کامرہ حملہ میں بھارت اور امریکہ کی خفیہ ایجنسیاں ملوث ہیں، مذہبی جماعتیں

کامرہ حملہ میں بھارت اور امریکہ کی خفیہ ایجنسیاں ملوث ہیں، مذہبی جماعتیں

لاہور(نمائندہ خصوصی)مذہبی جماعتوں نے کامرہ ائےربیس پر دہشت گردوں کے حملے کی شدےد مذمت اوراس پر سخت تشوےش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گردی کی اس واردات میں بھارت و امریکہ کی خفیہ ایجنسیاں ملوث ہیں۔ منظم سازشوں اور منصوبہ بندی کے تحت پاکستان کی اہم تنصیبات اور اداروں کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ جماعت اسلامی کے امےر سےد منور حسن نے اس حوالے سے کہا کہ پاکستان سے غیر ملکی قوتوں کی مداخلت ختم کئے بغیر ملک میں امن قائم نہیں ہو سکتا، کامرہ ایئر بیس پر دہشت گردی کا واقعہ شمالی وزیرستان میں عید کے بعد فوجی آپریشن کے اعلان اور نیٹو سپلائی کی بحالی کا رد عمل ہوسکتا ہے۔ حکومت اور فوج اپنے فیصلوں پر نظر ثانی کریں اور شمالی وزیرستان میں فوجی آپریشن سے باز رہیں ورنہ پورے ملک میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں اضافہ ہوسکتا ہے ۔سید منورحسن نے کہاکہ کراچی مہران ایئر بیس پر حملہ کرنے والے دہشتگرد غیر ملکی تھے اور کامرہ ایئر بیس پر حملے کرنے والے دہشتگرد بھی غیر ملکی بتائے جارہے ہیں۔ جے ےوآئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ پاک فوج اور فضائیہ کی حساس تنصیبات پر حملے کروا کے دنیا پر یہ تاثر دینے کی کوششیں کی جارہی ہیں کہ پاکستان کا ایٹمی پروگرام بھی محفوظ نہیں ہے۔ کامرہ ایئر بیس پر دہشت گردانہ حملہ کے دن ہی امریکی وزیر دفاع لیون پنیٹاکا یہ بیان کہ ” پاکستان نے دہشتگردی پر قابو نہ پایا تو اس کے ایٹمی ہتھیار دہشتگردوں کے ہاتھ لگ سکتے ہیں“امریکیوں کی طرف سے جاری مذموم پروپیگنڈہ کے اسی سلسلہ کی ایک کڑی ہے۔ا ور اس سے یہ بات بھی صاف ظاہر ہوتی ہے کہ ایسی کارروائیاں باقاعدہ طے شدہ منصوبہ بندی کے تحت کی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ دونوں حملوں میں ہمارے قیمتی جہازوں کو نشانہ بنایا گیا اس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں ہے کہ ان واقعات میں ہمارا ازلی دشمن بھارت ہی ملو ث ہے۔ مرکزی جمعےت اہلحدیث کے سربراہ ساجد مےر نے کہا کہ بھارت نے امریکی سرپرستی و خواہش پر پاکستان کو عدم استحکام کاشکار کرنے کے لیے پاکستان میں تخریب کاری کا نیٹ ورک پھیلا رکھاہے جو قبل ازیں پاکستان کے بڑے بڑے شہروں کو دہشتگردی کا نشانہ بنا رہاتھااور اب اس کا ہدف پاکستان کے انتہائی حساس مقامات ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ قومی سلامتی کے ادارے اور سیکورٹی ایجنسیاں دہشتگردی کے ان واقعات میں بھارت کے ملوث ہونے کے واضح ثبوت دے چکے ہیں لیکن حکمران امریکی ناراضگی سے ڈرتے ہوئے بھارت کا نام نہیں لیتے اور معصوم شہریوں کو بھارتی دہشتگردوں کے رحم و کرم پر چھوڑ رکھاہے اور امریکی حکم پر وہ سانپ کو رسی کہہ کر قوم کو دھوکہ دے رہے ہیں۔

مزید : صفحہ آخر