سپیکر قومی اسمبلی کا پنجاب میں نئے صوبے بنانے کیلئے 14رکنی پارلیمانی کمیٹی کا اعلان

سپیکر قومی اسمبلی کا پنجاب میں نئے صوبے بنانے کیلئے 14رکنی پارلیمانی کمیٹی کا ...

 اسلام آباد (آن لائن‘ثنا نیوز ) سپیکر قومی اسمبلی ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے صدارتی ریفرنس کے تحت پنجاب میں دو نئے صوبوں کے قیام سے متعلق سفارشات مرتب کرنے کیلئے 14رکنی پارلیمانی کمیشن قائم کر دیا ہے۔ کمیشن حکومت اتحادیوں اور اپوزیشن جماعتوں کے اراکین پارلیمنٹ پر مشتمل ہے سرائیکی اضلاع ڈیرہ اسمائیل خان اور ٹانک کی نئے صوبے (سرائیکی) میں شمولیت کا معاملہ خطرے میں پڑ گیا ہے۔ کمیشن میں خیبر پختونخوا کے سرائیکی خطے کی نمائندگی نہیں ہے ۔ ڈپٹی سپیکر فیصل کریم کنڈی نے موقف پیش کرنے کے لیے کمیشن میںپیش ہونے کی خواہش کا اظہار کیا ہے ۔ پارلیمانی کمیشن دو ماہ میں رپورٹ مرتب کرنے کا پابند ہے ۔ صدارتی ریفرنس کے تحت کمیشن میں سینیٹ قومی اسمبلی سے 6,6 اراکین شامل ہیں۔ سپیکر پنجاب اسمبلی کی جانب سے دو ارکان کی نامزدگیوں کا انتظار ہے ۔ کمیشن کے قیام کے بارے میں جمعرات کو قومی اسمبلی سیکرٹریٹ سے اعلامیہ جاری کردیا گیا ہے ۔کمیشن میں سینیٹ سے پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما سینیٹر فرحت اللہ بابر، سینیٹر صغریٰ امام ، عوامی نیشنل پارٹی کے پارلیمانی لیڈر سینیٹر حاجی محمد عدیل ، مسلم لیگ(ق) کے رہنما سینیٹر کامل علی آغا، مسلم لیگ(ن) کے رہنما سینیٹر محمد رفیق رجوانہ ، جمعیت علماءاسلام(ف) کے سیکرٹری جنرل سینیٹر مولانا عبدالغفور حیدری ، قومی اسمبلی سے پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما جمشید احمد دستی ، سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی کے صاحبزادے سید علی موسیٰ گیلانی ، عارف عزیز شیخ ، پاکستان مسلم لیگ(ن) کی تہمینہ دولتانہ ، چودھری سعود مجید اور متحدہ قومی موومنٹ کے پارلیمانی لیڈر ڈاکٹر فاروق ستار شامل ہیں۔ اعلامیے کے مطابق سپیکر پنجاب اسمبلی سے دونام موصول ہونے پر ان کوکمیشن میں شامل کردیا جائے گا۔ پاکستان پیپلزپارٹی نے خیبرپختونخوا کے سرائیکی اضلاع ڈیرہ اسماعیل خان اور ٹانک کو بھی نئے صوبے میں شامل کرنے کا اعلان کر رکھا ہے ۔ ڈیرہ اسماعیل خان اورٹانک سے مولانا فضل الرحمان ، فیصل کریم کنڈی اور مولانا عطاءالرحمان کا تعلق ہے ۔تاہم تینوں فاضل اراکین میں سے کوئی بھی کمیشن میں شامل نہیںہے ۔ فیصل کریم کنڈی بحیثیت ڈپٹی سپیکر کسی کمیٹی یا پارلیمانی کمیشن میں شامل نہیںہو سکتے۔سرائیکی خطے کا مقدمہ پیش کرنے کے لئے وہ خود کمیشن کے سامنے پیش ہوں گے۔ ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ اس بارے میں جمشید دستی ، موسی علی گیلانی اور بہاولپور سے پیپلزپارٹی کے رکن عارف عزیز شیخ کو اعتماد میں لیا ہے ۔صدر آصف علی زرداری نے بہاولپور کی صوبائی حیثیت کی بحالی اور جنوبی پنجاب کو نیا ( سرائیکی ) صوبہ بنانے کے لیے کمیشن کو دو ماہ میں حد بندی بارے سفارشات مرتب کرنے کی ذمہ داری دی ہے ۔

مزید : صفحہ اول