ناموس رسالت ؐ کے تحفظ کیلئے دو ارب مسلمان یکسو ہیں،قاضی محمود

ناموس رسالت ؐ کے تحفظ کیلئے دو ارب مسلمان یکسو ہیں،قاضی محمود

مظفرآباد (بیورورپورٹ)ناموس رسالت ؐ کے تحفظ کیلئے دو ارب مسلمان یکسو ہیں ۔آج جمعہ المبارک کو ملک بھر میں یوم تحفظ ناموس رسالتﷺ کے طور پر منایا جائے گا ۔امریکہ کی طرف سے توہین رسالت کرنے والوں کی سرپرستی کرنا اور ترکی اور پاکستان کے خلاف نارواں پابندیاں لگانا قابل مذمت ہے۔ھالینڈ کی پارلیمنٹ کی طر ف سے توھین رسالت کی سرپرستی بد ترین دھشت گردی ہے ۔ پاکستان اسلام کے نام پر بنا اور اسلام ہی اسکے تحفظ و استحکام کاضامن ہو گا ۔تحریک آزادی نے قربانیاں دینے والے قوم کے حقیقی ہیروں ہیں۔علماء کرام اور دینی مدارس نے تحریک آزادی میں ہر اول دستے کا کردار ادا کیا ۔۱۴ اگست ۱۹۴۷ کو کراچی میں قائد اعظم محمد علی جناح نے جمیعت علماء اسلام کے بانی امیر شیخ الاسلام علامہ شبیر احمد عثمانی اور علامہ ظفر احمد عثمانی تلاوت قرآن کے بعد سبز ہلالی پر چم لہرانے کی تقریب میں پرچم لہرانے کے لیے منتخب کر کے علماء کرام اور مدارس کی خدمات کا عملی طور پر اعتراف کیا ۔تحفظ و استحکام پاکستان کے لیے لاکھوں علماء اپنے اکابرین کے نقشے قدم پر چل کر ہر قسم کی قربانی دینے کے لیے تیار ہیں ۔مقبوضہ کشمیر کے عوام آزاد کی اسی تحریک کی تکمیل کے لیے قربانیاں دے رہے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار آل جموں کشمیر جے یو آئی کے امیر مولانا قاضی محمود الحسن اشرف نے اے جے کے جے یو آئی و سواد اعظم اہل سنت والجماعت کی طرف سے ہفتہ تحفظ و استحکام پاکستان کے حوالہ سے منعقدہ اجتماعات سینٹرل پریس کلب مظفراباد ،دار العلوم قاسمیہ جامعہ مسجد خالد بن ولید،طارق آباد ،چہلہ گلشن کالونی اور سنگڑی میرا میں خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر اے جے کے جے یو آئی کے مر کزی نائب امیرمولانا محمد امین ،قاری ظریف عباسی، جنرل سیکرٹری مولانا عبد المالک ایڈوکیٹ ،مفتی محمد اختر مرکزی ناظم اطلاعات و نشریات ،مولانا فضل الرحمن ،مولانا مفتی اختر سمیت دیگر دینی و سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں نے خطاب کیا۔انھوں نے کہا مدینہ منورہ کی اسلامی ریاست کے بعد اسلامی جمھوریہ پاکستان روئے زمین پر پہلی اسلامی ریاست ہے جو کلمہ کی بنیاد پر قائم کی گئی اور جس کے لیے لاکھوں مسلمانوں نے جام شہادت نوش کیا اور گھروں سے بے گھر ہوئے ۔انھوں نے کہا مسلمان یوم آزادی کے موقع پر تشکر ادا کرتے ہیں اور تشکر کے لیے جناب نبی اکرم ﷺ اور انبیا ء کی سیرت ہمارے لیے بہترین نمونہ ہے ۔انھوں نے کہا اسلامی حکومت میں امیر اور غریب گورے اور کالے عربی اور عجمی میں کوئی فرق نہیں ۔پاکستان کا تحفظ اور استحکام کے لیے حکمران خلفاء راشدین کی سیرت سے رہنمائی حاصل کریں ۔انھوں نے کہا حکومت آزاد کشمیر کی طرف سے کشمیر کے حوالہ سے اس وقت تک کوئی اجتماعی مشاورت نہیں کی گئی جب کہ آئے روز بھارت کی طرف سے مقبوضہ کشمیر میں عسکری دہشت گردی کے زریعہ کشمیریوں کی نسل کشی کا سلسلہ جاری ہے ۔انھوں نے کہا کشمیری عوام پر ظلم و ستم کے لیے بھارت کی طرف سے آٹھ لاکھ فوجی کشمیر میں مامور کیے گئے ہیں جو نہتے عوام پر ظلم کے پہاڑ توڑ رہے ہیں ۔حکومت پاکستان کو چاہیے وہ کم از کم چار لاکھ فوجی کشمیر کے دفاع کے لیے مامور کرے۔انھوں نے کہا وزیر اعظم آزاد کشمیر کو آزاد کشمیر پر توجہ دینی چاہیے اور مشاورت کے بغیر کام کرنے کے بجائے پارلیمانی پارٹی اور اتحادیوں کو اعتماد میں لے کر کام کر نا چاھیے۔انکی پارلیمانی پارٹی سمیت بھت سے اتحادی ان سے مطمئن نہیں ہیں ۔انھوں نے کہا مظفراباد میں حکومتی نوٹفیکیشن کے باوجود ختم نبوت چوک کے بورڈ اکھاڑے گئے ہیں جس پر انتظامیہ کی طر ف سے کوئی کاروائی نہیں کی گئی جس سے قادیانیوں کے اثرات کا اندازہ لگانہ مشکل نہیں ہے ۔انھوں نے کہا اے جے کے جے یو آئی اور سواد اعظم اہل سنت و الجماعت آزاد کشمیر کی طرف سے ریاست کی تمام دینی قوتوں سے درخواست ہے کہ وہ ریاست میں عقیدہ ختم نبوت ،ناموس رسالت ،ناموس صحابہ و اہل بیت اسلامی اقدارو دینی مدارس کے تحفظ کے لیے اپنا کردار ادا کریں ۔جے یو آ ئی کی مجلس عاملہ نے اپنے اجلاس میں ماہ ذولحجہ کے پہلے عشرہ میں فضائل عید الاضحی و قربانی اور اسوہ ابراھیمی جبکہ دوسرے عشرہ میں شہادت سید نا عثمان ابن عفان ،تیسرے عشرہ میں پانچ محرم الحرام تک شہادت سیدنا فاروق اعظم ،چھ محرم الحرام سے پندرہ محرم الحرام تک شہادت شہدا ئے کربلا اور حضرات حسنین کریمین کی سیرت و کردار کی روشنی میں خطبات جمعہ اور دینی اجتماعات کے عنوان کے طور پر طہ کیے ہیں ۔جبکہ یکم ستمبر تا سات ستمبر ہفتہ تحفظ ختم نبوت اور ناموس رسالت ﷺ کے طور پر جبکہ بیس اکتوبر تا ستائیس اکتوبر ہفتہ آزادی کشمیر کے طور پر منایا جائے گا ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر