مسلہ کشمیر حل کے لیے پاکستان بھارت دوستی ضروری ہے ،ڈاکٹر فاروق

مسلہ کشمیر حل کے لیے پاکستان بھارت دوستی ضروری ہے ،ڈاکٹر فاروق

                                                                           سری نگر (کے پی آئی) مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے ہندو پاک دوستی کو ضروری قرار دیتے ہوئے نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ جب تک دونوں پڑوسیوں کے درمیان بہتر تال میل اور دوستی پروان نہیں چڑھے گی تب تک مسئلہ کشمیر بھی لٹکتا رہے گا۔ ان باتوں کا اظہارڈاکٹر فاروق عبداللہ نے راولپورہ خانصاحب میں ایک عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقعے پر پارٹی کے سینئر لیڈر اور کابینہ وزیر عبدالرحیم راتھراورضلع صدر بڈگام ایم ایل سی علی محمد ڈار بھی موجود تھی۔ ڈاکٹر فاروق نے اپنے خطاب میں کہا کہ نیشنل کانفرنس ہمیشہ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان دوستی کی خواہاں رہی ہے تاکہ مسئلہ کشمیر کا پ±رامن حل ممکن ہوپائی۔ انہوں نے کہا کہ شیر کشمیر شیخ محمد عبداللہ نے دہائیوں قبل راولپنڈی روڑ کھولنے کی جدوجہد شروع کی جس کا مقصد بچھڑے کنبوں کو ملانے کے ساتھ ساتھ ہند و پاک دوستی کو مضبوط کرنا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ سابق پاکستان صدر جنرل پرویز مشرف اور سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی نے اعتمادی سازی کو بڑھانے کیلئے سرینگر مظفرآباد شاہراہ پر آمدرفت پر اتفاق کرلیا اور اس روڑ کو کھولنے کا معاہدہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ مفتی سعید نے اسے بھی اپنے خاطے میں ڈال دیا اور گذشتہ1برسوں سے بس یہی رٹ لگائے رکھی ہی، جہاں بھی جاتے ہیں بس یہی کہتے ہیں کہ یہ روڑ میں نے کھولا۔ انہوں نے کہاکہ نیشنل کانفرنس مسئلہ کشمیر کا ایک سیاسی مسئلہ مانتی آئی ہے اور اس کے سیاسی حل کیلئے جدوجہد اور وکالت کرتی آئی ہی۔ ان کاکہنا تھا کہ عمر عبداللہ نے وزیر عظم ہند اور یو پی اے چیئرپرسن سونیا گاندھی کو اسلام آباد کے عوامی اجتماع میں دوٹوک الفاظ میں کہا کہ مسئلہ کشمیر سڑکیں ، پل، بجلی پروجیکٹ اور دیگر اقتصادی پیکیجوں سے حل نہیں ہوگا بلکہ یہ سیاسی مسئلہ ہے اور اسے سیاسی طور پر ہی حل کرنے کی ضرورت ہی۔ ڈاکٹر فاروق نے کہا کہ افسپا کی منسوخی پر زور دیتے ہوئے کہا کہ افسپا کی منسوخی وقت کی ضرورت ہے اور پ±رامن علاقوں سے ابھی سے اس قانون کی منسوخی کی شروعات ہونی چاہئی۔

 بی جے پی پر وار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ وہی جماعت ہے جس نے ریاستی اسمبلی سے پاس شدہ اٹانومی قرارداد کو سبوتاڑ کرنے کیلئے پی ڈی پی کی بنیاد ڈالی اور آج کل یہی لوگ مسئلہ کشمیر حل کرنے کی بات کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نریندر مودی جیسا فرقہ پرست آج تک ملک میں نہیں دیکھا گیا اور آج یہ میٹھی بولیاں بول کر لوگوں کو بھلانے اور پھسلانے کی کوششیں کررہا ہی۔ ان کا کہنا تھا کہ ریاست جموں و کشمیر کی خصوصی پوزیشن اور دفعہ70کو ختم کرنا بی جے پی کا روز اول سے ایجنڈا رہا ہے اور آج بھی یہ جماعت اسی ایجنڈے پر قائم ہی۔ اور جو لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ بی جے پی مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے پیشرفت کریگی وہ احمقوں کی دنیا میں رہ رہے ہیں۔

مزید : عالمی منظر