عمر ان خان جنوبی پنجاب کو صوبہ بنانے پورا وعدہ کریں: فاروق ستار

عمر ان خان جنوبی پنجاب کو صوبہ بنانے پورا وعدہ کریں: فاروق ستار

  

ملتان،کبیروالا+بارہ میل ( نیوز رپورٹر،تحصیل رپورٹر+نمائندہ پاکستان)متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے مرکزی رہنما ڈاکٹر فاروق ستار نے کسان کمیٹی پنجاب کے صدر سید اسد عباس شاہ کے ہمراہ پریس کلب کبیروالا کے پروگرام ’’گفتگو‘‘ میں اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ وقت آگیا ہے کہ فیصلہ کرلیا(بقیہ نمبر9صفحہ12پر )

جائے کہ پاکستان کو کس طرح چلانا ہے ، ہمیں وسیع البنیاد مشاورتی عمل کے ذریعے ’’چارٹر آف فیوچر آف پاکستان ‘‘ دینا ہوگا،مشاورتی عمل میں سیاستدانوں کے ساتھ ساتھ ریاستی اور آئینی اداروں کی قیادت کو بھی شامل کیا جائے تاکہ ہر کوئی اپنی پیشہ وارانہ تربیت اور نقطہ نظر کی روشنی میں پاکستان کو درپیش مسائل کا حل تجویز کرسکے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں مزید انتظامی یونٹ بننے چاہیں ،جنوبی پنجاب ،صوبہ بننے کا پہلا حق رکھتا ہے ،جنوبی پنجاب صوبہ بناتو ہزارہ سمیت دیگر صوبوں کا قیام بھی یقینی ہوسکے گا ۔انہوں نے کہا کہ 18ویں ترمیم کے ذریعے صوبوں کے اختیار ات کا معاملہ حل ہوا لیکن مرکز سے آبادی کی بنیاد پر اختیارات حاصل کرنے والے صوبوں ،وزیر اعلیٰ اور حکومتوں نے نیچے کی جانب شہری حکومتوں،بلدیاتی اداروں ،تحصیل،یونین اور دیہی کونسلوں کو حقوق،اختیارات دینے کی بجائے پہلے سے حاصل شدہ اختیار بھی واپس لے لئے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں عجب سیاست ہے کہ مارشل لاء کے دور میں ’’بلدیاتی اداروں‘‘ کو اختیار،وسائل ملتے ہیں اور منتخب جمہوری حکومتوں کے دور میں بلدیاتی اداروں کے اختیارات ا ور وسائل سلب کرلئے جاتے ہیں ،جس کا واضح ثبوت ایوب خان ،ضیاء الحق،پرویز مشرف کے غیر جمہوری ادوار میں بلدیاتی اداروں کو اختیارات اور وسائل ملے جبکہ ذوالفقار علی بھٹو شہید،بے نظیر بھٹو شہید،میاں نواز شریف ،یوسف رضا گیلانی سمیت دیگر کے منتخب جمہوری ادوار میں بلدیاتی اداروں کے اختیارات اور وسائل واپس لے لئے گئے،ضرورت ہے کہ آئین میں بلدیاتی اداروں کے اختیارات اور وسائل کو آئینی تحفظ فراہم کیا جانا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ ٹیکس کا منصفانہ نظام ہونا چاہیے اور قابل ٹیکس آمدنی پر ٹیکس ہونا چاہیے ، جس طرح ایک معمولی کلرک اور عام آدمی ٹیکس ادا کرتا ہے ،اس طرح وڈیروں،جاگیرداروں کی بے بہا دولت پر بھی ٹیکس لاگو کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ اگرہم معاشی طور پر مستحکم نہ ہوئے توہمارا مضبوط دفاعی طاقت ہونابھی کسی کام نہیں آئے گا،ملکی معیشت کے استحکام کیلئے غیر ملکی سرمایہ کاری ہونا ضروری ہے اور حکومت کو بیروزگاری کیلئے گھریلو صنعت کو فروغ اور چھوٹے قرضوں کی فراہمی کے اجراء کو یقینی بنانا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ مجھے متحدہ قومی موومنت سے نکالنے والے میرے دل سے ’’ایم کیو ایم ‘‘ نہیں نکال سکتے،ایم کیوایم کی ناکامیوں کاسبب ماضی میں کی گئی غلطیاں اور کوتاہیاں ہیں ،الیکشن 2018میں دھاندلی کا عمل ’’پولنگ ‘‘ کے دوران نہیں بلکہ ’’گنتی ‘‘ کے دوران کیا گیا ۔انہوں نے کہا کہ کبیروالا کے دورہ کرنے کے دوران ملنے شہریوں سے بات چیت سے اندازہ ہوا کہ اس خطے کے عوام سیاسی شعور رکھتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اگر ملکی حالات کو بد سے بدتر ہونے سے نہ روکا گیا تو خدانخواستہ ملک کے مختلف خطوں میں خانہ جنگی جیسے حالات پیدا ہونے کے خدشات ہیں ،یہ حقائق بتانے کا مقصد کسی کو خوفزدہ کرنا نہیں بلکہ عوام کو ذہنی طور پر تیار کرنا ہے ۔انہوں نے کہا کہ عوام کو اب یہ فیصلہ کرنا ہے کہ آئندہ ہمیں ایسے لوگوں کے ساتھ چلنا ہے،جن کے پاس ملکی مسائل اور بحرانوں سے نمٹنے کا ویژن بھی ہے اور روڈ میپ بھی ۔انہوں نے کہا کہ عوام کو بھی اپنے حصے کا کردار ادا کرنا چاہیے ،جس مرضی سیاسی جماعت کو ووٹ دیں ،لیکن موروثی سیاست کے ذریعے نسل در نسل الیکشن لڑنے اور حلقے کی تمام نشستوں پر ایک خاندان کے تمام افراد کو امیدوار بنانے والوں کو کسی صورت بھی ووٹ نہ دیں ۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کو اپنے وعدے کے مطابق جنوبی پنجاب کو ’’صوبہ ‘‘ بنانے کیلئے پنجاب اسمبلی سے بل پاس کراکے قومی اسمبلی اور سینٹ میں پیش کرنا چاہیے ،اگر مسلم لیگ (ن) ،پیپلز پارٹی یا کوئی سیاسی جماعت اگر اس بل کی مخالفت کرتی ہے تو وہ جنوبی پنجاب کے عوام کے سامنے خود بے نقاب ہوجائے گی۔کسان کمیٹی پنجاب کے صدر سید اسد عباس شاہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میڈیا ،جنوبی پنجاب کے محرومیوں کو اجاگر کرنے اور صوبہ بنائے جانے کے حوالے سے جاندار اور بھرپور کردار ادا کررہا ہے ،خطے کے سیاستدانوں کو بھی اپنے تمام اختلافات اور معاملات ایک طرف رکھ کر جنوبی پنجاب کو صوبہ بنانے کے لئے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی معیشت میں زراعت کو ’’ریڑھ کی ہڈی ‘‘ کہا جاتا ہے لیکن گزشتہ 70سالوں میں جس طبقے کا مسلسل استحصال کیا جارہا ہے ،وہ مظلوم طبقہ پاکستان کا کسان ہے ،وفاقی اور صوبائی حکومتیں اگر واقعی کسانوں کو معاشی مسائل سے نکالنا چاہتی ہیں تو انہیں دیگر مراعات دینے کے ساتھ ساتھ ان سے گندم 1800روپے فی من خرید کریں۔ انجمن صحافیاں وپر یس کلب کبیروالا کے صدر حفیظ سعیدی اور جنرل سیکرٹری راؤ امجد ندیم نے متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے مرکزی رہنما ڈاکٹر فاروق ستار اور کسان کمیٹی پنجاب کے صدر سید اسد عباس شاہ کو پریس کلب کبیروالا کے پروگرام میں شریک ہونے پر ان کا شکریہ ادا کیا اور پریس کلب کبیروالا کے سینئر ممبران فیاض اسلم چوہدری ،عبدالستار جانی،میاں عبدالحفیظ ،پیر محسن قریشی،سید فرخ رضا،ملک خالد شفیق ،جاوید حسن چوہدری ،اختر حسین سجاد سہو ،سید ذوالقرنین حیدربخاری،چوہدری اختر جلال نعیم نے ڈاکٹر فاروق احمد گلدستے پیش کئے اور پھولوں کے ہار پہنائے۔

فاروق ستار

مزید :

ملتان صفحہ آخر -