سندھ اسمبلی کی قائمہ کمیٹی نے ڈی جی نیب کو پیشی کا نوٹس جاری کردیا

سندھ اسمبلی کی قائمہ کمیٹی نے ڈی جی نیب کو پیشی کا نوٹس جاری کردیا

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ اسمبلی کی استحقاق اورقواعد و ضوابط سے متعلق قائمہ کمیٹی نے ڈی جی نیب سندھ کو24اگست کو کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کے لیے نوٹس جاری کردیا ہے ۔کمیٹی کے چیئرمین کا کہنا ہے کہ ہم الطاف باوانی کو ارکان سندھ اسمبل کی نیتوں سے متعلق ریمارکس پر وضاحت کا موقع دینا چاہتے ہیں ۔معافی مانگنے کے طریقے ہوتے ہیں جو ڈی جی نیب نے اختیار نہیں کیے ہیں ۔سندھ اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے استحقاق اور قواعد و ضوابط کا اجلاس بدھ کو چیئرمین نثار احمد کھوڑو کی صدارت میں منعقد ہوا ۔اجلاس میں ڈی جی نیب سندھ الطاف باوانی نے شرکت نہیں کی ۔سیکرٹری اسمبلی نے کمیٹی کو آگاہ کیا کہ ڈی جی نیب عدالتی مقدمات کی وجہ سے میٹنگ میں مصروف ہیں اس لیے وہ اجلاس میں شرکت نہیں کرسکتے ہیں ،جس پر نثار احمد کھوڑو نے کہا کہ اگر ڈی جی نیب عدالت میں گئے ہیں تو پھر وہ 2بجے کمیٹی میں پیش ہوسکتے تھے ۔ڈی جی نیب کی کمیٹی کے سامنے عدم شرکت مناسب عمل نہیں ہے ۔کمیٹی کسی بھی افسر کو طلب کرسکتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ الطاف باوانی نے نجی ٹی وی ارکا ن سندھ اسمبلی کی نیتوں سے متعلق ریمارکس دیئے تھے ہم ان کو وضاحت کا موقع دینا چاہتے ہیں ۔ معافی مانگنے کے طریقے ہوتے ہیں جو ڈی جی نیب نے اختیار نہیں کئے ہیں۔وزیر قانون سندھ ضیاء الحسن لنجار نے کہا کہ ڈی جی نیب اگر عدالتی امور میں مصروف تھے تو انہیں تحریری طور پر کمیٹی کو آگاہ کرنا چاہیے تھے ۔چیئرمین قائمہ کمیٹی نثار کھوڑو نے کہا کہ ڈی جی نیب کو اسمبلی کی کمیٹی میں شرکت کرنے کے لئے نوٹس دیا جائے۔نوٹس کے باوجود ڈی جی نیب نے اجلاس میں شرکت نہیں کی تو کمیٹی کوئی فیصلہ کرے گی۔کمیٹی نے ڈی جی نیب الطاف باوانی کو کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کے لئے نوٹس جاری کرتے ہوئے آئندہ اجلاس 24اگست کو سہہ پہر 3بجے طلب کرلیا ہے ۔اجلاس کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے نثار احمد کھوڑو نے کہا کہ سندھ اسمبلی کو احتساب کا قانون بنانے کا اختیار حاصل ہے۔ کسی بھی قانون کے خلاف اپوزیشن جماعتوں سمیت ہر ایک کو عدالت جانے کا حق ہے۔ عدالت میں سندھ کے احتساب قانون پر اپوزیشن کی پٹیشن پر حکومت کے بھی دلائل سنے جائیں گے۔دیکھا جائے گا کے عدالت اسمبلی کے بنائے گئے قانون پر کیا فیصلہ کرتی ہے ۔معاملہ عدالت میں ہے ۔عدالت کا فیصلہ آنے کے بعد ہی اس پر کچھ کہا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ عدالت کا اسمبلی ارکان کی فہرست طلب کرنا ڈرانے کا حربہ نہیں ہے۔ عدالت اسمبلی کے قوانین سے متعلق تفصیلات طلب کرسکتی ہے۔سندھ کے احتساب قانون پر عدالت کے فیصلے سے قبل کچھ کہنا قبل از وقت ہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول