نام نہاد علمبرداروں نے پختون قوم کیلئے کچھ نہیں کیا ،شوکت یوسفزئی

نام نہاد علمبرداروں نے پختون قوم کیلئے کچھ نہیں کیا ،شوکت یوسفزئی

پشاور( سٹاف رپورٹر)ماضی میں پختونوں کے نام پر حکومت بنتی رہی لیکن بدقسمتی سے نہ تو پختونوں کی فلاح و بہبود کے لئے کچھ کیا گیا اور نہ پشتو زبان کے لئے۔ موجودہ حکومت ملک میں ایک نصاب کے لیے کام کر رہی ہے جس میں مادری زبانوں کو لازمی شامل کیا جائے گا ۔ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر اطلاعات وتعلقات عامہ شوکت علی یوسفزئی نے ایڈورڈز کالج پشاور کے زیر انتظام آل پاکستان پشتو مباحثے میں بطور مہمان خصوصی شرکت کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ پختون قوم نے بڑے بڑے لیڈرز پیدا کیے ہیں جنہوں نے پشتو زبان کے ساتھ ساتھ پشتونوں کی دینی اور دنیاوی تعلیم میں بہت خدمت کی ہے اور جن کا شعور لوگوں کی فلاح و بہبود اور ترقی کے لیے کام کرنا تھا لیکن بدقسمتی سے کچھ سیاسی جماعتیں پشتون لیڈروں کے کام کو ایک طرف رکھ کر ان کا نام صرف اپنے سیاسی مفادات کے لئے استعمال کرتی ہیں اور پشتونوں کے جذبات کے ساتھ کھیلتی ہیں۔صوبائی وزیر نے کہا کہ پشتونوں کے نام پر ووٹ لینے والوں نے حکومت میں آنے کے بعد لوگوں کی خدمت کی بجائے کرپشن کو عام کیا جس کی وجہ سے ادارے کمزور پڑ گئے ۔پاکستان تحریک انصاف کی حکومت اداروں کی مضبوطی کے لیے کام کر رہی ہے ملک میں سیاست سمیت تمام اداروں سے کرپشن اور کرپٹ لوگوں کا خاتمہ کریں گے۔شوکت یوسفزئی نے طلباء سے اپنے خطاب میں کہا کہ آج کے طلباء ہمارے روشن کل کے لیڈرز ہونگے آج پاکستان کو وزیراعظم عمران خان کی شکل میں مخلص اور ایماندار لیڈر شپ ملی ہے جو ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کے لئے دن رات کام کر رہا ہے طلباء محنت اور لگن کے ساتھ پڑھائی کریں کامیابی محنت و جدوجہد کرنے والوں کو ضرور ملتی ہے انہوں نے کہا کہ طلباء جذبات کی بجائے دلیل کو اپنائیں۔پشتون قوم کا ذکر کرتے ہوئے صوبائی وزیر نے کہا کہ جتنی مشکلات اور تکالیف پشتون قوم نے دیکھی ہیں ان سے کوئی انکار نہیں کرسکتا آج کے طلبا کل کو سیاست میں حصہ لے کر پختون قوم کی حقیقی خدمت کے لئے بھی کام کریں پہلے لوگوں کا خیال تھا کہ سیاست صرف امیر لوگ کرسکتے ہیں لیکن پاکستان تحریک انصاف نے سیاست کو پیسے سے آزاد کیا اور اب جوعوام کی خدمت کے لیے کام کرتے ہیں لوگ انھی کو ووٹ دیتے ہیں۔

پشاور( سٹاف رپورٹر)خیبر پختونخوا کے وزیر اطلاعات شوکت یوسفزئی نے صوبائی وزیر تعلیم ضیاء اللہ بنگش کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہاہے کہ آج فاٹا انضمام کے حوالے سے گورنر خیبر پختونخوا کی زیر صدارت ایک اعلی سطح اجلاس ہوا جس میں وزیر اعلی خیبر پختو نخوا محمود خان ، تمام صوبائی وزراء ، سیکرٹریز اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی انہو ں نے کہاکہ آج کے اجلاس میں نئے شامل ہونے والے اضلاع میں ترجیحی بنیادوں پر ترقیاتی اور وسرے کام کرنے کے لئے باقاعدہ ٹائم لائن مقرر کی گئی۔ انہوں نے کہاکہ فاٹا میں تین مہینوں کے اندر اندر پندرہ ہزار خالی اسامیاں پرکی جائینگی۔ جن میں چھ ہزار پولیس اہلکاروں اور افسران کو بھرتی کیا جائیگا۔ جبکہ تین سو مساجد سولرائز کئے جائیں گے۔ وزیر اطلاعات نے کہاکہ کرم ایجنسی میں 10 میگاواٹ ہائیڈل پروجیکٹ پر کام کا آغاز ہوچکا ہے انہو ں نے کہاکہ سابقہ فاٹا کی 25 تحصیلوں میں 31 مارچ تک میونسپل سروسز کو توسیع دی جائے گی۔ انہو ں نے کہاکہ اجلاس میں فیصلہ کیا کہ تمام نئے اضلاع میں فٹ پاتھ اور نکاس اب کا نظام متعارف کرائے جائیگا۔ انہو ں نے بلدیاتی نظام کے حوالے سے کہاکہ وہاں جلد از جلد بلدیاتی انتخابات کا انعقاد کیا جائے گا اس کے علاوہ صوبائی اسمبلی کے لئے جنرل الیکشن اسی سال جولائی سے پہلے پہلے مکمل کیا جائے گا۔ شوکت یوسفزئی نے کہاکہ صوبائی وزیر عاطف خان نے اعلان کیا کہ فاٹا میں مارچ کے مہینے میں سپورٹس گالا منعقد کیا جائے گا اور فاٹا کے جوان والی بال ، فٹ بال اور کرکٹ کے مقابلوں میں بھر پور حصہ لیں گے اس کے علاوہ جہا ں زمین دستیاب ہوگی وہاں ایک بڑا سٹیڈیم بھی تعمیرکردیا جائے گا۔ اس کے علاوہ وہاں پر کلچرل سرگرمیوں کو فروغ دیا جائے گا اور جلد از جلد ثقافتی سرگرمیاں شروع کی جائیں۔ وزیر اطلاعات نے بتایاکہ مذکورہ اضلاع میں سو سے زیادہ آثا ر قدیمہ کے مقامات پائے جاتے ہیں انہو ں نے کہاکہ نئے ضم شدہ اضلاع کے اکثر لوگ زیادہ غریب ہیں اور کچھ ابھی بھی IDPs کے طورپر مختلف شہروں میں زندگی گذارنے پر مجبور ہیں لہذا غربت کو ختم کرنے کے لئے اور نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے کے لئے وہاں جلد بلاسود مائیکروفنانس سکیم شروع کی جائے گی۔ انہو ں نے کہاکہ سالانہ ترقیاتی فنڈ پر خوش اسلوبی سے کام جاری ہیں اے ڈی پی سکیمیں متعین ہوچکی ہیں انہو ں نے کہاکہ وہاں پر گورنر ماڈل سکولز بڑا اچھا رزلٹ دے رہے ہیں ان سکولوں میں ہر قسم کی کمی کو پورا کیا جائے گا وزیر اطلاعات نے کہاکہ 31 جنوری سے تمام نئے ضم شدہ اضلاع میں صحت انصاف کارڈ کا اجراء کیا جائے گا۔انصاف کارڈ زبلاتفریق سب کو ملیں گے انہو ں نے کہاکہ فاٹا کی عوام نے ہمیشہ بڑی قربانیاں دی ہیں اب وقت آچکا ہے کہ ان کی تمام محرومیوں کا ازالہ کیا جائے اور وہاں کے نوجوانوں کو مثبت رخ پر ڈالا جائے انہو ں نے کہاکہ تمام DHQs ہسپتالوں میں ہر قسم کمی کو پورا کیا جائے گا۔ باقی صوبے کے طرز پر وہاں پر بھی تمام ایمرجنسی میڈیسن فری فراہم کئے جائیں گے انہو ں نے کہاکہ تمام محکموں کو ہدایات جاری کردی گئی ہیں کہ 31 مارچ تک تمام خالی آسامیوں کو منظر عام پر لا کر فوری طورپر پر کیا جائے۔ وزیر ا؂طلاعات نے صحافیو ں کو بتایا کہ 25 ارب روپے فاٹا سیکرٹریٹ فراہم کرے گا اور محکمہ تعلیم نے بھی الگ سے 18 ارب روپے مختص کئے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ فاٹا کی ترقی کے لئے محکمہ پی اینڈ ڈی میں الگ برانچ کھول دیا گیا ہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول