سندھ اسمبلی: سدرہ عمران کی تحریک التواء خلاف ضابطہ قرار

سندھ اسمبلی: سدرہ عمران کی تحریک التواء خلاف ضابطہ قرار

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ اسمبلی کے اسپیکر آغا سراج درانی نے منگل کو ایوان کی کارروائی کے دوران تحریک انصاف کی خاتون رکن اسمبلی سدرہ عمران کی ایک تحریک التوا جوتھر میں 8بلین روپے کے اخراجات کے باوجود 700آراو پلانٹس لگانے کا میگامنصوبے نامکمل ہونے سے متعلق تھی خلاف ضابطہ قرار دیکر مسترد کردی جس پر اپوزیشن کے ارکان نے سخت احتجاج کیا۔صوبائی وزیر مکیش کمار چاولہ نے اس تحریک کی مخالفت کی تھی۔ محرک کا کہنا تھا کہ تھر کے لوگوں کو صاف پانی نہیں مل رہا ہے سدرہ عمران نے کہا کہ کاش ایوان میں بیٹھے لوگوں کو اس تکلیف کا احساس ہوتا تو ہمیں یہ تحریک نہ لانی پڑتی ،انہوں نے کہا کہ آج یہ تحریک دیکھ کر حکومت گھبراگئی ہے ان کی چیخیں نکل گئی ہیں۔ تھر میں دوملین تو دور کی بات ہے دو ہزار افراد کو بھی پانی نہیں مل رہا سدرہ عمران نے کہا کہ یہ معاملہ عدالت میں زیر سماعت نہیں اس لئے بحث کرلیں ورنہ یہ بھی عدالت میں نہ چلاجائے ۔ اس موقع پر وزیر بلدیات سعید غنی کہا کہ آٹھ ارب روپے کی آر او پلانٹ کی کوئی اسکیم ہے ہی نہیں اگر اپوزیشن ریسرچ کرلیتی تو بات بہتر انداز میں کی جاسکتی تھی۔انہوں نے کہا کہ تھر میں میں آٹھ ارب اور سات سو آراو پلانٹ کاکوئی منصوبہ ہی نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ وہ سابق چیف جسٹس جو آجکل پی ٹی آئی کے کمپینر بنے ہوئے ہیں،اس چیف جسٹس کی سربراہی میں واٹر کمیشن کی رپورٹ جو جمع ہوئی اس میں پانی کی اسکیموں کو تسلیم اور اسے فیصلے کا حصہ قرار دیا ہے ۔بعدازاں اسپیکر نے تحریک التواکوخلاف ضابطہ قرار دیکر مسترد کردیا جس اپوزیشن ارکان نے اپنی نشستوں سے اٹھ کر سخت احتجاج کیا۔

مزید :

صفحہ اول -