ایران مذاکرات کے لیے تیار ہے مگر امریکا سے نہیں،عراق میں فوجی اڈے پر حملے سے امریکی ہیبت کا بت پاش پاش ہوگیا:آیت اللہ خامنہ ای

ایران مذاکرات کے لیے تیار ہے مگر امریکا سے نہیں،عراق میں فوجی اڈے پر حملے سے ...
ایران مذاکرات کے لیے تیار ہے مگر امریکا سے نہیں،عراق میں فوجی اڈے پر حملے سے امریکی ہیبت کا بت پاش پاش ہوگیا:آیت اللہ خامنہ ای

  



تہران (ڈیلی پاکستان آن لائن) ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای نے کہا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ ایک بہروپیا ہے جو صرف ایرانی عوام کی حمایت کا دکھاوا کرتا ہے،ایران مذاکرات کے لیے تیار ہے مگر امریکا سے نہیں،عراق میں فوجی اڈے پر حملے سے امریکی ہیبت کا بت پاش پاش ہوگیا۔

تہران کی مصلیٰ مسجد میں دئیے گئے خطبے میں آیت اللہ خامنہ ای نے کہاکہ قاسم سلیمانی کا قتل بزدلانہ اقدام تھا جو میدان جنگ میں آمنے سامنے سے نہیں بلکہ چھپ کر اور دہشت گردانہ طریقے سے انجام دیا گیا، یہ قتل امریکا کی ذلت و رسوائی کا سبب بنا ،عراق میں امریکی فوجی اڈے پر حملہ کر کے سپاہ پاسداران انقلاب نے امریکا کے منہ پر جو زور دار طمانچہ رسید کیا ہے،ایران کی اس کارروائی سے امریکی ہیبت کا بت پاش پاش ہوگیا اور دنیا میں اس کی ساکھ اور دبدبے کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا ہے ۔اُنہوں نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ قوم کی پیٹھ پر زہریلا خنجر گھونپے گا،ایران کا عراق میں امریکی فوجی اڈوں پر  کامیاب عسکری حملہ امریکہ کے سپر پاور ہونے کے گھمنڈ کو ٹھیس پہنچانے میں کامیاب رہا،امریکہ کو شام، عراق، لبنان اور افغانستان میں جاری مزاحمت سے مسلسل نقصان پہنچ رہا ہے مگر ایرانی حملے سب سے کارآمد تھے۔

آیت اللہ خامنہ ای نے طیارے کو گرائے جانے کے واقعے کو تلخ حادثہ' قرار دیا اور کہا کہ اس کی وجہ سے ایران کو اتنا ہی افسوس ہوا ہے جتنا اس کے دشمنوں کو خوشی ہوئی ہے، ایران کے دشمن اس حادثے کو استعمال کرتے ہوئے ایران، پاسداران انقلان اور مسلح افواج پر سوالات کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مغربی ممالک اتنے کمزور ہیں کہ وہ ایران کو گھٹنوں پر کبھی نہیں لاسکتے، ایران مذاکرات کے لیے تیار ہے مگر امریکا سے نہیں۔ایرانی سپریم لیڈر کا کہنا تھا کہ برطانیہ کی خبیث حکومت ، جرمنی اور فرانس کی حکومت نے ایران کو دھمکی دی ہے کہ ایٹمی معاملے کو دوبارہ سلامتی کونسل میں لے جائیں گی لیکن ہم یورپی حکومتوں کو یہ بتا دینا چاہتے ہیں کہ جب تمہارا سرغنہ امریکا ایرانی عوام کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور نہیں کرسکا تو تمہاری کیا اوقات ہے؟۔

مزید : بین الاقوامی