صدر ٹرمپ کا صورتحال سنبھالنے کیلئے عمران خان کو فون، مودی کو پاکستان سے مذاکرات کا مشورہ

  صدر ٹرمپ کا صورتحال سنبھالنے کیلئے عمران خان کو فون، مودی کو پاکستان سے ...

 واشنگٹن(اظہر زمان، خصوصی رپورٹ) امریکی میڈیا پر کشمیر کے بارے میں پاکستانی موقف کو نمایاں ڈسپلے مل رہا ہے۔ اس دوران بگڑتی ہوئی صورت حال کو سنبھالا دینے کیلئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وزیراعظم عمران خان کو ٹیلی فون کر کے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر پر کشیدگی کم کرنے کیلئے پاکستان اور بھارت دونوں آپس میں مذاکرات کریں۔ امریکی ترجمان ہوگن گڈلی نے بتایا کہ امریکہ اور پاکستان کے سربراہوں نے اس موقع پر دونوں ملکوں کے درمیان فروغ پذیر تعلقات کے قیام کے بعد مزید پیش رفت کرنے پر بھی بات چیت کی۔ انہوں نے حال ہی میں واشنگٹن میں دونوں لیڈروں کے درمیان ہونے والے سربراہ مذاکرات میں پیدا ہونے والے حوصلہ افزاء ماحول کو جاری رکھنے پر بھی اتفاق کیا۔ وائٹ ہاؤس ذرائع کے مطابق صدر ٹرمپ نے وزیراعظم نریندر مودی کو بھی کشیدگی کم کرنے کیلئے پاکستان سے مذاکرات کرنے کا مشورہ دیا ہے۔ واشنگٹن میں پاکستانی سفیر ڈاکٹر اسد مجید خان نے نیویارک ٹائمز کے ایڈیٹوریل بورڈ کو انٹرویو دیتے ہوئے بتایا تھا کہ موجودہ کشیدگی کے باعث پاکستان افغان سرحد پر متعین اپنی فوج کو بھارت کے ساتھ بارر پر پوزیشن سنبھالنے پر مجبور ہو گا۔ اس کا نتیجہ یہ نکلے گا کہ پاکستان افغانستان کے بارے میں مناسب کردار ادا کرنے سے قاصر ہوگا جس کی وجہ سے افغانستان کے امن مذاکرات متاثر ہو سکتے ہیں۔ معروف امریکی جریدے ”ٹائم“ نے اپنی تازہ اشاعت میں اپنے ایک مضمون میں لکھا ہے کہ بھارت نے کشمیر شاید حاصل کر لیا ہے لیکن اپنے اقدام سے کشمیریوں کو کھو دیا ہے۔ لگتا ہے بھارت نے یہ کارروائی کر کے صدر ٹرمپ کے اس عزم کا جواب دیا ہے کہ وہ کشمیر کے مسئلے پر پاکستان اور بھارت کے درمیان ثالث یا مصالحت کار کا کردار ادا کرنے کو تیار ہیں۔ معروف امریکی نیوز چینل سی این این نے کشمیر کی صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان کشمیر کے متنازعہ علاقے کے بارے میں اپنے موقف پر قائم ہے اور وہ اس سلسلے میں آخری حد تک مقابلہ کرنے کو تیار ہے۔ چینل نے وزیراعظم عمران خان کے اس بیان کا حوالہ دیا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے کشمیر کی حیثیت تبدیل کر کے ”سٹریٹجک غلطی“ کی ہے۔ واشنگٹن پوسٹ نے اپنی تازہ اشاعت میں لکھا ہے کہ بھارت نے کشمیر کی حیثیت بدل کر ایک بہت بڑا رسک لیا ہے تاہم اس پر پاکستان کے سخت ردعمل کا بھارت کو یہ فائدہ پہنچا ہے کہ اس نے اس کو بہانہ بنا کر کشمیریوں کو لاک ڈاؤن کر دیا ہے۔ 

ٹرمپ فون

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ  مودی کی قیادت میں ہندوتوا حربے مقبوضہ کشمیر میں بری طرح ناکام ہوں گے اور ایسے اوچھے ہتھکنڈوں سے کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو کسی صورت بھی دبایا نہیں جا سکتا۔وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ فاشسٹ ہندو برتری کے غرور میں مبتلا مودی حکومت کو معلوم ہونا چاہیے کہ فوجوں، جنگجوؤں اور دہشت گردوں کو طاقتور فورسز سے شکست دی جا سکتی ہے لیکن تاریخ بتاتی ہے کہ جب ایک قوم اپنی آزادی کیلئے متحد ہو جائے تو نہ وہ موت سے ڈرتی ہے اور نہ ہی دنیا کی کوئی طاقت ایسی قوم کو منزل کے حصول سے روک سکتی ہے۔

عمران خان

مزید : صفحہ اول


loading...