کرونا مزید 16پاکستانیوں کو نگل گیا، امریکہ میں 24گھنٹوں سے دوران 2482افراد ہلاک

کرونا مزید 16پاکستانیوں کو نگل گیا، امریکہ میں 24گھنٹوں سے دوران 2482افراد ہلاک

  

اسلام آباد(جنرل،سٹاف رپورٹرر، مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) ملک بھر میں جمعرات کے روز کرونا وائرس سے 16افراد جاں بحق ہو گئے اور مزید 719کیسز رپورٹ ہو ئے، پنجاب میں 7، سندھ میں 4، کے پی کے 3 اور بلوچستان میں 2ہلاکتیں ہوئیں، ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 134 ہوگئی جبکہ نئے کیسز سامنے آنے کے بعد متاثرہ مریضوں کی تعداد 7018 تک پہنچ گئی۔ملک میں ہونیوالی 134 ہلاکتوں میں سے سب سے زیادہ سندھ میں 45 اور خیبرپختونخوا میں 42 ہلاکتیں ہوئی ہیں۔ اس کے علاوہ پنجاب میں 35، بلوچستان میں 5، گلگت 3 اور اسلام آباد میں ایک ہلاکت ہوچکی ہے۔سندھ میں 340 کیسز 4 ہلاکتیں، پنجاب 260 کیسز اور 7 ہلاکتیں، بلوچستان 25 کیسز اور 2 اموات، گلگت بلتستان 8 جبکہ اسلام آباد سے مزید 5 کیسز رپورٹ ہوئے۔پنجاب میں کرونا وائرس کے مزید 260 کیسز سامنے آئے اور 7 ہلاکتیں بھی ہوئیں جس کی تصدیق وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدا رکی جانب سے کی گئی۔صوبے میں نئے کیسز اور ہلاکتوں کے بعد متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 3276 اور ہلاکتیں 35 ہوگئی ہیں۔پنجاب میں ہونیوالی ہلاکتوں میں سے لاہور میں 14، راولپنڈی 9، ملتان 3، رحیم یار خان 2، گجرات 2، بہاولپور، جہلم، فیصل ا?باد اور ٹوبہ ٹیک سنگھ میں ایک ایک ہلاکت ہوئی ہے۔واضح رہے کہ صوبے میں اب تک کورونا سے 630 افراد صحت یاب ہوچکے ہیں۔بلوچستان میں جمعرات کوکررونا کے مزید 25 کیسز اور دو اموات رپورٹ ہوئیں جس کے بعد صوبے میں کیسز کی مجموعی تعداد 305 ہوگئی ہے جب کہ 5 افراد وائرس سے جاں بحق ہوئے ہیں۔صوبائی ترجمان لیاقت شاہوانی نے بلوچستان میں مزید کیسز کی تصدیق کی۔گزشتہ روز لیاقت شاہوانی نے مریضوں کی مجموعی تعداد 281 بتائی تھی تاہم رات گئے ایک کیس کی رپورٹ منفی آنے کے بعد اسے مجموعی کیسز سے ہٹادیا گیا تھا اور یوں کْل تعداد 280 ہوگئی تھی۔ادھر صوبائی محکمہ صحت کے مطابق بلوچستان میں کورونا کے 142 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں۔وفاقی دارالحکومت سیکورونا کے مزید 5 کیسز سامنے آئے جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ ہوئے ہیں۔ نئے کیسز کے بعد متاثرہ مریضوں کی تعداد 145 ہوگئی ہے۔وفاقی دارالحکومت میں اب تک کورونا سے صرف ایک مریض کا انتقال ہوا ہے۔یبرپختونخوا میں بدھ کو 47 نئے کیسز اور 4 اموات سامنے آئیں جس کے بعد کل ہلاکتوں کی تعداد 42 ہوگئی جب کیسز کی مجموعی تعداد 912 ہوگئی۔صوبے میں مزید 13 افراد صحتیاب ہوچکے ہیں جس کے بعد مہلک وائرس سے جنگ جیتنے والے افراد کی تعداد 191 ہوچکی ہے۔گلگت بلتستان میں جمعرات کو کورونا کے مزید 8 کیسز رپورٹ ہوئے جس کے بعد علاقے میں کیسز کی مجموعی تعداد 245 ہو گئی۔۔ادھر لاہور کیمپ جیل میں تصدیق شدہ قیدی مریضوں میں سے 37 قیدیوں کا دوسرا ٹیسٹ منفی آگیا۔ سپرنٹنڈنٹ جیل کے مطابق 512 قیدیوں کے ٹیسٹ کروانے کے بعد مثبت ٹیسٹ آنے پر 59 قیدی جیل ہسپتال میں زیر علاج ہیں جن میں 37 قیدیوں کے دوبارہ ٹیسٹ کروائے گئے تو ان تمام کی رپورٹس منفی آئی ہیں۔ حتمی رپورٹس کے بعد قیدیوں کو متعلقہ بیرکس میں منتقل کردیا جائے گا۔سندھ میں جمعرات کو 150 نئے کیسز سامنے آئے اور 6 ہلاکتیں بھی ہوئیں جس کی تصدیق صوبائی ترجمان مرتضیٰ وہاب نے کی۔ مرتضیٰ وہاب کے مطابق صوبے میں مریضوں کی مجموعی تعداد 1668 اور ہلاکتیں 41 ہوگئی ہیں۔ جبکہ مزید 133 افراد صحت یاب ہوئے جس کے بعد صحت یاب ہونے والوں کی تعداد 560 ہوگئی ہے۔ ترجمان محکمہ صحت کے مطابق گزشتہ روز کراچی میں پانچ اور سکھر میں ایک مریض دم توڑ گیا ہے۔بلوچستان میں 32 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی جس کے بعد صوبے میں مریضوں کی مجموعی تعداد 280 ہوگئی۔ صوبائی ترجمان لیاقت شاہوانی نے کیسز کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ تمام نئے کیسز مقامی طورپر منتقلی ہے۔ لیاقت شاہوانی نے بتایا کہ بلوچستان میں کورونا کے 137 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں۔محکمہ صحت خیبر پختونخوا نے مزید 47 کیسز کی تصدیق کی جس کے بعد صوبے میں متاثرین کی تعداد 912 ہوگئی۔ انہوں نے کورونا کے مزید 4 مریضوں کے جاں بحق ہونے کی بھی تصدیق کی اور کہا کہ یہ اموات پشاور کے مختلف ہسپتالوں میں ہوئیں۔صوبے میں مزید 13 افراد صحت یاب ہوچکے ہیں جس کے بعد مہلک وائرس سے جنگ جیتنے والے افراد کی تعداد 191 ہوچکی ہے۔وفاقی دارالحکومت سے کورونا کے مزید 14 کیسز سامنے آئے جو سرکاری پورٹل پر رپورٹ ہوئے ہیں۔ جس کے بعد مریضوں کی تعداد 145 ہوگئی۔ وفاقی دارالحکومت میں اب تک کورونا سے صرف ایک مریض کا انتقال ہوا ہے۔گلگت بلتستان میں کورونا کے مزید 3 کیسز رپورٹ ہوئے جس کے بعد علاقے میں کیسز کی مجموعی تعداد 237 ہو گئی۔ سرکاری ترجمان کے مطابق دو نئے کیسز استور اور ایک نگر میں سامنے آیا جبکہ گلگت بلتستان میں زیر علاج مریضوں کی تعداد صرف 56 رہ گئی ہے۔آزاد کشمیر میں گزشتہ روز کوئی نیا کیس سامنے نہ آیا اور مریضوں کی تعداد بدستور 46 ہی رہی، البتہ مزید 5 مریض صحت یاب ہوگئے جس کے بعد ہسپتالوں سے ڈسچارج ہونیوالے مریضوں کی تعداد 9 ہوگئی ہے۔ لاہور میں کرونا کے مریضوں کی تعداد 500 سے تجاوز کر گئی۔شہر میں مزید اڑتیس کیس رپورٹ ہونے کے بعد تعداد پانچ سو بائیس ہو گئی۔ پنجاب سے مزید دو سو سولہ کیس رپورٹ ہونے کے بعد مریضوں کی تعداد تین ہزار دو سو بتیس تک جا پہنچی۔ترجمان محکمہ صحت کے مطابق اب تک 701 زائرین سنٹرز، 1236 رائے ونڈ سے منسلک افراد، 91 قیدیوں، 1204 عام شہریوں میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی۔کیمپ جیل لاہور 59، سیالکوٹ 14، گوجرانوالہ 7، ڈی جی خان میں 9 اور بھکر میں 2 قیدی کورونا وائرس میں مبتلا ہیں۔ شہر میں کورونا کے مریضوں میں مسلسل اضافہ جاری ہے، مکھن پورہ کا علاقہ 9 روز سے سیل ہے جبکہ داخلی و خارجی راستوں پر پولیس اہلکار تعینات ہیں۔اس علاقے میں 83 افراد کے ٹیسٹ کئے گئے جن میں پہلے مرحلے میں 17 لوگوں کی رپورٹس مثبت آئی ہیں بعد ازاں 29 اور پھر 40 افراد کے ٹیسٹ کئے گئے ہیں۔گزشتہ روز ڈی سی لاہور کی جانب سے کہا گیا تھا کہ اس علاقے کو کلئیر کر دیا جائے گا لیکن تین مزید افراد کے ٹیسٹ جانے کے بعد ابھی تک علاقے کو کلئیر قرار نہیں دیا گیا۔ خیال رہے اس علاقے میں 57 خاندان رہائش پذیر ہیں۔

پاکستان ہلاکتیں

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)امریکہ میں کرونا سے مزید 2482 افراد ہلاک ہو گئے،کرونا سے مرنے والوں کی تعداد 30 ہزار 206 ہو گئی، 6 لاکھ 44 ہزار 89 امریکی شہری عالمی وبا کی زد میں آ چکے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق امریکا میں کورونا سے مزید 2482 افراد لقمہ اجل بن گئے۔ ہلاکتوں کی تعداد 30,206 ہو گئی۔ 644,089 کورونا سے متاثر ہیں۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہناتھاکہ ملک میں کورونا وبا کا بدترین دور گزر گیا۔ امریکی معیشت کھولنے کیلئے کل حکمت عملی کا اعلان کریں گے۔ انہوں نے دنیا کے دیگر ممالک پر کورونا سے اموات کی اصل تعداد چھپانے کا الزام لگایا۔ریاست نیویارک میں 2 لاکھ سے زائد افراد کورونا وائرس میں مبتلا ہو چکے ہیں۔ گورنر اینڈریو کیومو نے کہا ہے کہ ان کی ریاست ابھی مشکل دور سے باہر نہیں نکلی تاہم وائرس کا پھیلا روک سکتے ہیں ایران میں کرونا متاثرین کی تعداد ساڑھے سات لاکھ، ہلاکتیں 8600ہوگئیں دوسری طرف ایران کی پالیمنٹ نے بتایا ہے کہ ملک میں کرونا کے متاثرہ افراد کی اصل تعداد سرکاری اعداد شمار سے کہیں زیادہ ہے۔ پارلیمنٹ کے سٹڈی سینٹر کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا کہ اب تک ایران میں کرونا وائرس سے 8600 افراد ہلاک اور متاثرہ افراد کی تعداد چھ لاکھ سے ساڑھے سات لاکھ افراد کے درمیان ہے۔رپورٹ میں بتایا تھا کہ اگر ایران میں کرونا کی وبا اسی شدت کے ساتھ جاری رہی اور حکومت کی طرف اس کی روک تھام کے لیے مداخلت نہیں کی گئی تو ایران کی 8 کروڑ تیس لاکھ کی آبادی میں چھ کروڑ افراد کرونا کا شکار ہوسکتے ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا کہ ایران میں کرونا مزید 400 دن تک رہ سکتا ہے اور آئندہ نومبر میں یہ بیماری عروج پر پہنچ سکتی ہے۔ایرانی پارلیمانی ریسرچ سینٹر کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ مذکورہ تفصیلات ایرانی وزات صحت کے ایک خفیہ ذریعے سے حاصل کی گئی ہیں۔ رپورٹ کے مطابق اگر حکومت نے 10 فی صد مداخلت کی تو چو بیس ملین لوگ کرونا سے بیمار اور تیس ہزار ہلاک ہوسکتے ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ دارالحکومت تہران میں متاثرہ افراد کی تعداد پانچ لاکھ 30 ہزا تک پہنچ سکتی ہے جب کہ ہلاکتیں 6500 ہوگئی ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ملک میں لاک ڈاؤن متاثرین کی تعداد میں 25 فی صد کمی کرسکتا ہے۔ اس صورت میں ایران میں متاثرہ افراد کی تعداد 16 لاکھ 60 ہزار اور مزید 13 ہزار 450 افراد ہلاک ہوسکتے ہیں۔اگر ملک میں 32 فی صد لاک ڈاؤن کیا جائے تو 9 لاکھ 51 ہزار افراد کے کرونا کا شکار ہونے اور 8 ہزار 360 اموات کا اندیشہ ہے۔ تہران میں ایک لاکھ 93 ہزار متاثرین اور 1660 افراد وفات پاسکتے ہیں۔اگرملک میں چالیس فی صد لاک ڈاؤن کیا جاتا ہے ایران میں کرونا کے متاثرین کی تعداد 8 لاکھ 11 ہزار تک پہنچ سکتی ہے اور ہلاکتیں 6030 ہوسکتی ہے۔ تہران میں 40 فی صد لاک ڈاؤن سے ایک لاکھ 59 ہزار افراد متاثر اور قریبا 1220 ہلاکتیں ہوسکتی ہیں۔کرونا وارئرس کے باعث بھارت دارالحکومت نئی دہلی اور تجارتی مرکز ممبئی سمیت ملک کے 170 اضلاع کو ریڈ زون قرار دے دیا گیا ہے۔بھارتی حکومت کی جانب سے جاری گائیڈ لائنز میں کورونا وائرس کے کیسز کی اعتبار سے مختلف علاقوں کو رنگوں کے ذریعے واضح کیا گیا ہے۔وائرس کے باعث سب سے زیادہ متاثرہ علاقوں کو ریڈ زون قرار دیا گیا ہے جب کہ جن علاقوں میں کم کیسز ہیں انہیں نارنجی اور جہاں کوئی کیسز نہیں ہیں ان علاقوں کو ہرے رنگ کے ذریعے واضح کیا گیا ہے۔نئی دہلی، ممبئی، چنئی، بنگلورو، کلکتہ اور حیدرآبادسمیت ملک کے 170 اضلاع کو ریڈ زون قرار دیا گیا ہے۔برطانیہ نے لاک ڈاؤن میں تین ہفتوں کیلئے توسیع کر دی

عالمی ہلاکتیں

مزید :

صفحہ اول -