سندھ حکومت نے آئی جی پولیس کے کرائم میں کمی کے دعوے کو مسترد کر دیا

سندھ حکومت نے آئی جی پولیس کے کرائم میں کمی کے دعوے کو مسترد کر دیا
سندھ حکومت نے آئی جی پولیس کے کرائم میں کمی کے دعوے کو مسترد کر دیا

  



کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)سندھ حکومت نےآئی جی پولیس کےکرائم میں کمی کےدعوی کومستردکرتےہوئےکہاکہ موجودہ آئی جی کےدور میں کرائم میں اضافہ ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ حکومت نے آئی جی پولیس کے کرائم میں کمی کے دعوی کو مسترد کرتے ہوئے کہاکہ موجودہ آئی جی سندھ  کے دورمیں کرائم میں 7سے10 فیصد اضافہ ہوا۔سندھ حکومت کے مطابق گاڑیوں کی چھیناجھپٹی،2018 میں174 اور 2019 میں 247 تک بڑھی،کار چوری کی وارداتیں 2018 میں 1198 اور2019 میں 1452 تک بڑھ گئیں۔سندھ حکومت کا کہنا ہے کہ 2018 میں 25 ہزارموٹرسائیکلیں، 2019 میں 28609 موٹرسائیکلیں چوری ہوئیں، 2018 میں موبائل چھیننے کی14 ہزار 899 اور 2019میں19 ہزار862 وارداتیں ہوئیں، قتل کی وارداتیں 2018 میں 326 جبکہ 2019 میں 363 تک پہنچ گئیں ہیں۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز سندھ کابینہ نے آئی جی سندھ پولیس کلیم امام کو عہدے سے ہٹاکر ان کی خدمات وفاق کے سپرد کرنے کی منظوری دی تھی جس پر پی ٹی آئی سندھ کے رہنمافردوس شمیم نقوی نےعدالت جانےکا اعلان کیا ہے جبکہ سندھ حکومت کے ترجمان مرتضیٰ وہاب نے کہاہےکہ ہمارے پاس آئی جی کورخصت کرنے کی کئی وجوہات تھیں اور حکومت نےاپناآئینی حق استعمال کرتے ہوئے آئی جی کو ہٹانے کا فیصلہ کیا ہے۔

مزید : علاقائی /سندھ /کراچی