افغان امن عمل میں بڑی پیشرفت،طالبان نے بڑی پیشکش کردی

افغان امن عمل میں بڑی پیشرفت،طالبان نے بڑی پیشکش کردی
افغان امن عمل میں بڑی پیشرفت،طالبان نے بڑی پیشکش کردی

  



کابل(ڈیلی پاکستان آن لائن)افغانستان میں ایک بار پھر جنگ بندی کی کوشش۔امن عمل میں بڑی پیشرفت ہوئی ہے۔افغان طالبان نے جنگ بندی کی پیشکش کردی۔ امریکی خبررساں ادارے کے مطابق طالبان نے افغانستان میں عارضی جنگ بندی کے حوالے سے اپنی رضامندی اور شرائط پر مبنی دستاویزات امریکی حکام کو دے دی ہیں۔

امریکی نیوزایجنسی نے مذاکراتی عمل سے باخبر ایک طالبان رہنما کے حوالے سے بتایا ہے کہ طالبان

عارضی جنگ بندی سے متعلق دستاویزات امریکا کے افغانستان کیلئے خصوصی نمائندے زلمے خلیل زاد کے حوالے کرچکے ہیں۔انہوں نے کہاجنگ بندی کی یہ پیشکش 7 دن یا 10 دن کی ہوگی۔

امریکی میڈیا کے مطابق طالبان کی اس پیشکش کو افغان امن معاہدے کی راہ ہموار ہونے کے طور پر دیکھا جارہا ہے، جس کے ذریعے امریکا افغانستان کی 18 سال سے زائد طویل جنگ ختم کرکے اپنے 13 ہزار سے زائد فوجیوں کو واپس امریکا لے جاسکتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق طالبان کی جانب سے جنگ بندی کی اپنی پیشکش پر مشتمل تحریری دستاویزات گزشتہ دنوں زلمے خلیل زاد کے دورہ قطر کے دوران دی گئی تھیں۔

اس سے قبل پاکستانی وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی بھی افغانستان میں امن کی اہمیت کے حوالے سے اپنا موقف کااعادہ کرچکے ہیں،گزشتہ روز انہوں نے کہا ہے کہ پاکستان ،افغانستان اور اس خطے کو امن و استحکام کی ضرورت ہے۔اس سلسلے میں ایک اچھی پیش رفت سامنے آئی ہے، متشدد رویوں میں کمی کا جو مطالبہ تھا طالبان نے اس پر آمادگی کا اظہار کر دیا ہے، طالبان کی آمادگی سے امن معاہدے کی طرف پیش رفت ہوئی ہے، ہماری خواہش ہے کہ خطے میں امن قائم ہو، اس کا فائدہ افغانستان کو بھی ہو اور پاکستان کی عوام کو بھی ہو۔

واضح رہے کہ امریکااور طالبان کئی مذاکراتی سیشنز کے بعد معاہدے کے قریب تھے تاہم ستمبر 2019میں کابل حملے کے بعد امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مذاکرات منسوخ کردیئے تھے۔

مزید : اہم خبریں /بین الاقوامی