کسی کو سزائے موت نہیں ہونی چاہیے 62 لوگوں کو سزا دینے والا جلاد

کسی کو سزائے موت نہیں ہونی چاہیے 62 لوگوں کو سزا دینے والا جلاد

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں ایک جلاد، جس نے تمام عمر سزAائے موت پانے والے قیدیوں کو موت سے ہمکنار کیا، اب سزائے موت کے خلاف مہم چلا رہا ہے اور اس کے خاتمے کا مطالبہ کر رہا ہے۔ ’دی مرر‘ کی رپورٹ کے مطابق 62سالہ جیری گیونز 1982ء سے 1999ء تک ’چیف جلاد‘ کے عہدے پر رہا اور اس دوران اس نے 62افراد کو سزائے موت دی۔ جیری نے ان میں سے بعض کوالیکٹرک چیئر کے ذریعے کرنٹ لگا کرابدی نیند سلایا جبکہ اکثر کو زہریلا انجکشن دے کر۔ ابتدا میں وہ سزائے موت کا حامی تھا۔ اس کا کہنا ہے کہ ’’میں نے ایک پارٹی میں ایک خاتون کو قتل ہوتے ہوئے دیکھا تھا، ایک شخص نے اسے گولی ماری جس سے وہ موقع پر ہلاک ہو گئی۔ اس واقعے کا مجھ پر شدید اثر ہوا اور میں قاتلوں کو سزائے موت دینے کی حمایت کرنے لگا۔ لیکن اب اتنے زیادہ لوگوں کو مارنے کے بعد مجھے یہ احساس تکلیف میں مبتلا کیے رکھتا ہے کہ کہیں میں نے کسی بے گناہ کو ہی نہ مارڈالا ہو۔ چنانچہ اب میں اس سزا کے خلاف ہوں۔ میں نے دیکھا ہے کہ الیکٹرک چیئر کے ذریعے سزائے موت دینے سے سزا پانے والے شخص کی لاش کو آگ لگ جاتی ہے جبکہ زہریلا انجیکشن دینے سے بھی وہ انتہائی اذیت ناک موت مرتے ہیں۔‘‘رپورٹ کے مطابق امریکی ریاست ارکنساس میں ایک عدالت نے بھی سزائے موت کے قیدیوں کی سزا پر عملدرآمد روکنے کا حکم دے دیا ہے۔ ان 7قیدیوں کو اگلے 10دن میں زہریلا انجکشن لگا کر موت کے گھاٹ اتارا جانا تھا۔ حکام نے یہ فیصلہ جلد بازی میں اس لیے کیا کہ ان کے پاس موجود زہریلی ادویات کی مدت دو ہفتے میں ختم ہونے والی ہے چنانچہ وہ چاہتے ہیں دواؤں کے زائدالمعیاد ہونے سے پہلے اسے استعمال کر لیا جائے اور ان قیدیوں کی سزائے موت پر عملدرآمد کر دیا جائے لیکن یہ دوائیاں بنانے والی دو کمپنیوں نے عدالت میں مقدمہ درج کرا دیا کہ حکام نے ان کی ادویات مناسب طریقے سے حاصل نہیں کیں لہٰذا انہیں ہماری ادویات استعمال کرنے سے روکا جائے۔جیری گیونز کا کہنا ہے کہ ’’میں نے اس امید میں آواز اٹھائی ہے کہ اب بھی ان سات افراد کی زندگیاں بچائی جا سکتی ہیں۔جس تیزی کے ساتھ ان لوگوں کو موت دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے یہ غیرقانونی ہے اور اس سے ان قیدیوں کے حقوق سلب ہوں گے۔ادویات کی مدت ختم ہونے کا جواز ان قیدیوں کو جلد موت کے گھاٹ اتارنے بے معنی اور انتہائی گھٹیا ہے۔ایسا قطعاً نہیں ہونا چاہیے۔ حکام کو قانون کے مطابق عمل کرنا چاہیے۔ ان قیدیوں کی سزا پر عملدرآمد کا جو حکم عدالتوں سے آیا ہے اس پر عمل ہونا چاہیے۔ اس کے لیے بعد میں بھی ادویات خریدی جا سکتی ہیں۔
جلاد

مزید :

علاقائی -