"کہیں کی اینٹ، کہیں کا روڑا، کراچی کو کور کمیٹی کی نہیں، کور کمانڈر کی ضرورت ہے" عامر لیاقت حسین پھر میدان میں آگئے

"کہیں کی اینٹ، کہیں کا روڑا، کراچی کو کور کمیٹی کی نہیں، کور کمانڈر کی ضرورت ...

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن) شہر قائد کی بہتری کے لیے مبینہ طورپر ایم کیو ایم، پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف ایک پیج پر آ گئے ہیں اور  میڈیا اطلاعات کے مطابق اس سلسلے میں مقتدر حلقوں نے اہم کردار اداکیا تاہم تحریک انصاف کے رکن اسمبلی عامر لیاقت حسین ایک مرتبہ پھر میدان میں آگئے ۔

ٹوئٹر پر انہوں نے لکھا کہ " کراچی کو کور کمیٹی کی نہیں، کور کمانڈر کی ضرورت ہے"۔

انہوں نے مزید لکھا کہ "کہیں کی اینٹ کہیں کا روڑا ( احتیاط سے پڑھیے گا) بھان متی نے کنبہ جوڑا کنبے میں کچھ دیر پہلے ہوگئی لڑائی جنہیں بنایا تھا بھائی بن گئے قصائی پھڈا ہوگیا ملنے سے پہلے مرجھاگئی کلی کھلنے سے پہلے"۔

اپٌنی ایک اور ٹوئیٹ میں عامر لیاقت حسین نے لکھا کہ "مجھے ذاتی طور پربنائی گئی رابطہ کمیٹی سے توقع نہیں، میثاق مدینہ میں بھی بنو قینقاع اور بنو نضیر کو الگ رکھا گیا تھا کیونکہ وہ منافق تھے لیکن یہاں “بنو قینقاع اور بنو نضیرکو ساتھ بٹھادیاگیا جب گھر میں آگ لگی تو کچھ سامان بچا تھا جلنے سے وہ بھی ان کے ہاتھ لگاجو آگ بجھانے آئے تھے"۔

وہ اس سے پہلے لکھتے ہیں کہ "بنانے والوں نے خوب بنایا، تین الگ الگ پائپوں کو موڑ کر ایک پانی کی لائن ڈال دی ،پھٹ جائے گی ، لائن!!"

وہ مزید لکھتے ہیں کہ "بنانے والوں نے جب رابطہ کمیٹی” بنا ہی دی ہے تو کنوینر ،سینئر ڈپٹی کنوینر ،ڈپٹی کموینر، ترجمان اور کراچی تنظیمی کمیٹی کا بھی اعلان کر دیجیے"

  ڈاکٹرعامر لیاقت نے سوال اٹھاتے ہوئے لکھا کہ"اتحاد ہوگیا ؟ کیا بنا؟ “رابطہ کمیٹی” پھر رابطہ کمیٹی خٹم کرنے کی ضرورت کیا تھی؟"

مزید :

قومی -