اے سی سی ڈویلپمنٹ کمیٹی اجلاس،

اے سی سی ڈویلپمنٹ کمیٹی اجلاس،
اے سی سی ڈویلپمنٹ کمیٹی اجلاس،

  

پاکستان میں انٹرنیشنل کھیلوں کیلئے مفید اے سی سی ڈویلپمنٹ کمیٹی کے اجلاس کا انعقاد پاکستان میں ہونا پاکستان کرکٹ کے لئے بہت فائدہ مند ہے، اس کی وجہ سے پاکستان میں جہاں پر کرکٹ کو مزید فروغ ملے گا اس کے ساتھ ساتھ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کا راستہ بھی صاف ہوگا ۔پاکستان کرکٹ بورڈ نے اس حوالے سے اظہار اطمینان کیا ہے۔ چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی جو اس وقت پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی اور پاک بھارت کرکٹ سیریز کے لئے بھرپور اقدامات کررہے ہیںان کی محنت رنگ لاتی نظر آرہی ہے اور امید ہے کہ اگر و ہ اسی جو ش و جذبے سے اپنا کام کرتے رہے تو وہ وقت دور نہیں جب پاکستان میں غیر ملکی کرکٹ ٹیموں کی آمد بھی شروع ہوجائے گی اور بھارتی کرکٹ بھی پاکستان کا دور ہ کرے گی، بھارتی ٹیم کو پاکستان آئے ہو ئے چار سال سے زائدکا عرصہ ہوگیا ہے، اے سی سی اجلاس کا مقصدایشیا میںجاری کرکٹ ڈویلپمنٹ کا جائزہ لینا ہے اور ایشیائی ممالک میں کرکٹ کو فروغ دینا ہے، اس وقت ایشیا میں پاکستان واحد ملک ہے ،جہاں پر امن و امان کی صورتحال کے پیش نظر غیر ملکی کرکٹ ٹیموں کی آمد کا سلسلہ بند ہے اوراس وجہ سے پاکستان کو ایک طرف مالی طور پر جو نقصان ہورہا ہے وہ تو ہے ہی، لیکن اس کے ساتھ ساتھ یہ بھی سچ ہے کہ شائقین کرکٹ بہت مایوس ہیں اور وہ اس وقت کا شدت سے انتظار کررہے ہیں جب پاکستانی کرکٹ سٹیڈیمز میں کرکٹ شروع ہوگی اور ان کو اپنے ملک میں اپنی ٹیم کو کھیلتے دیکھنا نصیب ہوگا اور اس حوالے سے اس اجلاس کی اہمیت بہت زیادہ ہے ۔نجم سیٹھی اس وقت جس طرح کام کررہے ہیں ان کی اس کاوش کی تعریف کی جانی چاہئے۔ اے سی سی پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کےلئے بھرپور اقدامات کررہی ہے اور اس بات کا اعلان اور اعادہ اس کے عہدے داروں نے بھی کیا ہے اور انہوں نے اس اجلاس میںاس عزم کا بھی اظہار کیا کہ وہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی کے خیر خواہ ہیں اور اس کے لئے ہر ممکن اقدامات کررہے ہیں، بہرحال دیکھنے میں تو یہی نظر آرہا ہے کہ جو کیا جارہا ہے وہ پاکستان کے حق میں ہے اور اس کا پاکستان کو ضرو رفائدہ ملے گا لیکن مستقبل میں اس بات کا عملی ثبوت نظر آئے گا کہ اس کا نتیجہ کیا نکلتا ہے۔ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی وقت کی ضرورت ہے اور یہ بہترین وقت ہے کہ اس کےلئے کوئی حل تلاش کیا جائے اور تمام کرکٹ بورڈ ز کو اس حوالے سے اپنا بھرپور کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے ،اب جب پی سی بی نے بگ تھری کی حمائت بھی کردی ہے تو اب اس حوالے سے مزید دیر نہیں ہونی چاہئے اور ہمارے پاس بھی اس حوالے سے یہ بہترین وقت ہے کہ ہم بگ تھری کی حمایت کے عوض آئی سی سی سے اپنی بات منوالیں پاکستان میں کھیلی جانے والی سیریز کا انعقاد پاکستان میں ہی ہونا ضروری ہے تاکہ یہاں پر کرکٹ کی رونقیں بحال ہو اور یہاں پر بھی بڑے بڑے ایونٹس کا انعقاد کیا جاسکے۔ پاکستان کرکٹ بورڈ کے لئے اس حوالے سے اقدامات کرنا جہاں پر بہت ضروری ہے اس کے ساتھ ساتھ اس کے لئے اس موقع پر یہ ایک بہت بڑاچیلنج بھی ہے بہرحال امید ہے کہ وہ دن بھی آئے گا جب یہاں پر باقاعدہ غیر ملکی ٹیموں کی آمد کا سلسلہ شروع ہوجائے گا۔ اگر یہ کارنامہ چیئرمین نجم سیٹھی نے انجام دیا تو حقیقی معنوں میں وہ کرکٹ سے محبت کا ثبوت دیں گے اور ان کا نام کرکٹ کی تاریخ میں ہمیشہ سنہری حروفوں میں لکھا جائے گا۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی