مریم نواز آج کل سیاسی منظر سے غائب کیوں ہیں اور دراصل کیا کررہی ہیں؟ انتہائی حیران کن دعویٰ سامنے آگیا

مریم نواز آج کل سیاسی منظر سے غائب کیوں ہیں اور دراصل کیا کررہی ہیں؟ انتہائی ...
مریم نواز آج کل سیاسی منظر سے غائب کیوں ہیں اور دراصل کیا کررہی ہیں؟ انتہائی حیران کن دعویٰ سامنے آگیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)کچھ عرصہ قبل تک وزیراعظم محمد نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز سیاسی افق پر بہت سرگرم تھیں اور وزیراعظم کے ساتھ ہر جگہ نظر آتی تھیں، لیکن گزشتہ کچھ دنوں سے وہ منظرنامے سے غائب ہیں۔ ہمہ وقت متحرک نظر آنے والی مریم نواز اچانک خاموش کیوں ہوگئی ہیں؟ اخبار ایکسپریس ٹریبیون کی ایک رپورٹ کے مطابق اس معاملے کا تعلق بنیادی طور پر پانامہ کیس سے ہے، جس کے متوقع نتائج کے پیش نظر مریم نواز عارضی طور پر پس منظر میں چلی گئی ہیں۔
رپورٹ میں باخبر ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ موجودہ صورتحال کی مطابقت سے کچھ تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں، تاہم مریم نواز کا پس منظر میں جانا ایک عارضی مسئلہ بتایا گیا ہے جو اس کیس کی گرد بیٹھنے پر ختم ہو جائے گا۔ ایک اور ذریعے کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ وزیراعظم کی صاحبزادی پس منظر میں ہونے کے باوجود اہم فیصلے کررہی ہیں۔ اس ذریعے کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کے حالیہ کچھ اہم فیصلوں کی بنیاد مریم نواز کا مشورہ ہی ہے ۔ رپورٹ کے مطابق مردان کی یونیورسٹی میں طالب علم کے قتل کی انہوں نے خود سخت مذمت کی اور انہی کے مشورے پر وزیراعظم کی جانب سے بھی مذمتی بیان سامنے آیا۔ ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ یہ سوچنا غلط ہوگا کہ مریم نواز منظر سے ہٹادی گئی ہیں کیونکہ وہ اب بھی معاملات میں متحرک اثر و رسوخ رکھتی ہیں، کچھ ماہ پہلے کی طرح، بس فرق اتنا ہے کہ اب صورتحال بظاہر پہلے سے مختلف نظر آتی ہے۔

احسان اللہ احسان نے خود کو فورسز کے حوالے کردیا، نورین لغاری کبھی شام نہیں گئی، ہرپاکستانی ردالفساد کا سپاہی ہے : پاک فوج
پانامہ کیس کے بعد ان پر تنقید میں غیر معمولی اضافے کی وجہ سے بھی انہیں پس پردہ رکھنے کا فیصلہ کیا گیا۔ عمران خان جیسے سیاسی مخالف کی موجودگی میں ہر قدم احتیاط کے ساتھ اٹھانے کی ضرورت ہے ورنہ سخت ردعمل گنجائش ہمیشہ موجود ہے۔ پنجاب سے تعلق رکھنے والے ایک رکن پارلیمنٹ کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ مریم نواز جلد ہی منظر نامے پر واپس ہوں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ مریم نواز کی عدم موجودگی کو عوامی سطح پر نوٹ کیا گیا ہے، اور اس تاثر کو رد کرنے کیلئے وہ عنقریب وزیراعظم کے ساتھ کھڑی نظر آئیں گی، لیکن یہ منظر بکثرت نظر نہیں آئے گا۔
پاکستان مسلم لیگ (ن) کے اندرونی حلقوں میں مبینہ اختلافات کو بھی اہم قرار دیا جارہا ہے۔ اس نظریے کے مطابق ایک جانب اسحق ڈار تو دوسری جانب مریم نواز ہیں۔ دونوں شریف خاندان کے رکن ہیں لیکن ان کا باہمی تعلق بہت گرم جوشی پر مبنی نہیں۔ آج کل سیاسی معاملات سے نمٹنے کیلئے اسحق ڈار بہت نمایاں ہیں۔ بڑی سیاسی پارٹیوں میں ایسا ہوتا ہے کہ جب ایک کیمپ بہت نمایاں ہو تو دوسرا قدرے پیچھے ہٹ جاتا ہے۔

مزید :

قومی -