رائٹ ٹو انفارمیشن قانون کا بنیادی مقصد اچھی طرز حکمرانی کو فروغ دینا ہے: عظمت حنیف اور کزئی

رائٹ ٹو انفارمیشن قانون کا بنیادی مقصد اچھی طرز حکمرانی کو فروغ دینا ہے: عظمت ...

  

صوابی (بیورورپورٹ) چیف کمشنررائیٹ ٹو انفارمیشن صوبہ خیبر پختونخوا عظمت حنیف اورکزئی نے کہا ہے کہ رائٹ ٹو انفارمیشن قانون کے قیام کا بنیادی مقصد اچھی طرز حکمرانی ، شفافیت اور خود احتسابی کو فروغ دینا ہے اور اس قانون کے نفاذ سے سرکاری و عوامی اداروں اور دفاتر میں عوام کوخدمات کی احسن طریقے سے فراہمی کویقینی بنانے کے علاوہ عوام کا حکومتی اداروں پر اعتماد بحال ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے یونیورسٹی آف صوابی میں اوریک کے زیر اہتمام رائیٹ ٹوا نفارمیشن قانون کے حوالے سے منعقدہ سیمینار سے بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کیا۔ یونیورسٹی کے لیکچررز اور طلباء اور طالبات کی بڑی تعداد نے اس سیمینار میں شرکت کی۔ اس موقع پر اوریک کے ڈائریکٹر ڈاکٹر روئیدار علی شاہ نے بھی اظہارخیال کیا اور اپنی تجاویز اور آراء پیش کیں۔ چیف کمشنر رائیٹ ٹو انفارمیشن عظمت حنیف اورکزئی نے کہا کہ رائیٹ ٹو انفارمیشن ایکٹ شفاف اور کرپشن سے پاک حکومت بنانے کیلئے بہت اہم ہے اور اس قانون کی رو سے ہر شہری کو اب یہ حق حاصل ہے کہ وہ صوبے کے کسی بھی سرکاری یا عوامی ادارے سے معلومات حاصل کرسکتا ہے ، ماسوائے چند خاص نوعیت کی معلومات جن کو استثنیٰ حاصل ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس قانون کا بنیادی مقصد ان عوامی اور سرکاری اداروں کو عوام کے سامنے جوابدہ بنانا ہے جو عوامی امور انجام دے رہے ہیں ۔ ان اداروں میں کام کرنے والے اہلکاروں میں یہ احساس پیداہوگا کہ کوئی بھی شہری معلومات حاصل کرنے کا آئینی حق رکھتا ہے ۔ با الفاظ دیگر عوام کو بااختیار کردیا گیا ہے ۔ یہ قانون اداروں کی کارکردگی میں بہتری کا سبب بنے گا۔ عظمت حنیف اورکزئی نے کہا کہ خیبر پختونخوا انفارمیشن کمیشن نے عوام کی رہنمائی کے لئے ایک سہولت سنٹر قائم کیا ہے ، اس سنٹر کا مقصد عوام کو دفتری اوقات میں بذریعہ ٹیلی فون قانون کے استعمال کے بارے میں رہنمائی اور معلومات فراہم کرنا ہے ۔ عوام ٹول فری نمبر 0800-57784 پر اس سہولت سے فائدہ اٹھاسکتے ہیں۔ عظمت حنیف اورکزئی نے اس سیمینار کی وساطت سے تمام طلباء اور عوام سے مطالبہ کیا کہ اس قانون کے بارے میں عوامی حلقوں میں آگاہی پھیلانے کے حوالے سے اقدامات کریں تاکہ عام آدمی اس قانون سے باخبر ہو کر فائدہ اٹھاسکیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -