عمران کے ساتھ مل کر تحریک چلا سکتے ہیں، جنرل جنجوعہ کو لانا چودھری نثار کی ناکامی ہے،میرا چیلنج ہے پیغام لے کر جانے والے پیپلز پارٹی کے آدمی کا نام بتائیں: خورشید شاہ

عمران کے ساتھ مل کر تحریک چلا سکتے ہیں، جنرل جنجوعہ کو لانا چودھری نثار کی ...
عمران کے ساتھ مل کر تحریک چلا سکتے ہیں، جنرل جنجوعہ کو لانا چودھری نثار کی ناکامی ہے،میرا چیلنج ہے پیغام لے کر جانے والے پیپلز پارٹی کے آدمی کا نام بتائیں: خورشید شاہ

  


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے کہا ہے کہ حکومت ٹی او آرز پر اپنے موقف پر ٹس سے مس نہیں ہوئی ۔ اگر حکومت نے لچک نہ دکھائی تو مذاکرات نہیں ہونگے۔چودھری نثار مجھ سے اس لئے ناراض ہیں کیونکہ میں نے دھرنا ناکام بنایا تھا۔وزیر داخلہ ایک بد حواس آدمی ہیں۔ہم حکومت کے خلاف عمران خان کے ساتھ مل کر تحریک چلا سکتے ہیں۔

جیو نیوز کے پروگرام” کیپٹل ٹاک“ میں گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ چودھری نثار پہلے یہ بتائیں کہ وہ کون بدبخت شخص ہو جو ان کے پاس گیا ہے۔کسی پر الزام لگانے سے کوئی بات سچ ثابت نہیں ہوتی۔ میں ان کو چیلنج کرتا ہوں کہ وہ میڈیا پر اس کا نام بتائیں۔ ان کو تو یہ پتہ نہیں کہ کیا بات کرنی ہے اور کیا نہیں۔ ان کو سیاست کا پتہ ہی نہیں۔خورشید شاہ نے مزید کہا کہ جب نواز شریف پر مشکل دور تھا تو ان کا کیا کردار تھا یہ سب کو معلوم ہے۔جو بندہ اپنا لیڈر جیل میں دیکھ کر گھر جا کر سو جائے اس کی کسی بات کا اعتبار نہیں کیا جاسکتا۔یہ بندہ کیا استعفیٰ دے گا۔ان کا رویہ ہمیشہ سے جمہوریت دشمن رہا ہے۔اسی شخص نے کہا تھا کہ اگر ایک سال میں سسٹم ٹھیک نہ کر سکے تو استعفی دیدیں گے۔انہوں نے کہا کہ گالی دینایا کسی کا گریبان پکڑنا میری سیاست نہیں۔کسی کے ماضی کے بارے میں بات کرنا ہمارا شیوہ نہیں۔ملک میں دہشتگردی ہو رہی ہے کوئٹہ میں وکلا کی کریم ختم ہوگئی لیکن اس شخص کو الزامات کی پڑی ہے۔یہ آدمی ہر ہفتے ٹی وی پر آکر تین چار گھنٹے بولتا ہے لیکن دہشتگردی کیخلاف کوئی بات نہیں کرتا۔ایک سوال کے جواب پر انہوں نے کہا کہ لطیف کھوسہ تو نواز شریف کے بھی وکیل رہے ہیں کیا ایان کا وکیل بننا گناہ ہے وکیل کا تویہ پیشہ ہے۔ایان علی اور بلاول کے ٹکٹ ایک ہی اکاونٹ سے جانے کی بات پر نثار کو نوٹس دے رہے ہیں۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ جہاں تک مجھے علم ہے آرمی چیف ملازمت میں توسیع نہیں لیں گے۔جو لوگ اس بارے میں افواہیں پھیلا رہے ہیں وہ ملک کے دشمن ہیں۔چودھری نثار کی موجودگی میں جنرل جنجوعہ کو لانا ہی ان کی ناکامی ہے۔ہم حکومت کیخلاف ستمبر سے تحریک چلا رہے ہیں۔اس سلسلے میں ہم عوام کے پاس بھی جائینگے اور ریلیاں بھی نکالیں گے۔تحریک انصاف کے ساتھ مل کر جلوس اور ریلیاں نکالنا خارج از امکان نہیں۔

مزید : قومی /اہم خبریں


loading...