سانحہ مردان ‘ غیر دانشمندانہ پالیسیوں کا نتیجہ

سانحہ مردان ‘ غیر دانشمندانہ پالیسیوں کا نتیجہ

ملتان (سٹی رپورٹر)جمعیت علماء پاکستان کے صدر ڈاکٹر صاحبزادہ(بقیہ نمبر35صفحہ12پر )

ابوالخیر محمد زبیر نے کہا ہے کہ مثال کا قتل حکمرانوں کیلئے لمحہ فکریہ ہے انہوں نے کہا کہ تمام مسلمانوں کا اس پرمکمل اتفاق ہے کہ کسی شخص کو قانون ہاتھ میں لیکر خود فیصلہ سنانے اور خود سزادینے کا اختیار نہیں لیکن جب قانونی طور پرملزم کو سزا دینے کے تمام دروازے بند کردئیے جائیں تو پھر اس قسم کے واقعات کو روکنا ناممکن ہوجائیگا۔انہوں نے کہا کہ ہمارے حکمرانوں کو اس پر غور کرنا چاہئے کہ اس قسم کے واقعات ان کی اپنی غیر داشمندانہ پالیسیوں کی وجہ سے رونما ہورہے ہیں وہ توہین رسالت کے قانون کو ختم کرنے اور اس کو غیر موثر کرنے کی کوشش کررہے ہیں اور آج تک انہوں نے اس قانون پرکماحقہ عملدرآمدکرتے ہوئے کسی گستاخ کو سزا دلوانی کی کوشش نہیں کی، عدالتوں سے صرف ایک مجرمہ آسیہ مسیحہ کو سزا ہوئی لیکن بیرونی دباؤ کے باعث آج تک اس سزا پربھی عمل درآمد نہیں کیا۔

مزید : ملتان صفحہ آخر