حکومتی یوٹرن ‘ الیکشن قریب آنے پر بجلی کمپنیوں کی نجکاری نہ کرنیکا وعدہ

حکومتی یوٹرن ‘ الیکشن قریب آنے پر بجلی کمپنیوں کی نجکاری نہ کرنیکا وعدہ

ملتان (سٹاف رپورٹر ) وفاقی حکومت نے ایک اور یوٹرن لے لیا ۔ نئے الیکشن قریب آنے پر بجلی کمپنیوں کی نجکاری نہ کرنے کا وعدہ کرلیا ۔ واپڈا ملازمین نے حکومتی وعدہ ناقابل اعتبار قرار دے دیا ۔تفصیل کے مطابق مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے 2013 سے ہی بجلی کمپنیوں کی نجکاری کے(بقیہ نمبر38صفحہ7پر )

لئے اقدامات شروع کر دئیے تھے ۔ کبھی تمام بجلی کمپنیوں کے چیف ایگزیکٹو آفیسرز کو ہٹانے اور نئے سی ای اوز لگانے کے اشتہار دئیے تو کبھی میٹر ریڈنگ کا شعبہ ٹھیکے پر دینے کا عمل شروع کیا اور ٹینڈر بھی جاری کر دئیے اور کبھی زیادہ لاسز والے فیڈرز کی نجکاری کرنے کے لئے اقدامات شروع کئے ۔ ہر بار واپڈا ہائیڈرو یونین ( سی بی اے ) شدید مزاحمت کرتی رہی اور ہڑتال ‘ مظاہروں‘ ریلیوں سمیت ہر ہتھکنڈہ استعمال کیا اور ہر بار حکومت نجکاری کا عمل موخر کرتی رہی ۔ واپڈا ملازمین کی ہڑتا ل سے صارفین کو شدید پریشانی اور کوفت کا سامنا کرنا پڑا ۔میپکو دفاتر میں کام ٹھپ ہو کر رہ گئے ۔ اب حکومت کے 5سال پورے ہو رہے ہیں تو نیا یوٹرن لیا گیا ہے جس میں واپڈا ہائیڈرو یونین ( سی بی اے ) کی قیادت کو نجکاری نہ کرنے کا وعدہ کرکے اپنی حمایت لینے کی کوشش کی گئی ہے ۔ اس بارے میں ہائیڈرو یونین کے مرکزی جنرل سیکرٹری خورشید احمد خان 2 روز قبل دورہ ملتان کے دوران اپنے خیالات کا اظہار کر چکے ہیں کہ ملازمین کارکردگی دکھائیں ‘ حکومت نجکاری نہیں کرے گی ۔ دوسری جانب واپڈا ملازمین کا کہنا ہے کہ حکومت کے وعدے پر اعتبار نہیں کیاجاسکتا کیونکہ حکومت نے کئی بار موقع کی مناسبت سے نجکاری نہ کرنے کاوعدہ کیا اور کچھ ہی عرصہ کے بعد پھر نجکاری کا ایشو کھڑا کر دیا ۔ اب الیکشن ہونے والے ہیں تو حکومت نے ایک بار پھر یوٹرن لیا ہے ۔ الیکشن 2018جیت کر اقتدار میں آنے کے بعد پھر سے نجکاری کا عمل شروع کر دیا جائے گا ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...