خواہشات کی بنیاد پر عدالت میں کیس نہیں لڑے جا سکتے : مریم اور نگزیب

خواہشات کی بنیاد پر عدالت میں کیس نہیں لڑے جا سکتے : مریم اور نگزیب

  

 اسلام آباد(آئی این پی)مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ عمران خان گزشتہ 3 سال سے ویڈیو گیم کھیل رہے ہیں ‘ خواہشات کی بنیاد پر عدالت میں کیس نہیں لڑے جا سکتے ‘ وزیر اعظم نے پارلیمنٹ اور قوم سے خطاب میں کوئی جھوٹ نہیں بولا ‘ عمران خان عدالت کے باہر جو جی میں آئے کہتے ہیں ‘ موسم سرد ہو رہا ہے اور عمران خان کے ارمان بھی ٹھنڈے ہو رہے ہیں ‘ عمران خان بی بی سی کا نام لے کر اپنا چہرہ بچانا چاہتے ہیں ۔ پیر کو سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر مملکت اطلاعات مریم اورنگزیب نے کہا کہ ہمارے وکیل نے عمران خان سے متعلق ایک فیصلہ پڑھ کر سنایا۔ عمران نے کہا کہ الیکشن سے پہلے جو کچھ کہا اس کا جواب نہیں مانگا جا سکتا۔ عمران خان گزشتہ 3 سال سے ویڈیو گیم کھیل رہے ہیں۔ عمران خان ویڈیو گیم آئندہ بھی کھیلتے رہیں گے۔ انہوں نے کہاکہ عمران خان کے وکیل نے عدالت میں واضح کیا کہ مریم نواز بینیفشری نہیں ۔ وہ 2018 سے نہیں ابھی سے مریم نواز سے ڈر رہے ہیں۔ وزیر اعظم نے پارلیمنٹ اور قوم سے خطاب میں کوئی جھوٹ نہیں بولا۔ محمد نواز شریف جھوٹ بولنے کے عادی نہیں ہیں۔ وزیر مملکت اطلاعات نے کہا کہ دلائل میں بتایا گیا کہ وزیر اعظم کی تقریر میں کوئی تضاد نہیں ۔ عمران خان عدالت کے باہر جو جی میں آئے کہتے رہیںً خواہشات کی بنیاد پر کیس نہیں لڑے جا سکتے۔ عمران خان چاہتے ہیں کہ بغیر ثبوت وزیر اعظم کو نااہل قرار دیاجائے تو ایسا نہیں ہو سکتا۔ مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے کہا کہ موسم سرد ہو رہا ہے اور عمران خان کے ارمان بھی ٹھنڈے ہو رہے ہیں۔ عمران خان کیس ہارنے کی طرف جا رہے ہیں۔ عمران خان بی بی سی کا نام لے کر اپنا چہرہ بچانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران نے عدالت میں حسین نواز کا بیان پڑھا ہوتا تو بی بی سی کا حوالہ نہ دیتے۔ بی بی سی نے موقف اپنایا جو حسین نواز نے عدالت میں اپنایا۔

مسلم لیگ ن

اسلام آباد(آن لائن) مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ حسین نواز اور بی بی سی کا موقف ایک ہے ، عمران خان جواز بنا کر فیس سیونگ کررہے ہیں ، میڈیا پر بڑھکے مارتے ہیں لیکن عدالت میں ان کی بولتی بند ہوجاتی ہے ، سچے ہیں تو وزیراعظم کیخلاف ثبوت دیں ورنہ 2018ء تک ویڈیو گیم کھیلے ، فیصلہ ہمارے حق میں آئے گا ۔ ان خیالات کا اظہار مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں وزیر مملکت مریم اورنگزیب ، طلال چوہدری ، دانیال عزیز اور مائزہ حمید نے پیر کے روز پانامہ لیکس کے مقدمے کی سماعت کے بعد سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو میں کیا ۔ وزیر مملکت برائے اطلاعات مریم اورنگزیب نے کہا کہ عمران خان روز عدالت کے باہر میڈیا پر مقدمہ لڑنے کی کوشش کرتے ہیں لیکن واضح ہونا چاہیے کہ پانامہ لیکس میں وزیراعظم کا نام نہیں آیا لہذا اس پر بات نہیں ہورہی بلکہ وزیراعظم کے اسمبی میں بیان کو جواز بنا ر نااہلی کا واویلا مچایا جارہا ہے کہ نواز شریف نے اسمبلی میں پانامہ لیکس مذکورہ جائیداد کے حوالے سے غلط بیانی کی ہے اور اس پر عدالت سے نااہل قرار دیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان جھوٹ بولنے کے عادی ہیں اور جھوٹ بولنا میں ان کی قابلیت ہے ہمارے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ وزیراعظم نے ایوان میں اور عوام کو جھوٹ نہیں بولا اور اگر عمران خان سمجھتے ہیں کہ وزیراعظم نے جھوٹ بولا ہے تو عدالت عظمیٰ میں اس کا ثبوت دیں صرف کسی خواہش پر وزیراعظم کیخلاف مقدمہ نہیں لڑا جاسکتا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کے وکیل مریم نواز پر اپنے موقف سے ہٹ چکے ہیں انہوں نے عدالت میں تسلیم کیا کہ مریم نواز وزیراعظم کی بینفشنری نہیں ہے دراصل عمران خان وزیراعظم کا مقابلہ نہیں کرسکتے لیکن اب ان کو وزیراعظم کی صاحبزادی سے بھی خوف محسوس ہونے لگا ہے اور یہی وجہ ہے کہ وہ ان کو بدنام کرنے کی کوشش کررہے ہیں لیکن خان صاحب کو منہ کی کھانا پڑے گی ۔ مریم اورنگزیب نے کہا کہ ہمارے وکیل نے عدالت میں ایک فیصلہ سنایا جس کا تعلق عمران خان سے تھا جس میں تحریر تھا کہ میں الیکشن لڑنے سے پہلے کچھ کرنے کے بارے میں جوابدہ نہیں اور جو بھی میں نے الیکشن سے پہلے کیا ہے اس کا جواب مجھ سے کوئی بھی نہیں مانگ سکتا ۔ انہوں نے صحافی کے سوال پر طنزاً کہا کہ تحریک انصاف پچھلے ساڑھے تین سال تک ویڈیو گیم کھیل رہے تھے اور 2018ء تک ویڈیو گیم کھیلتے رہیں گے ۔ مسلم لیگ (ن) کے طلال چوہدری نے کہا کہ جیسے جیسے ٹھنڈ بڑھ رہی ہے عمران خان حواس باختہ ہورہے ہیں اب تک جھوٹ بول رہے تھے لیکن جب سے بی بی سی کی سٹوری آئی ہے تب سے اس کا حوالہ دینے لگے ہیں عوام جانتے ہیں کہ بی بی سی کا حوالہ دیکر وہ فیس سیونگ کررہے ہیں جن پر ایک ثبوت نہیں دیا بی بی سی کے حوالے دیکر ان کو شرم آنا چاہیے کیونکہ بی بی سی اور حسین نواز کی بات بالکل ایک ہے وہ پہلے حسین نواز کو پڑھیں اور دیکھیں پھر بات کریں انہوں نے کہا کہ عمران خان نے میڈیا پر بہت شور مچاتے ہیں لیکن عدالت میں ان کی جان نکل جاتی ہے کیونکہ ان کے وکلاء نے ردی کے کاغذ جمع کرائے ہیں جبکہ ہمارے وکلاء نے قانون کی کتابوں سے دلائل دیئے ہیں اور انشاء اللہ آئین و قانون کے مطابق فیصلہ ہمارے ہی حق میں آئے گا انہوں نے کہا کہ صحافی کے سوال کا جواب دیتے ہوئے بتایا کہ نواز شریف نے پچھلے ادوار میں ترقیاتی کام کیے تو لوگوں نے 2013ء میں ان کا انتخاب کیا اب جو ریکارڈ ترقیاتی کام ہورہے یں ان سے واضح ہے کہ 2018ء میں بھی کام ہی جیتے گا کیونکہ عمران خان کے وزیراعظم پر الزامات غلط ثابت ہوئے اور وہ قانون سمیت عوامی عدالت میں ہار چکے ہیں ۔ انہوں نے ایک اور سوال کے جواب میں کہا کہ وزیراعظم کے بیان کو جواز بنا کر نااہلی کا جو مطالبہ تحریک انصاف کررہی ہے ہم اس پر وزیراعظم کا دفاع کرینگے اور ہمارے وکیل عدالت میں اس پر تفصیلی اور جامع دلائل دینگے مسلم لیگ (ن) کے رہنما دانیال عزیز نے کہا ہے کہ وزیراعظم کی نااہلی سے متعلق تحریک انصاف کا طریقہ کار غلط اور ثبوت ردی ہیں ہمارے وکیل مخدوم علی خان نے عدالت کو بتایا کہ پانامہ لیکس میں وزیراعظم کا نام تک نہیں آیا لیکن پھر بھی تحریک انصاف نے ان کی نااہلی کے لئے عدالتی کارروائی پر اصرار کررکھا ہے حالانکہ اس ضمن میں ان کے پاس کوئی ثبوت ہے اور نہ ہی ان کا طریقہ کار مروجہ طریقے سے مطابقت رکھتا ہے ۔

مزید :

صفحہ آخر -