21اگست تک ہڑتال جاری رکھنے، توہین عدالت کیس میں پیش نہ ہونیکا فیصلہ برقرار

21اگست تک ہڑتال جاری رکھنے، توہین عدالت کیس میں پیش نہ ہونیکا فیصلہ برقرار

ملتان (خبر نگار خصو صی) ہائیکورٹ وڈسٹرکٹ بارایسوسی ایشن ملتان کے مشترکہ اجلاس میں 21 اگست تک مکمل ہڑتال جاری رکھنے اورتوہین عدالت کیس میں پیش نہ ہونے کے فیصلے پر قائم رہنے کا فیصلہ کیاگیاہے جبکہ قبل ازیں ہڑتال کے فیصلے میں نرمی پر تنازعہ بھی پیداہوا۔ اس ضمن میں گزشتہ روز23 ویں دن بھی ہائیکورٹ وڈسٹرکٹ بارایسوسی ایشن ملتان کی جانب سے مکمل عدالتی بائیکاٹ کیاگیا تاہم بعض وکلاء عدالتوں میں پیش ہوتے رہے ہیں۔قبل ازیں ہائیکورٹ بار میں منعقدہ مشترکہ اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے صدرہائیکورٹ بارشیر زمان قریشی نے کہاہے کالے کوٹ کی وجہ سے ہماری عزت ہے اوریہ تحریک ہرصورت میں جاری رہے گی کیونکہ وکلاء اوراس کالے کوٹ نے جتنی عزت دی ہے اس کا کوئی نعم البدل نہیں ہے اوراس سے غداری بھی نہیں کرسکتے ہیں۔ انھوں نے کہاکہ جوطاقتیں وکلاء کو دباناچاہتی ہیں وہ اس میں کسی صورت کامیاب نہیں ہوں گی چاہے انھیں گرفتارہی کیوں نہیں کرلیاجائے۔انھوں نے کہا کہ وہ توہین عدالت کیس میں کسی صورٹ پیش نہیں ہوں گے اورملتان کے وکلاء کی لیگل کمیٹی تشکیل دی جائے گی جوفیصلہ کریگی نیزوکلاء کاز کے لئے وکلاء کے تمام گروپس اکٹھے ہیں۔ قبل ازیں خطاب کرتے ہوئے صدرڈسٹرکٹ بارایم یوسف زبیرنے کہاہے کہ بارسے یکجہتی کا اظہار کرنیوالی تمام بارایسوسی ایشنز کے شکرگذارہیں اورصرف اسی اتحاد کی بدولت کامیابی حاصل کر سکتے ہیں اورممبران سے حاصل شدہ تجاویز کی روشنی میں ہی لائحہ عمل طے کیاجائے گا۔ ممبر پنجاب بارکونسل خواجہ قیصربٹ نے کہاکہ وکلاء عزت دو اورعزت لوکی پالیسی پر عمل پیراہیں اورمصالحت سے بھی یہ معاملہ حل کرنے کی کوشش کی گئی ہے لیکن اسلام آبادسے بھی مایوس لوٹے ہیں تاہم اب کسی ایسی کمیٹی میں پیش نہیں ہوں گے جس میں صدرہائیکورٹ باربہاولپور یا بینچ کاکوئی نمائندہ موجودہوگااورپنجاب بارکونسل کی قراردادچیف جسٹس لاہورہائیکورٹ کو بھجوائی جائیگی جبکہ ہڑتال فوری نوعیت کے مقدمات کی سماعت کے بعدکی جائے۔ممبرپنجاب بارکونسل چوہدری داؤداحمدوینس نے کہاکہ ناراض وکلاء کومنایاجائے تاکہ ہمارے درمیان سازش کا بیج نہ بویاجاسکے اوروکلاء کاز کے لئے تمام وکلاء عدالتوں میں پیش نہیں ہوں کیونکہ اس سے ہم کمزورثابت ہوں گے۔سابق صدرہائیکورٹ بارمحمود اشرف خان نے کہاکہ چیف جسٹس پاکستان نے ملتان بینچ کو بند کرنے پرآئین کے آرٹیکل 6 کی خلاف ورزی پر کارروائی کی درخواست موسم گرماکی تعطیلات کے بعدسماعت کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے نیز چیف جسٹس پاکستان کو وکلاء نے بارکے خلاف کی گئی تمام سازشوں اورکارروائیوں سے آگاہ کرنے کے ساتھ سرکاری ایجنسیوں کی جانب سے صدربارکو دھمکیاں دینے بارے بھی آگاہ کردیاگیاہے اور وکلاء کے خلاف کارروائی کرکے ایک مثال بنانے کے عمل کو بھی نہیں ہونے دیں گے اور10 ہزاروکلاء کے نمائندے کوکسی کی اناکی بھینٹ نہیں چڑھنے دیں گے۔سابق وائس چیئرمین پنجاب بار کونسل رمضان خالدجوئیہ نے کہاکہ 21 اگست تک مکمل عدالتی بائیکاٹ کیاجائے اوراس مسلۂ پر آل پاکستان کنونشن طلب کیاجائے۔قبل ازیں اجلاس سے سا بق صدرڈی جی خان باربہرام خان بزدار، سابق جنرل سیکرٹری ڈسٹرکٹ بارملتان چوہدری محمدافضل جٹ،سابق جنرل سیکرٹری خانیوال بارسیدجوادنقوی،سابق جنرل سیکرٹری میلسی بار چوہدری شفقت،نشیدعارف گوندل نے بھی خطاب کیاہے۔دریں اثناء صدرہائیکورٹ بارکی جانب سے روزانہ فوری نوعیت کے مقدمات کی سماعت کے بعد ہڑتال کرنے کا اعلان کیاگیاتاہم وکلاء کی جانب سے بعض وکلاء کی جانب سے مخالفت اورتکرارکے بعد 21 اگست تک مکمل ہڑتال برقراررکھنے کا فیصلہ کیاگیاہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر