عوام اور پی ٹی آئی ورکرز سپریم کورٹ اور پاک فوج کے سانہ بشانہ کھڑے ہوں گے : افتخار مشوانی

عوام اور پی ٹی آئی ورکرز سپریم کورٹ اور پاک فوج کے سانہ بشانہ کھڑے ہوں گے : ...

شیرگڑھ (نا مہ نگار) ڈیڈک کمیٹی ضلع مردان کے چیرمین وممبر صوبائی اسمبلی افتخار علی مشوانی نے کہاہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان پاک فوج سے مل کر70سالوں سے ملک پر مسلط چوروں اور ڈاکوؤں کے خلاف بے رحم احتساب کرکے پاکستان کے غریب عوام کومزید دلدل میں پھنسنے سے بچائیں ان چوروں لٹیروں حکمرانوں نے اپنے اختیارات کا ناجائز فائدہ اٹھاکر غریب عوام کے ٹیکسوں کا پیسہ لوٹ کر بیرون ملک بھجواکر اپنے کاروبار کوفروغ دیااور اپنے بچوں کی عیاشی کے لئے پر تعیش محل خریدے پاکستان کے 22کروڑ عوام اورتحریک انصاف کے ورکرز سپریم کورٹ اور پاک فوج کے شانہ بشانہ کھڑے ہوں گے پاکستان تحریک انصاف کے قائد عمران خان انصاف پر مبنی معاشرہ کے قیام کے لئے اٹھ کھڑے ہوئے ہیں اور ہم ان کے ہر حکم پر لبیک کہتے ہوئے ہر قسم قربانی دینے کے لئے تیار بیٹھے ہیں پی ٹی آئی کے کارکنان آج بروز ہفتہ صبح 10بجے مردان کالج چوک میں امن کے نام سے ریلی نکالے گی یہ ریلی کسی کے خلاف نہیں ہے اس میں ہم اپنی پوری قوت کا مظاہرہ کریں گے شیرگڑھ پریس کلب میں ترقیاتی کام کے لئے دس لاکھ روپے اعلان جبکہ حلف برداری کے لئے وزیراعلی ٰپرویز خٹک سے بات کروں گا ان خیالات کا اظہار انہوں نے شیرگڑھ پریس کلب میں میٹ دی پریس سے خطاب کے دوران کیا اس موقع پر پی ٹی آئی کے رہنماء محمد شعیب خان، ندیم محمد خان، تحصیل کونسلر حامد علی خان نے بھی خطاب کیا جبکہ پرنسپل افتخار علی ،یوسی ہاتھیان کے صدرفضل معبود ، کونسلر حنیف خان اور درجنوں کارکنان بھی موجود تھے انہوں نے نومنتخب کابینہ کو مبارک باد دی اورمزید کہا کہ صحافت اگر مثبت کی جائے تو عین عبادت ہے کیونکہ ا س میں مظلوم کا ساتھ دیا جاتاہے عاصمہ قتل کیس میں ضلع مردان کے صحافیوں نے مثبت انداز میں صحافت کی ذمہ داری اداکی جس کی وجہ سے ضلع مردان کی پولیس نے اصل مجرم تک رسائی حاصل کی انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کے قائد عمران خان نے پاکستان میں مظلوموں کو حق دینے کے لئے ظالم حکمرانوں کے گریبان پکڑے ہیں اور پاکستان کے 22کروڑ عوام ان کے پیچھے کھڑے ہیں اور ہم سپریم کورٹ آف پاکستان کے معزز جج صاحبان سے بھی پاکستان میں بے رحم احتساب کی توقع رکھتے ہیں تاکہ پاکستان کے 22کروڑ عوام چور اور لٹیر وں کو جان سکیں اور آئندہ کے لئے ان سے اپنے بچوں کی مستقبل محفوظ کرسکیں

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...