کیو ایم سی کے ایم ڈی کی برطرفی کالعدم ،ملازمت پر بحال

کیو ایم سی کے ایم ڈی کی برطرفی کالعدم ،ملازمت پر بحال

پشاور(نیوز رپورٹر )پشاور ہائی کورٹ نے قاضی حسین احمد میڈیکل کمپلیکس نوشہرہ کے میڈیکل ڈائریکٹر کی بر طرفی کالعدم قرار دیتے ہوئے ملازمت پر بحال کردیا۔عدالت عالیہ کے جسٹس مس مسرت ہلالی اورجسٹس محمد ایوب پر مشتمل دو رکنی بنچ نے میڈیکل ڈائریکٹر طاہرقاضی کی رٹ کی سماعت کی دوران سماعت درخواست گزار کے وکیل قاضی جواد احسان اللہ نے عدالت کو بتایا کہ اس کے موکل کو مارچ2018میں تین سال کیلئے میڈیکل ڈائریکٹر تعینات کیاگیا جس کی منظوری بی او جی نے دینی تھی تاہم 11مئی 2018کو بورڈ ختم ہوگیا اورسیکرٹر ی ہیلتھ کو بحیثیت بورڈ آف گورنرز امور چلانے کا اختیار دیاگیا حالانکہ قانون کے تحت بی او جی سات ممبران پر مشتمل ہوتی ہے انہوں نے مزید دلائل دیے کہ 2جون کو سیکرٹری نے بحیثت بورڈ آف گورنر نے درخواست گزار کی ملازمت منسوخ کردی جس کے خلاف پشاور ہائی کورٹ میں رٹ دائر کی گئی اوردرخواست گزار کو ملازمت جاری رکھنے کی اجازت دی گئی تاہم 22دسمبر 2018کو نئے بورڈ آف گورنرز کی تقرری کے بعد سیکرٹری کا فیصلہ بحال رکھا گیا جو کہ غیر آئینی ہے کیونکہ ہائی کورٹ نے درخواست گزار کے حق میں حکم امتناعی جاری کیاتھا اس کے ساتھ ساتھ بورڈ آف گورنر نے سیکرٹری کے فیصلے کو بحال رکھا ہے جو کہ فرد واحد کا فیصلہ ہے جو کہ کسی صورت بحال نہیں رہ سکتا عدالتی احکامات کے باوجود درخواست گزار کو برطرف کرنا خود ایک غیر قانونی اقدام ہے عدالت نے دلائل مکمل ہونے پر بورڈ آف گورنرز کا فیصلہ کالعدم قرار دے دیا ۔درخواست گزار کو ملازمت پر بحال کردیا ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر