قومی اسمبلی میں مردم شماری ایکٹ ب2011ء میں ترمیم کا بل پیش

قومی اسمبلی میں مردم شماری ایکٹ ب2011ء میں ترمیم کا بل پیش

اسلام آباد( آن لائن ) قومی اسمبلی میں مردم شماری ایکٹ 2011ء میں ترمیم کا بل پیش کردیا گیا ، بل جمہوری وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب شیر پاؤ نے پیش کیا حکومت نے بل کی مخالفت نہیں کی ، ڈپٹی سپیکر نے ایوان کی جانب سے کثرت رائے سے بل منظور کرنے کے بعد قائمہ کمیٹی کو بھجوادیا ۔ منگل کے روز قومی اسمبلی میں مردم شماری ایکٹ میں ترمیم سے متعلق بل پیش کرتے ہوئے رکن اسمبلی آفتاب شیر پاؤ نے کہا کہ ملک میں بسنے والے افراد کی صحیح تعداد معلوم نہ ہونے سے ان کی ضروریات کو پورا کرنا مشکل ہے انہوں نے کہا کہ آخری مردم شماری 1998ء میں ہوئی ہے جس کا مقصد قومی اسمبلی اور صوبائی اسمبلی کے سیٹوں کا تعین کرنا سرکاری ملازمین کی بھرتیوں کا تعین کرنا اور مستقبل کیلئے ترقیاتی منصوبوں کی منصوبہ بندی کرنا ہے انہوں نے کہا کہ موجودہ ایکٹ کے مطابق جب بھی ضرورت ہو تو مردم شماری کرائی جائے اگر دس سالوں تک مردم شماری نہ کرائی جائے تو ملک کے حالات درست کرنا مشکل ہوجاتا ہے انہوں نے کہا کہ ایکٹ میں دو ترامیم لانا چاہتے ہیں کہ ہر دس سال بعد مردم شماری کرائی جائے اور گورننگ باڈی میں چاروں صوبوں کی نمائندگی دی جائے انہوں نے کہا کہ موجودہ افسران کو پانچ سال کیلئے کنٹریکٹ پر لیا گیا ہے جو کہ سپریم کورٹ کے احکام کی توہین ہے انہوں نے کہا کہ چھوٹے صوبوں کو موجودہ گورننگ باڈی پر بہت زیادہ اعتراضات ہیں اٹھارہویں ترمیم کے بعد زیادہ اختیارات صوبوں کے پاس چلے گئے ہیں انہوں نے کہا کہ ادارہ شماریات حکومت کی خواہش کے مطابق چل رہی ہے اورصوبوں کو نظر انداز کیا جارہا ہے اس موقع پر وزیر قانون زاہد حامد نے کہا کہ ادارہ شماریات کی گورننگ باڈی کونسل کے اراکین وفاق مقرر کرتی ہے جس میں اضافہ بھی ہوسکتا ہے انہوں نے کہا کہ ادارہ شماریات حکومت کی مرضی کے مطابق نہیں بلکہ ایمانداری سے کام کررہا ہے ۔ قومی اسمبلی میں وفاقی وزیر برائے پارلیمانی امور شیخ آفتاب احمد نے کہا ہے کہ پی آئی اے کی تباہی اور بربادی میں بڑ ے پردہ نشینوں کے نام آتے ہیں ،اس لئے پردہ ہی رہنے دیں تو مناسب ہوگا‘ ماضی میں پی آئی اے کو بڑی بے دردی سے لوٹا اور تباہ کیا گیا‘ 1999 میں ہماری حکومت کا تختہ الٹا گیا تو پی آئی اے اربوں روپے کے منافع میں تھی 2013 میں دوبارہ اقتدار ملا تو پی آئی اے 58 ارب روپے کے خسارے میں تھی‘ جوں جوں مالیاتی خسارے پر قابو پاتے جائیں گے تو بند کی گئی بین الاقوامی پروازیں بحال کرتے جائیں گے۔ وہ منگل کو ایوان میں ایم کیو ایم کے ارکان کے پی آئی اے کے بعض بین الاقوامی پروازوں کی بندش بارے توجہ دلاؤ نوٹس کا جواب دے رہے تھے۔

مزید : صفحہ اول


loading...