ترقی پسند معاشرے کی تشکیل کیلئے مذہبی جنونیت ختم کرنا ہوگی:فاروق طارق

ترقی پسند معاشرے کی تشکیل کیلئے مذہبی جنونیت ختم کرنا ہوگی:فاروق طارق
ترقی پسند معاشرے کی تشکیل کیلئے مذہبی جنونیت ختم کرنا ہوگی:فاروق طارق

  

لاہور( سپیشل رپورٹر) عوامی ورکرز پارٹی اور افغانستان کی سولیڈیریٹی پارٹی ( افغانستان) کا 3روزہ مشترکہ اجلاس گزشتہ روز لاہور میں اختتام پذیر ہو ا جس کے بعد عوامی ورکرز پارٹی پاکستان کے سیکرٹری جنرل فاروق طارق‘ سولیڈیریٹی پارٹی (افغانستان) کے سربراہ حفیظ راسخ اور صالح غفار نے لاہور پریس کلب میں مشترکہ پریس کانفرنس میں سہ روزہ اجلاس کا مشترکہ اعلامیہ جاری کرتے ہوئے کہاکہ دونوں جماعتیں اس نتیجے پر پہنچی ہیں کہ دونوں ممالک کی عورتوں کو ایک جیسے چیلنجز ہیں جن میں بنیادی حقوق بشمول صحت ، آزادی اظہار ،تعلیم اپنی مرضی کی شادی اور حقوق وراثت جیسے مسائل شامل ہیں اور دونوں ملکوں میں بڑھتی ہوئی مذہبی جنونیت بھی انتہائی خطر ناک ہے جس پر دونوں جماعتیں مل کر جدوجہد کریں گی ۔ فاروق طارق نے کہاکہ مذہبی جنونیت ایک عالمی مسئلہ بنتا جا رہا ہے مذہبی جنونیت پاکستان ،افغانستان ،بھارت ،سری لنکا ، نیپال ، بنگلہ دیش میں بھی مختلف اشکال میں پھیل رہی ہے جس پر سب کو متحد ہونے کی ضرورت ہے ۔انہوں نے کہاکہ دین اور مذہب کو حکومت اوراداروں سے الگ کرنا چاہیے تاکہ ترقی پسند معاشرہ تشکیل دیا جا سکے ۔حفیظ راسخ نے کہاکہ خواتین افغانستان میں پاکستان کی نسبت زیادہ پسماندہ ہیں اور خواتین وہاں مذہبی جنونیت ، جنگی جنون اور قبائلی سامراج کا شکار ہو رہی ہیں اس پر ہم نے آواز اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ افغانستان میں نیٹو اور امریکہ کی فوج کے انخلاء کے بعد مذہبی جنونیوں اور بنیاد پرستوں کے خطرات کا خدشہ ہے کیونکہ یہ جنونی گروپس اپنی ہر ممکن کوشش کریں گے کہ حکومت کو یرغمال بنا کر علاقے پر قابض ہوں اور خواتین کے حقوق کو بالخصوص نشانہ بنائیں اس لئے مذہبی جنونیت کا مقابلہ کرنے کیلئے جتنی جدوجہد کی آج ضرورت ہے ماضی میں کبھی نہیں رہی ۔

مزید : لاہور