گوانتا نا موبے جیل سے مزید 15قیدی رہا ہو کر یواے ای روانہ

گوانتا نا موبے جیل سے مزید 15قیدی رہا ہو کر یواے ای روانہ

واشنگٹن (اظہر زمان ، بیورو چیف) گوانتا ناموبے جیل سے پندرہ قیدی رہائی پاکر متحدہ عر ب امارات کے لیے روانہ ہوگئے ہیں۔ پینٹا گون کی اطلاع کے مطابق اوبامہ انتظامیہ نے گزشتہ شام اس کی حتمی منظوری دی جس کے بعد یہ کارروائی کی گئی۔ پہلی مرتبہ اتنی زیادہ تعداد میں ߌک مشت اس جیل کے قیدیوں کو رہا کیا گیا ہے جس کے بعد جیل میں اب صرف 61 قیدی واپس رہ گئے ہیں ۔ رہائی کے فوراً بعد کیلیفورنیا سے ری پبلکن پارٹی کے کانگریس مین اور امور خارجہ کمیٹی کے چیئرمین ایڈ رائس نے اس رہائی پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ اوبامہ انتظامیہ اس جیل کو بند کرنے کی کوششوں کو تیز کرتے ہوئے اپنی ان پالیسیوں کے ذریعے امریکی شہریوں کی جان کو خطرے میں ڈال رہی ہیں۔ انہوں نے اس امر پر تشویش کا اظہار کیا کہ رہا ہونے والے قیدی سخت نظریات والے دہشت گرد ہیں جو باہر نکل کر خطرات پیدا کر سکتے ہیں۔ یاد رہے کہ صدر اوبامہ اس جیل کو مکمل طور پر بند کرنا چاہتے ہیں لیکن کانگریس اس کی راہ میں رکاوٹ ڈال رہی ہے۔ موجودہ رہا ہونے والے قیدیوں میں سے 12 یمنی اور 3 افغانی باشندے ہیں جن کے نام یہ ہیں عبدالمحسن، عبدالرب صالح السبی، عبدالرحمان سلیمان، ناصر قزاز، احمد نصار المہاجری، احمد سید الرضاہی، عبدالقادر المظفری، عبدالعزیز المجاہد، سعید عبداللہ، محمد قامن، ظہر عمر حامس بن ہمدون، حاجی حمیداللہ، مجید محمود، ایوب مرشد علی صالح، عبیداللہ اور بشیر ناصر علی۔ صدر اوبامہ نے جب 2009ء میں اقتدار سنبھالا تھا تو اس وقت گوانتا ناموبے جیل میں کل 242 قیدی تھے جبکہ جیل کے آغاز میں قیدیوں کی تعداد 700 کے قریب تھی۔ پینٹا گون نے کم خطرے والے قیدیوں کو دوسرے ممالک منتقل کرنا شروع کر دیا تھا جس کا مطلب یہ ہوا کہ باقی رہ جانے والے قیدی زیادہ خطرے والی کیٹگری میں آتے ہیں۔ صدر اوبامہ نے سال رواں کے آغاز میں جیل بند کرنے کے اپنے منصوبے کو تازہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ جن قیدیوں کو بیرون ملک روانہ نہیں کیا جا سکے گا انہیں ساؤتھ کیرولینا، کینساس اور کولو ریڈو میں پہلے سے موجود فوجی اڈوں میں منتقل کیا جاسکتا ہے۔ شہری آزادی کی تنظیموں نے صدر اوبامہ کے اس منصوبے کو سراہا تھا۔

مزید : صفحہ اول


loading...