اظہار رائے پرپابندی، جمہوریت اور آمریت میں فرق کیا رہے گا:خورشید شاہ

اظہار رائے پرپابندی، جمہوریت اور آمریت میں فرق کیا رہے گا:خورشید شاہ
اظہار رائے پرپابندی، جمہوریت اور آمریت میں فرق کیا رہے گا:خورشید شاہ

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن )قومی اسمبلی میں قائدحزب اختلاف خورشید شاہ نے کہا ہے کہ اظہار رائے پرپابندی نہیں ہونی چاہیے،جمہوریت اورآمریت میں پھرکیا فرق رہے گا۔

میڈیاسے گفتگوکے دوران قائدحزب اختلاف کا کہنا تھا کہ نوازشریف سمیت کسی بھی سیاسی جماعت سے مذاکرات کے دروازے بندنہیں۔نگراں وزیراعظم کافیصلہ میں نے اوروزیراعظم نے کرناہے،کسی اورنے نہیں۔تحریک انصاف کے نام میڈیاکے ذریعے مجھ تک پہنچ گئے،اب ان سے ملاقات کاکیا فائدہ۔

انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کی جانب سے ناموں کے اعلان پر حیرت میں ہوں۔تحریک انصاف کے رہنماو¿ں سے مشاورت جاری تھی۔اب تحریک انصاف کے ساتھ بیٹھنے کی ضرورت نہیں۔میں نے تحریک انصاف سے رابطے کیے لیکن انھوں نے نہیں کیا۔میں سب کو ساتھ لے کر چلنا چاہتا ہوں۔

خو رشید شاہ نے مزید کہا کہ حکومت سے کہا15 مئی تک نگراں وزیراعظم کانام فائنل کرناچاہیے۔اظہار رائے پرپابندی نہیں ہونی چاہیے،جمہوریت اورآمریت میں پھرکیا فرق رہے گا۔اظہار رائے کوریاست کیخلاف استعمال نہیں کرناچاہیے،قانون بھی اجازت نہیں دیتا۔

مزید : قومی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...