے کا امکان ہے۔مشتاق ان چھ کھلاڑیوں میں شامل ہیں جنہیں مئی 2000 میں ایک جوڈیشل کمیشن نے راشد کی الزامات کے بعد سزا سنائی تھی۔ملک قیوم کمیشن نے تجویز دی تھی کہ مشتاق کو ٹیم یا بورڈ میں کوئی عہدہ نہ دیا جائے۔

 تاہم 2010 میں انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے مشورے کے برخلاف انگلینڈ نے مشتاق کو اسپن باو¿لنگ کوچ مقرر کیا تھا۔راشد لطیف نے کہاکہ کرپشن سے متعلق پی سی بی کو سخت موقف اختیار کرنا چاہیئے اور ایسے کسی کھلاڑی جسے ماضی میں سزا سنائی گئی ہو یا اس پر میچ فکسنگ کا شبہ ہو اسے پی سی بی میں کوئی عہدہ نہیں ملنا چاہیئے۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی