پائیدار اقتصادی ترقی کیلئے معیشت میں جدید ٹیکنالوجی متعارف کرائی جائے

پائیدار اقتصادی ترقی کیلئے معیشت میں جدید ٹیکنالوجی متعارف کرائی جائے

اسلام آباد (پ ر) پاکستان معیشت کے مختلف شعبوں میں جدید ٹیکنالوجی کو اپنانے میں کافی پیچھے ہے جس وجہ سے ملک ابھی تک سماجی و معاشی میدان میں بہتر ترقی حاصل کرنے سے محروم رہا ہے لہذا حکومت پائیدار اقتصادی ترقی کے حصول کو یقینی بنانے کی خاطر معیشت کے تمام شعبوں میں جدید ٹیکنالوجی کو متعارف کرانے کیلئے کوششیں تیز کرے ان خیالات کااظہار اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر یاسر سخی بٹ نے مقامی تاجر وں کے ایک وفد سے تبادلہ خیال کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا ہمارے ملک کے پاس افرادی و قدرتی وسائل کو کوئی کمی نہیں ہے۔ ضرورت صرف اس بات کی ہے کہ حکومت زراعت، صنعت، پیداوار، توانائی اور انفراسٹریچکر سمیت معیشت کے تمام شعبوں میں جدید ٹیکنالوجی کو اپنانے کی کوشش کرے کرے تا کہ ان شعبوں میں پائی جانے والی ترقی کی صلاحیتوں کوپوری طرح استعمال میں لا کر قومی ترقی کی رفتار کو تیز کیا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب کہ عالمی سطح پر پیداواری طریقوں اورکاروباری رویوں میں تیزی سے تبدیلی رونما ہو رہی ہے پاکستان جیسے ترقی پذیز ملک کیلئے جدید ٹیکنالوجی کو اپنانا مزید اہمیت اختیار کر گیا ہے کیونکہ ایسا کئے بغیر پاکستان عالمی مقابلے کی دوڑ میں بہت پیچھے رہ جائے گا۔ صدر آئی سی سی آئی یاسر سخی بٹ نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ زراعت، صنعت، پیداوار،توانائی، انجینئرنگ اور صحت سمیت دیگر شعبوں میں استعمال ہونے والی جدید ٹیکنالوجی اور مشینری کی درآمد پر ٹیرف کو کم کرے تا کہ یہ شعبے مناسب قیمت پر مطلوبہ ٹیکنالوجی اور مشینری حاصل کر کے اپنی کارکردگی کو بہتر کر سکیں جس سے کاروبار اور عوام کو فائدہ ہو گا۔ اس کے علاوہ حکومت صنعتی یونٹوں میں سروے کرائے اور جدید ٹیکنالوجی کے حصول کیلئے صنعتی شعبے کو تیکنیکی مہارت اور مشاورت فراہم کرے تا کہ صنعتیں انرجی سیونگ اور بہتر پیداوار جیسے مقاصد حاصل کر سکیں۔ ٓانہوں نے کہا کہ اگر افراط زر اور دوسرے عناصر کو خاطر میں لایا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ پاکستان کی ترقی کی شرح در حقیقت منفی میں جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ شرح نمود کو بہتر کرنے کیلئے حکومت جدید ٹیکنالوجی کے استعمال سمیت تحقیق و ترقی کی سرگرمیوں کی حوصلہ افزائی کرے جس سے ہماری مصنوعات کی قدر میں اضافہ ہو گا اور برآمدات کو بہتر ترقی ملے گی۔انہوں نے مذید کہا کہ پاکستان کو موجودہ اقتصادی چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے 7سے 8فیصد سالانہ شرح ترقی کی ضرورت ہے تا کہ فالتوں پیداوار حاصل کر کے برآمدات کو بڑھایا جا سکے جس سے تجارتی خسارہ کم ہو گا، حکومت کے ریونیو میں اضافہ ہو گا، قرضوں کا بوجھ ہلکا ہو گا اور مہنگائی و غربت میں کمی ہو گی۔ صدر آئی سی سی آئی یاسر سخی بٹ نے کہا کہ پاکستان کے موجودہ اقتصادی مسائل کا بہتر حل ٹیکنالوجی کے میدان میں ترقی حاصل کرنے میں ہی پوشیدہ ہے۔ انہوں نے پبلک اور پرائیویٹ سیکٹرز پر زور دیا کہ وہ ایک دوسرے سے باہمی تعاون کو فروغ دے کر جدید ٹیکنالوجی کے حصول کیلئے کوششیں تیز کریں تا کہ ملک ترقی و خوشحالی کے دیرینہ خواب کو عملی تعبیرپہنا سکے۔

مزید : کامرس