جماعت اسلامی کرپشن کیخلاف 22اگست کو سپریم کورٹ میں پٹیشن دائر کریگی

جماعت اسلامی کرپشن کیخلاف 22اگست کو سپریم کورٹ میں پٹیشن دائر کریگی

پشاور (خصوصی رپورٹ)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ کرپشن کے خلاف جماعت اسلامی 22اگست کو سپریم کورٹ آف پاکستان میں رٹ پٹیشن دائر کرے گی جس میں سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے سیکرٹری جنرل اسد منظور بٹ جماعت اسلامی کے وکیل ہوں گے۔ جماعت اسلامی کے مرکزی میڈیا سیل کے مطابق انہوں نے یہ بات منگل کے روز المرکز اسلامی پشاور میں ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔سراج الحق نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا کہ افغان مہاجرین کے ساتھ نامناسب رویہ ترک کر دے ۔انہوں نے نے کہا کہ عوام کے سامنے اپنا منشور رکھنا اور اپنے مطالبات کے لیے جلسے جلوس کرنا ہر سیاسی جماعت کا حق ہے ۔سراج الحق نے کہا کہ سوئس بینکوں کی رپورٹ کے مطابق وہاں پر پاکستانیوں کے200ارب ڈالر پڑے ہیں اس کی تصدیق وہاں کے وزیر خزانہ نے کی ہے۔انھوں نے کہا حکومت پاکستان نے سوئٹزر لینڈ کی حکومت سے معاہدہ کیا ہے جس کے تحت وہ 2017ء تک حکومت پاکستان کو وہاں کے بینکوں میں پاکستانیوں کے سرمایہ کی تفصیلات سے آگاہ کرے گا،آگے اس پر کیا عمل ہوتا ہے اس کے لیے قیامت تک انتظار کرنا ہو گا۔ انھوں نے کہا کہ پانامہ لیکس میں پوری دنیا کو معلوم ہوا کہ وزیر اعظم اور ان کے خاندان سمیت بہت بڑی تعداد میں لوگوں نے قومی خزانے کے اربوں روپے بیرون ملک لگا رکھے ہیں۔یہ اتنااہم مسئلہ تھا کہ وزیر اعظم نے تین مرتبہ اس پر قوم سے خطاب کیا۔حکومت نے سپریم کورٹ کے رجسٹرار کو1956ء کے ایکٹ کے تحت کمیشن کے قیام کی ہدایت کی جس کو سپریم کورٹ نے واپس کرکے کہا کہ56ء کا قانون دانتوں کے بغیر ہے اور اس کے تحت قائم کردہ کمیشن کا کوئی فائدہ نہ ہوگا۔سپریم کورٹ نے حکومت کو مشورہ دیا کہ اس ایکٹ میں ترمیم کرے اور واضح طور پر سپریم کورٹ کو افراد اور اداروں کے نام بتا کر کرپشن کے خلاف کارروائی کے لیے لکھے۔انھوں نے کہا کہ حکومت نے سپریم کورٹ کی ہدایات اور اپوزیشن کے مطالبات اور اس کے تیار کردہ ٹی او آرز کو نظر انداز کیا اور مذاکرات کومحض وقت ٹالنے کا بہانہ بنایا جس کے بعد ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ اب سپریم کورٹ میں اس کے خلاف رٹ دائر کریں گے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...