افریقی ممالک ترسیلات پر عائد ”سپر ٹیکس“ کی وجہ سے 1.8 ارب ڈالر سے محروم

افریقی ممالک ترسیلات پر عائد ”سپر ٹیکس“ کی وجہ سے 1.8 ارب ڈالر سے محروم

لندن (اے پی پی) افریقی ممالک بیرون ملک سے ترسیلات پر عائد ”سپر ٹیکس“ کی وجہ سے ہر سال 1.8 ارب ڈالر (1.3ارب یورو) سے ہاتھ دھو رہے ہیں ۔ برطانیہ کے نمایاں تھنک ٹینک اوورز سیز ڈیویلپمنٹ انسٹی ٹیوٹ ( او ڈی آئی) کے افریقی ممالک میں مالیات کی انٹرنیشنل ٹرانسفر پر دنیا میں سب سے زیادہ ٹیکسز موجود ہیں جو بیرون ممالک سے متعلقہ افریقہ ملک میں محصولات کی کھل کر ترسیل کی راہ میں رکاوٹ ہیں ۔

ور اس کی وجہ سے افریقہ سالانہ 1.8 ارب ڈالر کا نقصان اٹھا رہا ہے۔ ادارے کے مطابق اگر افریقی ممالک کی حکومتیں بیرون ممالک سے ترسیلات زر پر ٹیکس کی شرح کم کردیں تو ان کے 14ملین بچے سکولوں میں مفت تعلیم حاصل کرسکتے ہیں اس وقت افریقی ممالک میں سکول جانے کی عمر کے کل بچوں میں سے نصف سکولوں سے باہر ہیں ۔ افریقی ممالک میں محصولات پر عالمی اوسط کے مقابلے میں تقریباً دوگنا فیس یعنی 200 ڈالر کی ٹرانسفر پر 12فیصد ٹیکس لیا جاتا ہے۔

(hma/jav/hab 1121:14)

مزید : کامرس