پیپلز پارٹی کے ارکانِ اسمبلی کی’ موجیں ‘ ہو گئیں

پیپلز پارٹی کے ارکانِ اسمبلی کی’ موجیں ‘ ہو گئیں
پیپلز پارٹی کے ارکانِ اسمبلی کی’ موجیں ‘ ہو گئیں

  

 لاہور (نواز طاہرسے ) وزیراعظم نے پاکستان پیپلز پارٹی کے اراکین اسمبلی کے اصرار پر آئندہ الیکشن میں مطلوبہ تنائج حاصل کرنے کیلئے تین تین کروڑ روپے کے بجائے پانچ پانچ کروڑ روپے کے ترقیاتی فنڈز دینے کا اعلان کیا ہے ۔ یہ اعلان پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں کیا گیا جس میں وزیر اعظم کی جانب سے انہیں تین تین کروڑ روپے دیے جانے کا امکاں تھا لیکن پیپلز پارٹی کے ارکان نے تین کروڑ روپے ناکافی قراردیدیے اور ان میں اضافے کا مطالبہ کیا جو بحث و تمحیص کے بعد منظور کر لیا گیا ۔ ابھی یہ واضح نہیں ہو سکا کہ مخصوص نشستوں پر منتخب ہونے والے اراکین کو کتنے فنڈز ملیں گے ۔ پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں پیپلز پارٹی کے اراکین نے اپنی قیادت پر شکوﺅں کی بھی بوچھاڑ کر دی ۔ ذمہ دار ذرائع کے مطابق بعض اراکین نے یہاں تک کہہ دیا کہ انہیں نظر انداز کرنے اور پنجاب حکومت کی جاری ترقیاتی سکیموں اور اس کے اراکین کو نوازے جانے کی صورت میں آئندہ الیکشن میں پیپلز پارٹی سخت مشکلات کا سامنا کر سکتی ہے جس کا واحد حل فوری طور پر ترقیاتی منصوبے شروع کرنا ہے بصورت دیگر وہ حالات اور نتائج کے ذمہ دار نہیں ہو نگے بلکہ پارٹی قیادت اور خاص طور پر وزراءاس کے ذمہ دار ہو نگے اور ان میں خود وزیراعظم بھی شامل ہیں ۔ بعض اراکین نے وزیراعظم پر بھی تنقید کی ۔ پیپلز پارٹی کے ذرائع کے مطابق فنڈز فوری طور پر قابلِ استعمال ہونگے اور اب تمام اراکین کی توجہ ان فنڈز کے استعمال پر ہوگی تاکہ الیکشن کا اعلان ہونے تک وہ کچھ کر کے دکھا سکیں ۔ یہاں یہ امر قابلِ ذکر ہے کہ کچھ اراکین اسمبلی اپنے حلقے اور اہل ِخانہ کو مطلع کر کے لاہور آئے تھے کہ فنڈز ملتے ہی وہ اسلا م آباد روانہ ہو جائیں گے تاکہ دفتری امور میں وقت کا ضیاع روکا جاسکے اور ترقیاتی کام فوری طور پر شروع کیے جا سکیں ۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں پیپلز پاٹی کے بعض عہدیداروں پر بھی تنقید کی گئی اور انہیں پارٹی کی بہتری کے بجائے پاٹی کی تقسیم اورخلفشار کا ذمہ دار قراردیا ۔ 

مزید : قومی