پنجاب میں کورونا کے مریضوں کی تعداد میں زیادہ اضافہ کیوں دیکھنے میں آ رہا ہے؟ ڈاکٹر یاسمین راشد نے بنیادی وجہ بتا دی

پنجاب میں کورونا کے مریضوں کی تعداد میں زیادہ اضافہ کیوں دیکھنے میں آ رہا ہے؟ ...
پنجاب میں کورونا کے مریضوں کی تعداد میں زیادہ اضافہ کیوں دیکھنے میں آ رہا ہے؟ ڈاکٹر یاسمین راشد نے بنیادی وجہ بتا دی

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا ہے کہ حکومت نے ٹیسٹوں کی تعداد میں اضافہ کر دیا ہے جس کے باعث کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد بھی زیادہ ہو رہی ہے لیکن خوشی کی بات یہ ہے کہ اس سے متاثر ہونے والے زیادہ تر نوجوان صحت یاب ہونے کے بعد گھروں کو لوٹ رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا کہ اس وقت پورے پنجاب میں کورونا کے مریضوں کی تعداد 3,249 ہے اور اس میں بہت بڑی تعداد قرنطینہ میں موجود لوگوں کی ہے جو 1800 کے قریب ہیں، ہاٹ سپاٹس میں لاہور، گجرات، گوجرانوالہ، جہلم اور راولپنڈی ہیں کیونکہ سب سے زیادہ متاثرہ افراد ان علاقوں میں دیکھے جا رہے ہیں جبکہ پنجاب کے مجموعی کیسز میں سے 630 لوگ صحت یاب ہونے کے بعد گھروں کو جا چکے ہیں جبکہ تشویشناک حالت میں موجود افراد کی تعداد 13 ہے اور 34 اموات ہو چکی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سب سے اہم چیز یہ ہے کہ ہم نے کورونا کے ٹیسٹوں کی تعداد میں اضافہ کر لیا ہے اور آج کے دن شام 4 بجے تک 46,081 ٹیسٹ کر چکے ہیں جبکہ مزید ٹیسٹ بھی ہو رہے ہیں۔ ٹیسٹوں کی تعداد بڑھانے کی وجہ سے ہی متاثرہ افراد کی تعداد بھی زیادہ ہو رہی ہے لیکن ان میں سے 90 فیصد افراد میں بہت کم علامات ہیں یا نہ ہونے کے برابر ہیں جبکہ ایک بہت چھوٹی تعداد ہے جن میں علامات ظاہر ہوئی ہیں۔

ڈاکٹر یاسمین راشد کا کہنا تھا کہ سب سے اہم چیز عمر کی درجہ بندی ہے اور یہ وائرس 60 سال سے زائد عمر کے لوگوں کیلئے خطرناک ہے۔ اس سے متاثر ہونے والے 71 فیصد نوجوانوں میں سے اکثریت صحت مند ہو کر گھروں کو واپس جا رہے ہیں اور میری التجاءہے کہ اپنے بزرگوں کو بالکل بھی گھر سے مت نکلنے دیجئے، میں بزرگوں سے کہوں گی کہ وہ گھروں سے نہ نکلیں اور قرنطینہ میں رہیں کیونکہ یہ آپ کیلئے زیادہ خطرناک ہے۔

مزید :

قومی -کورونا وائرس -