تاریخ میں پہلی بار ڈاکٹرز نے سیکرٹری ہیلتھ کے دفتر میں بھوک ہڑتال کر دی

تاریخ میں پہلی بار ڈاکٹرز نے سیکرٹری ہیلتھ کے دفتر میں بھوک ہڑتال کر دی

  

لاہور (رپورٹ جاوید اقبال،تصاویر ذیشان منیر)گرینڈ ہیلتھ الائنس نے سرکاری ہسپتالوں میں کرونا وائرس سے بچاو کیلئے سازوسامان اور حفاظتی کٹس کی عدم فراہمی پر احتجاج تحریک کا آغاز کرتے ہوئے محکمہ صحت کی تاریخ میں پہلی مرتبہ سیکرٹری ہیلتھ کے دفتر کے اندر بھوک ہڑتال کردی ہے جبکہ محکمہ کے سیکریٹریزاور آفیسرزسمیت عملہ دفاتر سے غائب ہوگیا ہے۔ڈیرہ غازی خان اورملتان میں بھی ینگ ڈاکٹرز اور پیرا میڈیکل اسٹاف نے بھوک ہڑتالی کیمپ ہسپتالوں کی انتظامیہ کے دفاتر کے باہر قائم کردیئے ہیں۔ لاہور میں بھوک ہڑتالی کیمپ کی قیادت گرینڈ ہیلتھ الائنس کے چیئرمین ڈاکٹر سلمان حسیب،پیرامیڈیکل سٹاف ایسوسی ایشن کی قیادت پنجاب کے صدر ارشد بٹ، نرسنگ ایسوسی ایشن کی طرف سے شمیم نیازی،ینگ ڈاکٹر ایسوسی ایشن کی طرف سے سینئر نائب صدر شعیب خان نیازی اور دیگر شعبہ جات کے رہنما کر رہے ہیں۔ جمعرات کی شب سیکرٹری ہیلتھ کے دفتر کے باہر بھوک ہڑتالی کیمپ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر سلمان حسیب،ارشد بٹ،ڈاکٹر شعیب خان نیازی اور شمیم نیازی نے کہا کہ تمام ڈاکٹرز نرسیں اور پیرا میڈیکل اسٹاف مصیبت کی اس گھڑی میں فرائض سرانجام دیں گے لیکن قیادت سیکرٹری ہیلتھ کے دفتر میں مطالبات پورے ہونے تک ہڑ تال پر رہے گی۔انہوں نے کہا کہ گجرات اورملتان میں نرسز کی ہلاکت کو شہادت کا درجہ دیا جائے۔پی آئی سی سمیت مختلف سرکاری ہسپتال میں ڈاکٹرز وائرس کا نشانہ بنے ہیں۔حکومت حفاظتی سامان فراہم کرے۔انہوں نے کہا کہ پنجاب کی وزیر صحت اور سیکرٹری ہیلتھ وزیراعظم اور وزیراعلیٰ کو اندھیرے میں رکھ کر سب اچھا کی رپورٹ جھوٹ پر مبنی دی جارہے ہیں۔ چین اور دیگر ممالک سے جو امدادی سامان آیا وہ افسر شاہی اور سیاستدانوں میں بندر بانٹ ہوگیا۔ہسپتالوں میں حقیقت یہ ہے کہ کام کرنے والے فرنٹ لائن پر موجود ڈاکٹروں، نرسوں اور پیرا میڈیکل اسٹاف کو حفاظتی سامان نہیں ملا جس کی وجہ سے وہ وائرس میں مبتلا ہو رہے ہیں۔ پورے ملک میں اب تک 300 سے زائد ہیلتھ پروفیشنلز کرونا وائرس میں مبتلا ہو گے ہیں۔ کل وزیرصحت سے ملاقات کی جہاں ان کے توہین آمیز رویے کے باعث بھوک ہڑتال پر آگئے ہیں۔ وزیراعظم اوروزیراعلی پنجاب فوری ایکشن لیکر وزیر صحت پنجاب، سیکریٹری ہیلتھ اور ان کے حواریوں کو عہدوں سے فارغ کریں۔کتنی ستم ظریفی ہے کہ کہ ہم کہہ رہے ہیں کہ جن ڈاکٹروں نرسوں اور پیرا میڈیکل اسٹاف نے کرونا وارڈوں میں ڈیوٹی کی ہے ان کے فوری طور پر کرونا ٹیسٹ کیے جائیں مگر تمام ہسپتالوں کی انتظامیہ سنی ان سنی کر رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت ہوش کے ناخن لے۔مزید ڈاکٹروں نرسوں اور پیرا میڈیکل اسٹاف میں کرونا وائرس آیا تو یہ بہت بڑے کیریئر ثابت ہوں گے اور وائرس آگے پھیلائیں گے۔ ڈاکٹر سلمان حسیب اور ارشد بٹ نے کہا کہ ہم جمعرات کے روز وزیر سے اور سیکرٹری سے مذاکرات کے لئے آئے۔ان سے کہا کہ ڈاکٹروں نرسوں اور پیرا میڈیکل سٹاف کو حفاظتی سازوسامان دیں مگر انہوں نے کہا کہ حفاظتی کٹس نہیں ہیں تو پھر کون سی قیامت آ گئی ہے۔ ہم نے بھوک ہڑتال کی ہے اور اس کا دائرہ کار ڈی جی خان تک پھیل گیا ہے۔

بھوک ہڑتال

مزید :

صفحہ اول -