وزیراعظم ہاﺅس کی پریس ریلیز اور وکیل کی جرح میں تضاد، پارلیمینٹ کے استحقاق کے پیچھے چھپنے کی کوشش کی جا رہی ہے: شاہ محمود قریشی

وزیراعظم ہاﺅس کی پریس ریلیز اور وکیل کی جرح میں تضاد، پارلیمینٹ کے استحقاق ...
وزیراعظم ہاﺅس کی پریس ریلیز اور وکیل کی جرح میں تضاد، پارلیمینٹ کے استحقاق کے پیچھے چھپنے کی کوشش کی جا رہی ہے: شاہ محمود قریشی

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنماءشاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ وزیراعظم ہاﺅس کی پریس ریلیز اور ان کے وکیل کی جرح میں تضاد ہے۔ مخدوم علی خان پچھلے تین دنوں سے جو مقدمہ بنا رہے تھے عدالت نے وہ دو جملوں میں ہی دفن کر دیا ہے۔

”شادی کے بعد اپنے والد کے زیر کفالت نہیں ہوں “، مریم نواز نے سپریم کورٹ میں جواب جمع کر ادیا

تفصیلات کے مطابق میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیراعظم ہاﺅس کی پریس ریلیز اور ان کے وکیل کی جرح میں تضاد پر سوچنے کی بات یہ ہے کہ کیا یہ حکمت عملی تو نہیں؟ وزیراعظم ہاﺅس کی پریس ریلیز کہتی ہے کہ وہ استثنیٰ نہیں لے رہے جبکہ وزیراعظم کے وکیل کی تمام جرح ہی آئین کے آرٹیکل 66 پر رہے جس میں ممبر پارلیمینٹ کے استثنیٰ کی تشریح ہوتی ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ تین روز سے جرح کی جا رہی ہے کہ ایوان کی تقریر پر جرح نہیں ہو سکتی لیکن استحقاق بزنس پر تو ہو سکتی ہے، کرپشن پر نہیں ۔ آج کی سماعت میں فاضل جج نے ابتداءہی میں دو مقدمات کا ذکر کر کے مخدوم علی خان کا مقدمہ باہر پھینک دیا ہے اور 2 جملوں میں ہی اسے دفن کر دیا ہے۔

وزیراعظم نواز شریف نے عدالت سے آرٹیکل248 کے تحت استثنا مانگ لیا

لگتا ہے کہ حکومت کے پاس صفائی دینے اور اپنے دفاع کیلئے کوئی ثبوت اور کوئی دلائل نہیں ہیں اور صرف ایک ہی کوشش کی جا رہی ہے کہ کسی طرح پارلیمینٹ کے استحقاق کے پیچھے چھپا جائے، اس پردے کے پیچھے جھوٹ کو چھپایا جائے لیکن اب تو وہ پردہ بھی چاک ہو گیا ہے۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -