انسداد دہشتگردی ایکٹ ترمیمی آرڈیننس سینیٹ میں پیش کرنے کیلئے پانچ دن کی مہلت باقی

انسداد دہشتگردی ایکٹ ترمیمی آرڈیننس سینیٹ میں پیش کرنے کیلئے پانچ دن کی مہلت ...

اسلام آباد (صباح نیوز)کالعدم تنظیموں پر پابندی سے متعلق انسداد دہشتگردی ایکٹ میں ترمیم کا صدارتی آرڈیننس 2018سینیٹ میں پیش کرنے کے لئے پانچ دنوں کی مہلت رہ گئی اورکاونٹ ڈاون شروع ہوگیا ہے حکومت اس بدھ تک پیش کرنے کی پابند ہے ،آرڈیننس بروقت پیش نہ کرنے پرحکومت کو ایوان بالا میں ناخوشگوارصورتحال کا سامنا کرنا پڑسکتا کیونکہ چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی سی ڈی اے ترمیمی آرڈیننس 2018 کومستردکرچکے ہیں اس آرڈیننس کو سینیٹ میں بروقت پیش نہیں کیا گیا تھا۔ حکومت سینیٹ کے قاعدہ145کے تحت ہر آرڈیننس کے اجرائکے بعد سینیٹ کے جاری اجلاس میں دس دنوں میں پیش کرنے کی پابند ہے۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ایکٹ 1948کی روشنی میں پاکستان کے نسداد دہشتگردی ایکٹ میں ترمیم کا یہ اہم آرڈیننس 2018 سات روز گزرنے کے باوجود سینیٹ میں قومی اسمبلی کے اجلاسوں میں حکومت کی طرف سے پیش نہیں کیا جاسکا ہے ، یہ بھی یاد رہے کہ اراکین پارلیمنیٹ کو قراردادکی منظوری کے ذریعے آرڈیننس کو مستردکرنے کا اختیار حاصل ہے تا حال انھیں اس آرڈیننس سے آگاہی ہی نہیں ہوسکی ۔ صدر ممنون حسین نے9 فروری 2018کو انسداد دہشتگردی ایکٹ 1997میں مذید ترمیم کے آرڈیننس کی منظوری دی تھی اسی روز یہ جاری کردیا گیا تھا پاکستان کے متعلقہ قانون میں ترمیم کی منظوری اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ایکٹ 1948کی روشنی میں دی گئی ہے اور انسداد دہشتگردی ایکٹ کی شق ڈبل ون بی ((Act XXVII 1997 کی ذیلی شق ون میں ڈبل اے (XIV 1948) میں ترمیم کی گئی ہے حکومت 21فروری تک انسداد دہشتگردی ایکٹ میں ترمیم کا صدارتی آرڈیننس 2018سینیٹ میں پیش کرنے کی پابندہے بروقت یہ آرڈیننس ایوان بالامیں پیش نہ کئے جانے پرحکومت کو سی ڈی اے ترمیمی آرڈیننس 2018 پیش کرنے کی اجازت نہ ملنے جیسی صورتحال کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے 10جنوری کو جاری ہونے والے سی ڈی اے ترمیمی آرڈیننس کو 22سے 26جنوری 2018کے سینیٹ سیشن میں پیش کرنا ضروری تھا۔24دنوں کی تاخیر سے ایوان بالا میں اسے پیش کرنے کی کوشش کی گئی ہیانسداد دہشتگردی آرڈیننس 2018 پیش کرنے کے معاملے پر کاونٹ ڈاون شروع ہوگیا ہےَ ۔

آرڈیننس

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...