”سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی انتہائی فحش ڈانس کی یہ ویڈیو دراصل شرمیلا فاروقی کی۔۔۔“ ایسا دعویٰ سامنے آ گیا کہ ہر پاکستانی کا منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

”سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی انتہائی فحش ڈانس کی یہ ویڈیو دراصل شرمیلا ...
”سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی انتہائی فحش ڈانس کی یہ ویڈیو دراصل شرمیلا فاروقی کی۔۔۔“ ایسا دعویٰ سامنے آ گیا کہ ہر پاکستانی کا منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن) معاشرے میں بڑھتی بے شرمی اور بے حیائی نے اخلاقی اقدار کی دھجیاں اڑا دی ہیں اور جس جانب بھی نظر دوڑاﺅ، عجب ہی منظر دیکھنے کو ملتا ہے۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان کے حکمرانوں سے یہ توقع کی جاتی ہے کہ معاشرے میں بڑھتی ہوئی بے حیائی کا بھی سدباب کریں گے مگر حکمران خود ہی اسے برا نہ سمجھیں تو پھر بے راہ روی کو کیسے روک سکیں گے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔”سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی انتہائی فحش ڈانس کی یہ ویڈیو دراصل شرمیلا فاروقی کی۔۔۔“ ایسا دعویٰ سامنے آ گیا کہ ہر پاکستانی کا منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی فحش ڈانس کی ویڈیو نے لوگوں کو بہت کچھ سوچنے پر مجبور کر دیا لیکن اس ویڈیو سے متعلق جو دعویٰ کیا جا رہا ہے، اس نے تو سب پاکستانیوں کو ہکا بکا کر دیا ہے اور ہر کوئی اپنی اپنی رائے دینے میں مصروف ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ یہ ویڈیو پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنماءشرمیلا فاروقی کی والدہ انیسا فاروقی کی سالگرہ کی تقریب میں بنائی گئی جس کا انعقاد مرینہ کلب کراچی میں کیا گیا۔

اس ویڈیو میں مختصر لباس پہنے لڑکی اپنے فن کا مظاہرہ کر رہی ہے جبکہ زرق برق لباس پہنے خواتین لطف اندوز ہونے میں مصروف ہیں۔ یہ خواتین لڑکی کو داد بھی دے رہی ہیں اور اپنی فرمائش کے گانوں پر ڈانس بھی دیکھتی ہیں جبکہ ویڈیو بنانے والی خاتون باقاعدہ چلا کر داد دیتی ہے۔

۔۔۔ویڈیو۔۔۔

 یہ بھی پڑھیں۔۔۔راولپنڈی ایکسپریس شعیب اختر کو تو پوری دنیا جانتی ہے مگر ان کی اہلیہ رباب کون ہیں اور کس گھرانے سے تعلق رکھتی ہیں؟ پاکستانیوں کی ”بھابھی“ کے بارے میں وہ معلومات تو بہت کم لوگ جانتے ہیں

اس ویڈیو کے منظرعام پر آنے کے بعد صارفین کی جانب سے مختلف آراءکا اظہار کیا جا رہا ہے تاہم صارفین کی اکثریت ایسی پارٹیز کے انعقاد پر تنقید کرتی نظر آئی۔

ارم جعفری نامی ایک صارف نے لکھا ”اللہ پاک ہم سب کو ہدایت عطاءکرے۔۔۔ آمین“

شوکت محمود کا کہنا تھا ”بہت خوب۔۔۔ کیا یہ پاکستان کی ثقافت ہے؟ کیا یہ لیڈر کہلانے کے لائق ہیں، اگر ہاں! تو بڑے شرم کی بات ہے“

مہیب علی زئی زیادہ دورانئے کی ویڈیو دیکھنے پر خوش نظر آیا اور لکھا ”شکریہ ایڈمن۔ پہلے یہ ویڈیو صرف چند سیکنڈ کی دیکھی تھی مگر آپ کی وجہ سے اب پوری دیکھی“

حامد نے لکھا ”سارا پاکستان حکمرانوں کی کرتوتوں کی وجہ سے تباہ و برباد ہے“

رکی نامی صارف کا کہنا تھا ”خواتین ایک نیم برہنہ لڑکی کو ایسا ڈانس کرتے کیوں دیکھ رہی ہیں۔ ان سب کو شرم آنی چاہئے“

عثمان عباسی نے لکھا ”ایسی عورتوں کا ٹھکانہ جہنم ہے، اللہ ان کو اور ہم سب کو نیک راستے پر چلائے، آمین“

محمد جمال خان نے عوام کو ہی تنقید کا نشانہ بنایا کہ ”ہماری بے وقوف قوم کو سلام ہے جو ہمیشہ اس طرح کے حکمرانوں کا انتخاب کرتی ہے“

میناگل نامی صارف نے لکھا ”دنیا ایک مسافر خانہ ہے لیکن بدبختوں نے اسے اپنا وطن بنا رکھا ہے“

ملیحہ سعید نے ایک ہی لفظ میں سب کچھ کہہ دیا اور لکھا ”توبہ“

احمد توقیر کو دوسروں کے برعکس ویڈیو اچھی لگی جس کا کہنا تھا ”چس آ گئی“

حسنین اعوان کو ڈانس پسند نہیں آیا جس نے لکھا ”اس سے اچھا ڈانس یقین کرو یورپ کے ڈسکو میں ہوتا ہے“

محمد زاہد کا کہنا تھا ”اسلامی معاشرے میں یہ سب دیکھ کر مجھے شرم آتی ہے“

ساغر راٹھور کا کہنا تھا ”غریب کرے تو مجرا، امیر کرے تو ثقافتی شو“

جلال نورانی کا کہنا تھا ”کیا بدقسمتی ہے، کیا بدنصیبی ہے، کیا جواب دیں گے“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -علاقائی -سندھ -کراچی -