محکمہ ریونیو کی غفلت، ڈیپارٹمنٹ پرموشن کیس کی سماعت نہ ہوسکی

محکمہ ریونیو کی غفلت، ڈیپارٹمنٹ پرموشن کیس کی سماعت نہ ہوسکی

لاہور(اپنے نمائندے سے)محکمہ ریونیو کی ڈسٹرکٹ ایڈمنسٹریشن لاہور کی مبینہ غفلت اورعدم توجہ کے باعث 9سال گزر جانے کے بعد بھی پٹواریوں کی (ڈی پی سی ) ڈیپارٹمنٹ پرموشن کیس کی سماعت نہیں کی جاسکی ہے،ضلع لاہور کی 24قانون گواہوں اور دفتر تحصیل قانگوز کی اسامیوں کے اضافی چارج پٹواریوں کے سپرد کر دیئے گئے ،3سالہ پرموشن کیسز پالیسی کی دھجیاں اڑا کر رکھ دی گئیں ،کمشنر لاہور سے نوٹس لینے کی اپیل کی گئی ہے ،روزنامہ پاکستان کو ملنے والی معلومات کے مطابق صوبائی دارلحکومت لاہور کے محکمہ ریونیو کی 24قانون گواہوں اور تحصیل آفس میں قائم کردہ دفتر قانونگو برانچوں کا ریکارڈ اس وقت اضافی چارج کے ساتھ پٹواریوں کے سپرد کر رکھا ہے اور گزشتہ 9سالوں سے ڈیپارٹمنٹ پرموشن کیس کی سماعت نہیں کی جارہی ہے حالانکہ ضلع لاہور میں قانگوز کی کمی کا مسئلہ شدت اختیار کر چکا ہے جس کی وجہ سے ریونیو ریکارڈ کی 100فیصد پڑتال کے حوالے سے بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ 2007میں آخری مرتبہ ڈی پی سی کے ذریعے پٹواریوں کو ترقی دی گئی تھی اور اس وقت قانگوز کی خالی اسامیوں کے مطابق قانگوز کو چارج سونپا گیا تھا جس کے بعد 3سال اور قانون کے مطابق ڈی پی سی ہونا تھی جو کہ ڈسٹرکٹ ایڈمنسٹریشن کی انتظامی سیٹوں پر براجمان افسران کی مبینہ غفلت اور عدم توجہی کے باعث التواء کا شکار ہوچکی ہیں اور9سال گزر جانے کے باوجود تاحال ڈی پی سی کی سماعت نہیں کی جاسکی جس سے قانون کی بالا دستی کے دعویٰ کرنے والی انتظامیہ خود قانون شکنی کا مظاہرہ کررہی ہے اور 3سالہ ڈی پی سی کا قانون بھی مذاق بن کر رہ گیا ہے ۔بعض پٹواریوں کا کہنا ہے کہ قانون کے مطابق ڈی پی سی کی سماعت کی جانی چاہئے اور انتظامی آفیسر اس پر کارروائی کرتے ہوئے ضلع لاہور میں قانونگوز کی آسامیوں پر قانونگوز کی کمی کو پورا کر سکتے ہے اس حوالے سے کمشنر لاہور عبداللہ خان سنبل سے نوٹس لینے کی اپیل کی گئی ہے ۔

مزید : علاقائی