نشتر،نوکری پر بحالی کیلئے مبینہ رشوت لینے  پر شہری کی اینٹی کرپشن میں درخواست  سپرنٹنڈنٹ کیخلاف کارروائی کا مطالبہ

    نشتر،نوکری پر بحالی کیلئے مبینہ رشوت لینے  پر شہری کی اینٹی کرپشن میں ...

  

 ملتان (وقائع نگار) نشتر میڈیکل یونیورسٹی کے سپرنٹینڈنٹ نے نوکری سے برخاست شدہ چوکیدار کو بحال کرنے کیلئے 1 لاکھ ستر ہزار روپے ہتھیا لئے۔واپسی کے تقاضے پر جان سے مارنے کی دھمکیاں دینا شرو ع۔جبکہ متاثرہ شخص نے انصاف نا ملنے پر محکمہ  اینٹی کرپشن(بقیہ نمبر10صفحہ6پر)

 ملتان سے رابط کرلیا ہے۔اینٹی کرپشن ملتان میں اللہ رکھا نامی   شخص نے درخواست دیتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ میرا اوپر اینٹی کرپشن نے ایک مقدمہ درج کیا۔جس پر نشتر انتظامیہ نے مجھے نوکری سے برخاست کردیا۔نوکری کی بحالی کیلئے جب نشتر میڈیکل یونیورسٹی کے سپرنٹینڈنٹ قمر محمود سے رابط کیا گیا۔تو انہوں نے ایک لاکھ 70 ہزار روپے کی رقم مختلف اوقات میں بطور خرچہ نوکری بحال کروانے کے غرض سے لئے۔قمر محمود نے رقم لینے کے باوجود تاحال نوکری کے بحالی کے حوالے سے کوئی تحرک نہیں کیا۔بلکہ مجھے رقم کی واپسی کے تقاضے پر جان سے مارنے کی دھمکیاں دینے میں لگا ہوا ہے۔سابق چوکیدار نشتر  اللہ رکھا نے رقم کہ ں رامدگی کیلئے اینٹی کرپشن سے رجوع کرلیا ہے۔مزہد برآں ذرائع کے مطابق قمر محمود کی پشت پناہی  نشتر میڈیکل یونیورسٹی کے متنازعہ شخصیت کے مالک ایک انتظامی افسر  کررہے ہیں۔جن کے بدزبانی کے قصے زد عام ہیں۔ جبکہ دوسری جانب قمر محمود سپرنٹینڈنٹ کا کہنا ہے کہ اللہ رکھا چوکیدار نے جان بوجھ پر مجھ پر رشوت لینے کا جھوٹ الزام لگایا یے۔حالانکہ اس نے مجھے قتل کی دھمکیاں اور غلیظ گالیاں دیں ہیں۔جس کے خلاف قانونی کاروائی کرنے کیلئے پولیس کو درخواست دی دے گئی ہے۔

درخواست

  

مزید :

ملتان صفحہ آخر -