’اس کام پر 50 ارب ڈالر لگادو‘ سعودی بادشاہ نے سب سے بڑا اعلان کردیا، ایسا کام کرنے کا حکم دے دیا جس کو پاکستان میں کوئی ذرا بھی اہمیت نہیں دیتا

’اس کام پر 50 ارب ڈالر لگادو‘ سعودی بادشاہ نے سب سے بڑا اعلان کردیا، ایسا کام ...
’اس کام پر 50 ارب ڈالر لگادو‘ سعودی بادشاہ نے سب سے بڑا اعلان کردیا، ایسا کام کرنے کا حکم دے دیا جس کو پاکستان میں کوئی ذرا بھی اہمیت نہیں دیتا

  

ابوظہبی (مانیٹرنگ ڈیسک) ترقی یافتہ دنیا روایتی توانائی ذرائع کو چھوڑ کر ماحول دوست اور قابل تجدید توانائی زرائع کی جانب تیزی سے مائل ہو رہی ہے۔ سعودی عرب نے بھی اپنی تمام تر معاشی مشکلات کے باوجود قابل تجدید توانائی زرائع کی اہمیت کو سمجھتے ہوئے ایک خطیر رقم اس کام کے لئے وقف کر دی ہے۔

غیر ملکی خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق سعودی عرب نے قابل تجدید توانائی کے منصوبوں پر 50 ارب ڈالر (تقریباً 5000 ارب پاکستانی روپے) خرچ کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے اوراس شعبے میں سرمایہ کاری آغاز آنے والے چند ہفتوں کے دوران متوقع ہے۔

’اس مسلمان ملک کو 300 ارب روپے کے ہتھیار خرید کر دے دو‘ سعودی بادشاہ نے ایسا حکم جاری کردیا کہ جان کر ایران بے حد پریشان ہوجائے گا

سعودی وزیر توانائی خالد الفالح نے پیر کے روز ابوظہبی میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس پروگرام کے تحت لگائے جانے والے منصوبوں کے لئے پہلی بولی کا آغاز چند ہفتوں کے دوران ہوجائے گا۔ توقع کی جارہی ہے کہ یہ پراجیکٹ 10 گیگاواٹ توانائی پیدا کریں گے اور ان میں کی جانے والی سرمایہ کاری اگلے 7سال کے عرصے پر محیط ہوگی۔ قابل تجدید توانائی منصوبوں کے علاوہ سعودی عرب اپنے دو پہلے ایٹمی ری ایکٹروں کے منصوبوں کی فزیبلٹی اور ڈیزائن سٹڈیز کا بھی آغاز کرچکا ہے۔ ایٹمی منصوبوں سے 2.8 گیگاواٹ توانائی کا حصول متوقع ہے۔ سعودی وزیر کا کہنا تھا کہ ایٹمی توانائی کے شعبے میں قابل ذکر سرمایہ کاری کی جائے گی۔

واضح رہے کہ گزشتہ سال سے سعودی عرب میں تیل کے علاوہ دیگر ذرائع سے زرمبادلہ کے حصول اور توانائی کی پیداوار کا اصلاحی منصوبہ بھرپور طاقت سے جاری ہے۔ سعودی عرب کے قابل تجدید توانائی منصوبوں کو یمن، اردن اور مصر کے ساتھ منسلک کرنے کے لئے بھی کام جاری ہے۔ وزیر توانائی کا کہناتھا کہ نان فوسل ذرائع توانائی کے تبادلے کے لئے سعودی عرب کو افریقہ کے ساتھ بھی منسلک کیا جائے گا۔

مزید :

عرب دنیا -