وزیر اعلیٰ کی کمشنر پشاور کو ڈینگی کی افزائش اور پھیلاؤ کو روکنے کیلئے ٹھوس و عملی اقدامات کی ہدایت

وزیر اعلیٰ کی کمشنر پشاور کو ڈینگی کی افزائش اور پھیلاؤ کو روکنے کیلئے ٹھوس ...

پشاور( سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے مزدوروں کیلئے مختص کالونیوں میں انہیں مالکانہ حقوق پر پلاٹ کی الاٹمنٹ کی منظوری دیتے ہوئے ورکر ویلفیئر بورڈ کو ہدایت کی کہ وہ جلد ازجلد قانونی طریقہ کار کے مطابق مزدوروں کو مالکانہ حقوق پر پلاٹ کی الاٹمنٹ کا طریقہ کار وضع کریں اور الاٹمنٹ کا عمل شروع کریں۔ انہوں نے ورکرز ویلفیئر بورڈ کے سکولوں میں اساتذہ کی حاضری کویقینی بنانے کیلئے مانیٹرنگ اور بائیو میٹرک سسٹم فعال بنانے، ٹیچر ٹریننگ کا انتظام ، رزلٹ پر مبنی پروموشن کا قانون متعارف کرانے کے علاوہ سکولوں میں اساتذہ کی مستقل بنیادوں پر تعیناتی کی ہدایات جاری کیں اور خبردار کیا کہ ورکرز ویلفیئر بورڈ کے ورکنگ میں شفافیت پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گااور بورڈ سے کرپشن اور بدعنوانی کا مکمل خاتمہ کیا جائے گا۔ ۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ مزدوروں کے تعلیمی ، سکالرشپس اور دیگر مسائل کے حل کیلئے وفاق کے ساتھ باقاعدہ ایک اجلاس کا اہتمام کیا جائے گاجس میں مزدوروں کے نمائندے بھی شامل ہوں گے ۔ وزیراعلیٰ نے ورکر ز ویلفیئر بورڈ کے زیر انتظام سکولوں کی حالت بہتر کرنے کے احکامات بھی جاری کئے اور اس سلسلے میں محکمہ تعلیم خیبرپختونخوا سے رہنمائی لینے کی ہدایت جاری کی ۔ وہ وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں متحد ہ لیبر فیڈریشن کے 13 رکنی وفد سے ملاقات کر رہے تھے ۔ اس موقع پر سیکرٹری لیبر ، سیکرٹری ورکر ویلفیئر بورڈ اور دیگر متعلقہ حکام بھی موجود تھے ۔اجلاس میں متحدہ لیبر فیڈریشن کے صدر نے وزیراعلیٰ کو مزدوروں کے مسائل سے آگاہ کیا۔ وزیراعلیٰ کو بتایا گیا کہ وفاق کی طرف سے فنڈز کی بند ش کی وجہ سے مزدوروں کے بچے سکالرشپس حاصل کرنے ،تعلیمی اور دیگر مسائل سے دوچار ہیں جس پر وزیراعلیٰ نے انہیں یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ وفاقی حکومت اور وفاقی وزیر خزانہ سے فنڈ ریلیز کرنے کے لیے ہنگامی بنیاد پر رابطہ کرونگا تاکہ بورڈ میں مزدوروں کے زیر التوا جہیز گرانٹ، فوتگی گرانٹ، سکالرشپ، ٹرانسپورٹ، کتابیں اور یونیفارم کی مد میں ادائیگی ہوسکیں اور ملازمین کی تنخواہوں کی بروقت ادائیگی ممکن ہوسکے۔ وزیراعلیٰ نے صوبے کے مزدور طبقے کو مالکانہ حقوق اور پلاٹ کی الاٹمنٹ کی منظوری بھی دی اور ورکر ویلفیئر بورڈ کو سختی سے ہدایت کی کہ وہ اس سلسلے میں قانونی طریقہ کار کے مطابق کام شروع کرے اور آئندہ ہفتے رپورٹ پیش کرے ۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ مزدور معاشی ترقی میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں ۔کے پی چائنا اکنامک پلان کے زیر اہتمام بڑے، چھوٹے اور درمیانے پیمانے پر سرمایہ کاری کا اجراء ہونے جارہا ہے اور اس سلسلے میں صوبائی حکومت نے صوبے کی ترقی میں حائل تمام رکاوٹیں دور کر دی گئی ہیں اور صوبے کی صنعتی ترقی کیلئے پالیسیاں دی گئی ہیں جس سے صوبہ معاشی طور پر مستحکم ہو جائے گا۔ انہوں نے اس موقع پر ورکر ویلفیئر بورڈ کو ہدایت کی کہ وہ بورڈ کے زیر انتظام سکولوں کو بہتر بنانے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کریں ۔ مانیٹرنگ اور بائیو میٹرک سسٹم فعال بنایا جائے ۔ٹیچرز ٹریننگ کا انتظام کریں اور اس سلسلے میں محکمہ تعلیم خیبرپختونخواسے مدد لی جائے تاکہ مزدوروں کے بچے معیاری تعلیم حاصل کرسکیں۔ وزیراعلیٰ نے بورڈ کو سکولوں میں رزلٹ پر مبنی پرومووشن قانون متعارف کرانے کے علاوہ سکولوں میں اساتذہ کی مستقل بنیادوں پر تعیناتی کا طریقہ کار وضع کرنے کی ہدایت کی ۔ پرویز خٹک نے ورکر ویلفیئر بورڈ کو ہدایت کی کہ صوبے کے مزدور طبقے کو جتنا ممکن ہو فائدہ پہنچائیں اور اس سلسلے میں حکومت بورڈ کی پوری معاونت کرے گی ۔ متحدہ لیبر فیڈریشن نے وزیراعلیٰ کو کڈنی ہسپتال میں مزدوروں کا کوٹہ ختم کرنے کے حوالے سے آگاہ کیا۔ وزیراعلیٰ کو بتایا گیا کہ کڈنی ہسپتال میں مزدوروں کے علاج معالجے کیلئے معاہدے کے تحت کوٹہ مختص تھا جو پچھلی حکومت نے ختم کرایا ہے۔وزیراعلیٰ نے انہیں یقین دہانی کرائی کہ اس مسئلے کو حل کردیاجائے گا۔ فیڈریشن کے قائدین نے وزیر اعلیٰ کی مسائل کے حل میں خصوصی دلچسپی کو سراہا اور اُن کا شکریہ ادا کرنے کے ساتھ ساتھ 21 اگست کو مسائل کے حل کے لیے دھرنا دینے کا فیصلہ واپس لے لیا۔

پشاور( سٹاف رپورٹر)خیبر پختونخوا کے وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے ایوب میڈیکل کالج کے بورڈآف گورنرز کی کارکردگی میں مزید فعالیت لانے کے لئے اسکی ازسر نو تشکیل کی ہدایت کی ۔ انہوں نے پشاور میں ڈینگی کے پھیلاؤ کا سختی سے نوٹس لیتے ہوئے کمشنر پشاور کو ہدایت کی کہ وہ اس سلسلے میں ڈسٹرکٹ ناظم اور تحصیل ناظم اور بلدیاتی نمائندوں کو اعتماد میں لے کر ڈینگی کی افزائش اور پھیلاؤ کو روکنے کیلئے فوری طور پر عملی اقدامات اٹھائیں ۔ وہ ایوب میڈیکل کالج کے بورڈآف گورنرز کے اجلاس کی وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ میں صدارت کر رہے تھے۔ اجلاس میں سینئر صوبائی وزیر شہرام ترکئی، صوبائی وزیرمشتاق غنی ، وزیراعلیٰ کے مشیر قلندر لودھی، ایم این اے ڈاکٹر اظہر جدون ، سٹریٹیجک سپورٹ یونٹ کے سربراہ صاحبزادہ سعید اور صوبائی سیکرٹری صحت موجود تھے۔ وزیر اعلیٰ نے ایوب میڈیکل کمپلیکس میں بدعنوانی کے حوالے سے انکواری رپورٹ کو جلد از جلدپیش کرنے کی بھی ہدایت کی تاکہ ذمہ داران کے خلاف سخت تادیبی کاروائی کی جائے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ کوئی بھی قانون سے بالا تر نہیں ہے اگر کسی نے کرپشن کی ہے تو اس کو سزا ملے گی۔ اجلاس نے بورڈ کو فعال بنانے کے لئے کئی ایک تجاویز سے اتفاق کیا گیا۔ وزیر اعلیٰ نے پشاورمیں خاص کر تہکال کے علاقے میں ڈینگی کی افزائش اور پھیلاؤ کو روکنے کے لئے ہنگامی اقدامات کی ہدایت کی۔ وزیراعلیٰ نے محکمہ صحت کو بھی ہدایت کی کہ ڈینگی سے متاثرہ افراد کوعلاج معالجے کی بہترین سہولیات فراہم کی جائیں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ اس سلسلے میں باقاعدہ طور پر فالواپ میٹنگز کا انعقاد کیا جائے تاکہ ایک واضح صورت حال کے پیش نظرعملی اقدامات کو یقینی بنایا جائے۔ وزیر اعلیٰ نے عوام سے بھی اپیل کی کہ وہ اپنے ارد گرد کے ماحول کو صاف ستھرا رکھیں اور پانی کو کھڑا نہ ہونے دیں اور اسکے ٹھہراؤ کا فوری طور پر خاتمہ کریں۔انہوں نے عوامی شعور مہم تیز کرنے کی بھی ہدایت کی تاکہ ڈینگی کا خاتمہ اور اس سے پیدا ہونے والی صورت حال کی مؤثر روک تھام کی جا سکے ۔فیڈریشن کے قائدین نے وزیر اعلیٰ کی مسائل کے حل میں خصوصی دلچسپی کو سراہا اور اُن کا شکریہ ادا کرنے کے ساتھ ساتھ 21 اگست کو مسائل کے حل کے لیے دھرنا دینے کا فیصلہ واپس لے لیا۔ َِِ<><><><><><><><>

پشاور( سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے مانیٹرنگ اینڈ ایوالویشن کے اعلیٰ حکام سے صوبے میں جاری ترقیاتی وفلاحی منصوبوں میں مطلوبہ معیار کی خلاف ورزی اور کمزوریوں کی مکمل فہرست طلب کی ہے انہوں نے صوبہ بھر کے سکولوں میں فرنیچر کی فراہمی کی بھی اصل صورتحال رپورٹ کرنے کی ہدایت کی وہ وزیراعلیٰ سیکرٹریت پشاور میں مانیٹرنگ اینڈ ایوالویشن ڈیپارٹمنٹ کی پراگرس کے حوالے سے اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔ ایم پی اے میاں خلیق الرحمان، سیکرٹری پی اینڈ ڈی اور متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔ ڈائریکٹر جنرل مانیٹرنگ اینڈ ایوالویشن نے اجلاس میں 2015-16 کی سالانہ رپورٹ سمیت مجموعی پیش رفت سے آگاہ کیا۔ انہوں نے اجلاس کو ایم اینڈ ای کے مینڈیٹ، رپورٹنگ حکام کے طریق کار، ایم اینڈ ای کی ضرورت و اہمیت ، ڈویلپمنٹ پراجیکٹ مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم اور مستقبل کے لائحہ عمل کے حوالے سے بریفنگ بھی دی ۔وزیراعلیٰ نے مانیٹرنگ اینڈ ایوالویشن کی تاحال پراگرس پر اطمینان کا اظہار کیا ۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ مانیٹرنگ اور ایوالویشن کا بنیادی مقصد یہی ہے کہ عوامی مفاد کے حکومتی منصوبوں اور خدمات کی فراہمی کے اقدامات پر حکومتی وژن کے عین مطابق عمل درآمد یقینی بنایا جا سکے۔ وسائل کا نتیجہ خیز استعمال یقینی بنانے کیلئے مانیٹرنگ ناگزیر ہے ان کی حکومت منصوبوں میں غیر شفافیت، خدمات کی فراہمی کے عمل میں غفلت اور عوامی مفاد کی سرگرمیوں میں بے قاعدگیوں کی متحمل ہے اور نہ اس کی اجازت دیگی ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کے اصلاحاتی اور ترقیاتی اقدامات کا مرکزومحور غریب عوام ہے۔ عوامی وسائل عوام کی فلاح و بہبود میں شفاف طریقے سے استعمال ہونے چاہئے تاکہ عام آدمی کو درپیش مشکلات کا ازالہ ہوسکے وزیراعلیٰ نے خراب چیزوں اور عوامی مفاد کے منصوبوں میں غلط کاریوں کی فہرست طلب کی اور ایم اینڈ ای کے سٹاف کی پرفارمنس مینجمنٹ سمیت مستقبل کے لائحہ عمل کے تحت اہم امور کی منظوری دی۔

مزید : کراچی صفحہ اول