فیوچر کنسرن سکینڈل کی سماعت 29جنوری تک ملتوی

فیوچر کنسرن سکینڈل کی سماعت 29جنوری تک ملتوی

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے فیوچر کنسرن سکینڈل کی سماعت 29جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے مفرور ملزم عاصم ملک اور اسکی اہلیہ زوبیہ رباب ملک کی گرفتاری اور ان کی مزیدجائیدادوں کا سراغ لگانے سے متعلق پیشرفت کی رپورٹ طلب کر لی۔مسٹر جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی نے فیوچر کنسرن سکینڈل کی سماعت کی،ڈائریکٹر ایف آئی اے پنجاب ڈاکٹر عثمان نے عدالت میں رپورٹ جمع کراتے ہوئے کہا کہ بھیرہ پولیس اسٹیشن کے مطابق عاصم ملک، زوبیہ رباب ملک اور ڈاکٹر باسط ایڈووکیٹ کے وارنٹ گرفتاری جاری ہو چکے ہیں جبکہ برطانیہ سے عاصم ملک اور اسکی اہلیہ کو پاکستان لانے کی کارروائی بھی آخری مراحل میں ہے ، رپورٹ کے مطابق عاصم ملک کی تلاش کردہ جائیداد کی نیلامی سے 3 کروڑ 84 لاکھ اور 33ہزار رقم برآمد ہوئی جس کا چیک ٹرائل کورٹ میں جمع کرا دیا گیا ہے، عاصم ملک کے نام جوڈیشل کالونی ٹھوکر نیاز بیگ میں مزید ایک گھر کا سراغ لگایا گیا ہے جسے سربمہر کرنے کے لئے جوڈیشل مجسٹریٹ سے بیلف حاصل کرنا باقی ہے، رپورٹ کے مطابق عاصم ملک کے نام کے مزید 35بنک اکاؤنٹس کا سراغ لگایا گیا ہے ، رپورٹ کے مطابق زوبیہ رباب ملک کے نام دو گاڑیوں کا بھی سراغ لگایا گیا ہے، عدالت نے رپورٹ کو ریکارڈ کا حصہ بناتے ہوئے لاہور پولیس کو حکم دیا کہ دونوں گاڑیوں کو جلد از جلد تلاش کر کے قبضہ میں لیا جائے، عدالت نے مزید سماعت 29جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے ملزموں کی جلد گرفتاری اور مزیدجائیدادوں کاسراغ لگانے سے متعلق پیشرفت کی رپورٹ طلب کر لی۔

مزید : صفحہ آخر


loading...